اقوام متحدہ کا فوجی مبصر جنگ بندی یقینی بنائیں:طاری

سرینگر//بھارت اور پاکستان کے مابین لائین آف کنٹرول اور بین الاقوامی سرحد پر آئے روز کی کشیدگی اور اس کے نتیجے میں ہونے والے انسانی جانوں کے اتلاف پر شدید غم و غصے کا اظہار کرتے ہوئے ڈیمو کریٹک فریڈم پارٹی نے کہا ہے کہ جب تک تنازعہ کشمیر یہاں کے لوگوں کی مرضی کے مطابق حل نہیں کیا جائے گا تب تک نئی دلی اور اسلام آباد کے درمیان جنگی حالت میں کوئی سدھار آنے کا امکان نہیں ہے۔فریڈم پارٹی کے سیکریٹری جنرل مولانا محمد عبد اللہ طاری نے اپنے ایک بیان میں لائن آف کنٹرول اور بین الاقوامی سرحد پر جاری گولہ باری اور اس کے نتیجے میں دونوں طرف سے ہورہے انسانی زندگیوں کے اتلاف پر اپنی گہری تشویش اور فکرمندی کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ جب تک تنازعہ کشمیر کو یہاں کے عوام کی خواہشات اور امنگوں کے مطابق حل نہیں کیا جاتا، بھارت اور پاکستان کے مابین جنگ کا خطرہ بدستور قائم رہے گا۔انہوں نے کہا کہ خونی لکیر کے دونوں طرف رہ رہے لوگوں نے اس کو کبھی قبول نہیں کیا ہے اس لئے جب تک اُن کی سیاسی خواہشات اور امنگوں کو خاطر میں نہیں لایا جائے گا تب تک اس طرح کی صورتحال جاری رہنے کا ہی امکان ہے۔7دہائیاں گذر گئیں لیکن تنازعہ کشمیر لٹکا ہوا ہے اور اس کے نتیجے میں قیمتی انسانی جانیں لگاتار تلف ہورہی ہیں۔بھارت کو سمجھ لینا چاہئے کہ اگر وہ اپنے ہمسایوں کے ساتھ بہتر تعلقات کا خواہشمند ہے اور اگر وہ اپنے فوجیوں کی زندگیوں کیلئے فکر مند ہے تو اُسے تنازعہ کشمیر سے متعلق تاریخی حقائق کو تسلیم کرنا ہی پڑے گا۔