‘امن بس’ کے ذریعے پونچھ پہنچے پاکستانی نوجوان کو دادی سے ملنے کی اجازت نہیں

سرینگر/پاکستانی زیر انتظام کشمیر کا ایک نوجوان ، جو کچھ روز قبل 'امن بس' کے ذریعے پونچھ پہنچا ہے، کو اپنی دادی سے ملنے کی اجازت نہیں دی جارہی ہے جو حد متارکہ کے نزدیک بچھی خار دار تار کی دیوار سے آگے رہتی ہے۔

اکیس سالہ کامران آفتاب ساکنہ پاکستانی زیر انتظام کشمیر، جنوری28کو چکاندا باغ کراسنگ پوئینٹ پر پہنچا۔

تاہم فوج اُسے دادی سمیت دیگر رشتہ داروں سے ملنے کی اجازت نہیں دے رہی ہے جو مینڈھر علاقے میں واقع بریانی گلی پرحد متارکہ کے نزدیک بچھی تار کے اُس پار رہتے ہیں۔

خبر رساں ایجنسی جی این ایس کے مطابق ، آفتاب کے پاس سفر ی دستاویزات بھی ہیں جو ضلع کمشنر پونچھ کے ذریعے جاری کئے گئے ہیں۔

ضلع کمشنر کی جانب سے بھی آفتاب کو حد متارکہ کے نزدیک بچھی تار کے اُس پار رہنے والے رشتہ داروں سے ملنے کی اجازت دیدی گئی ہے۔

جموں میں دفاعی ترجمان ،کرنل آنند نے جی این ایس کو بتایا''میں معاملے کو دیکھ لوں گا''۔