انتخابی عمل بے سود،مسئلہ کشمیر کا حل ضروری: شبیر شاہ

سرینگر// ڈیمو کریٹک فریڈم پارٹی کے محبوس سربراہ شبیر شاہ نے الیکشن عمل کو مسترد کرتے ہوئے کہا ہے کہ متنازع خطے میں بھارت کا الیکشن یا سیلیکشن نئی دلی کا دہائیوں پرانا کھیل ہے جس سے آج تک کچھ حاصل نہیں ہوا ہے۔ انہوں نے تنازع کے حل کے عمل پر زور دیتے ہوئے کہا کہ یہاں رہنے والے لوگوں کی سیاسی خواہشات کا احترام دہائیوں پرانے تنازع کو حل کرنے کیلئے از حد ضروری ہے۔تہار جیل دلی سے شبیر شاہ نے اپنے ایک پیغام میں کہا کہ برصغیر کے اندر تب تک امن و استحکام کا خواب پورا نہیں ہوگا جب تک کشمیر تنازع کو ایڈریس نہ کیا جائے۔انہوں نے کہا کہ بھارت اور پاکستان، دونوں نیوکلیائی طاقت کے حامل ممالک ہیں اس لئے مسلسل کشیدگی کے متحمل نہیں ہوسکتے ہیں۔ ان کیلئے بہتری اسی میں ہے کہ دونوں ہمسایہ ممالک ایک دوسرے کے قریب آئیں اور سر جوڑ کر بیٹھیں تاکہ کشمیر تنازع حل کرنے کی راہ ہموار ہوسکے جو نئی دلی اور اسلام آباد کے مابین 1947سے کشیدگی کی واحد وجہ بنی ہوئی ہے۔ بھارت جموں کشمیر کے مظلوم عوام کیخلاف ہر قسم کے سامراجی حربے آزمانے کی راہ پر گامزن ہے۔ نئی دلی نے متنازع خطے کے لوگوں کو زیر کرنے کیلئے کچھ برس سے محاصروں، تلاشیوں، ہلاکتوں، چھاپوں اور گرفتاریوں کا نہ ختم ہونے والا سلسلہ شروع کر رکھا ہے اور وہ چاہتا ہے کہ کشمیری عوام کے سیاسی اعتقاد کو توڑکر اُنہیں شکست سے دوچار کیا جاسکے۔ تاہم جموں کشمیر کے عوام نے بار بار اور ہر ظلم و ستم کے آگے استقامت کا مظاہرہ کرتے ہوئے دنیا پر واضح کیا ہے کہ اُن کے جمہوری حقوق ایک ایسے ملک کے ہاتھوں پامال ہورہے ہیں جس کو سب سے بڑی جمہوریت ہونے کا دعویٰ ہے۔ شبیر شاہ نے اپنے پیغام میں کہا کہ جنوب ایشیائی خطے کا استحکام اور خاص کر بھارت اور پاکستان کے مابین امن ،کشمیر تنازع کی وجہ سے لگاتارخطرے میں پڑا ہوا ہے۔بھارت متنازع خطے کے اندر قتل و غارتگری کے موجودہ سلسلے کو زیادہ دیر تک آگے نہیں بڑھاسکتا ہے اور اُس کو بات چیت کی میز پر آنا ہی پڑے گا کیونکہ مذاکرات ہی مسائل کے حل کیلئے آگے پڑھنے کی واحد صورت ہے۔