انتظامیہ مختلف ریاستوں میں زیر تعلیم طلباء کی واپسی کیلئے فکر مند

سری نگر//گورنر کے مشیر خورشید احمد گنائی نے کل کہا کہ حکومت ریاست جموں وکشمیر کے نجی سکولوں میں ووکیشنل کورس متعارف کرنے پر غور کر رہی ہے۔سرینگر میںپرائیویٹ سکول ایسو سی ایشن کے ایک وفد کے ساتھ بات چیت کرتے ہوئے خورشید گنائی نے کہا کہ سکولوںمیں ووکیشنل کورس کو متعارف کرنے سے طلباء خود انحصار بنانے اور اپنے بل بوتے پر زندگی گزارنے کے قابل بنائے جاسکتے ہیں۔اُنہوںنے کہا کہ اِن اقدامات کی بدولت نوجوانوں میں خود روزگار کمانے کا عمل شروع ہوگا۔اُنہوں نے کہاکہ زیادہ سے زیادہ طلباء کو تعلیم فراہم کرنے کی غرض سے حکومت نجی کالجوں کے قیام کی حوصلہ افزائی کرے گی۔اُنہوں نے کہا کہ کشمیر سے باہر تعلیم حاصل کرنے والے طلباء کے تعلیمی سال اوروقت ضائع ہونے پر غور کیا جارہا ہے ۔اُنہوںنے کہا کہ نجی سکولوں کی طرف سے اس مسئلے کے حل کے لئے کچھ تجاویز سامنے آئی ہیں جن کے تحت ان سکولوں کو جنہیں باقاعدہ بنیادی ڈھانچہ دستیاب ہو کو کالج قائم کرنے کی اجازت دینی ہوگی ۔صلاح کار نے مزید کہا کہ گورنر انتظامیہ ملک بھر کی مختلف ریاستوں میں تعلیم حاصل کرنے والے سینکڑوں طلباء کی واپسی کے بارے میں فکر مند ہے اور اِن طلباء کو کسی بھی قسم کی تکلیف نہ پہنچنے کے لئے ہر ممکن اقدامات کئے جارہے ہیں۔انہوں نے کہا کہ تمام صلاح کار ، لیزان افسران ، پرنسپل ریذیڈنٹ کمشنر نئی دلی، صوبائی کمشنر کشمیر ، آئی جی پی کشمیر ، پورے ملک کے مختلف حکام کے ساتھ رابطے میں ہیں تاکہ کشمیر سے تعلق رکھنے والے طلباء کو کوئی بھی گزند نہ پہنچے ۔دریں اثنا کئی وفود مشیر موصوف سے ملاقی ہوئے جن میں رکھہ شلوت نوگام ،رتنی پورہ پلوامہ ،عوامی انتظامیہ کے سکالر، فوڈٹیکنالوجی ، انتظامیہ کمیٹی گاندربل ، چک پورہ پلوامہ ، سوپور ، بارہمولہ ، بی کے پورہ بڈگام سے تعلق رکھنے والے کئی وفود شامل تھے ۔ چند افراد بھی خورشید گنائی سے ملاقی ہوئے اور اپنے شکایات کا ازالہ کرانے کی درخواست کی۔