امریکہ کوغزہ کے باشندوںپراسرائیلی حملے کاخدشہ پینٹاگون کے ترجمان کاپریس کانفرنس میں بیان

یواین آئی

واشنگٹن// امریکی محکمہ دفاع (پینٹاگون) نے امداد کے منتظر غزہ کے باشندوں پر اسرائیل کے حملے کے بارے میں ملنے والی اطلاعات پر اپنے خدشات کا اظہار کیا ہے۔ پینٹاگون کے ترجمان بریگیڈیئر جنرل پیٹرک رائڈر نے روزانہ کی پریس کانفرنس میں اپنے بیان میں کہا کہ وہ شہریوں کی جانوں کا تحفظ کی ضرورت پر ہمیشہ زور دیتے رہیں گے۔رائڈر نے کہا کہ مدد کے منتظر غزہ کے باشندوں پر حملے کے بارے میں اطلاعات پر اپنے خدشات کا اظہار کیا ہے۔انہوں نے کہا کہ یقیناً ہمیں ان بے گناہوں کی ہلاکتوں کے بارے میں سن کر بہت افسوس ہوا، اور جیسا کہ میں نے کہا، ہم تسلیم کرتے ہیں کہ اسرائیل کی فوجی کارروائیوں میں بہت زیادہ شہری مارے گئے ہیں۔ رائڈر نے کہا کہ یہ “افسوسناک” واقعہ ضروری انسانی امداد فراہم کرنے کی اہمیت کو واضح کرتا ہے۔انہوں نے کہا کہ یہ امداد غزہ کے لوگوں کو محفوظ اور پائیدار طریقے سے پہنچائی جاسکتی ہے۔غزہ میں فلسطینی وزارت صحت نے اعلان کیا ہے کہ غزہ شہر کی راشد اسٹریٹ پر نابلوسی اسکوائر پر انسانی امداد کے منتظر افراد پر اسرائیل کے حملے میں 112 افراد ہلاک اور 760 زخمی گئے ہیں۔

امریکا نے سلامتی کونسل کو الزام اسرائیل پر عائد کرنے سے روکدیا
عظمیٰ نیوزڈیسک
رملہ//گزشتہ روز غزہ میں امداد کے منتظر فلسطینی شہریوں پر اسرائیلی حملے کے بعد امریکا نے سلامتی کونسل کو حملے کا الزام اسرائیل پر عائد کرنے سے روک دیا۔دوسری جانب اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل انتونیو گوتریس نے غزہ میں امداد کے منتظر فلسطینیوں پر اسرائیلی حملے کے نتیجے میں 100 سے زائد اموات کی تحقیقات کا مطالبہ کردیا ہے۔علاوہ ازیں یورپی خارجہ پالیسی کے سربراہ جوزف بوریل نے نہتے فلسطینیوں کا قتل عام ناقابل قبول قرار دیا ہے۔غیرملکی میڈیا کے مطابق امریکی صدر جوبائیڈن نے ریپبلکنز پر اسرائیل کیلئے فوجی امدادی بل پاس کرنے پر زور دیا ہے۔