افغانستان کے 65 فیصد علاقوں پر طالبان کا کنٹرول: یوروپی یونین

کابل// یورپی یونین نے کہا ہے کہ غیر ملکی افواج کے انخلا کے بعد طالبان نے افغان کی سرزمین پر اپنی گرفت مضبوط کرتے ہوئے ملک کے 65 فیصد حصے پر کنٹرول حاصل کر لیا ہے۔
یورپی یونین کے ایک سینئر عہدیدار نے منگل کو بتایا کہ طالبان اب 65 فیصد افغان سرزمین پر کنٹرول کررہے ہیں، 11 صوبائی دارالحکومتوں پر قبضہ کرنے کی دھمکی دے رہی ہیں اور کابل کو شمال میں موجو قومی افواج کی روایتی حمایت سے محروم کرنے کی کوشش کر رہے ہیں۔
اسی کے ساتھ یورپی یونین کے ایک عہدیدار نے بتایا کہ حالیہ مہینوں میں تقریباً 4 لاکھ افغانی بے گھر ہوئے اور گزشتہ 10 دنوں کے دوران ایران فرار ہونے والوں کی تعداد میں اضافہ ہوا ہے۔
غیر ملکی خبر رساں ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق جہاں طالبان کی بڑھتی ہوئی پیش قدمی سے پریشان حال صدر اشرف غنی نے علاقائی طاقتوں سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ ان کی حکومت کا ساتھ دیں وہیں اقوام متحدہ کے ایک عہدیدار نے کہا کہ 20 سالوں میں انسانی حقوق کے سلسلے میں جو پیش رفت ہوئی تھی وہ خطرے میں پڑ گئی ہے۔
دارالحکومت کابل میں اشرف غنی کے ساتھیوں نے کہا ہے کہ وہ علاقائی ملیشیاو¿ں سے مدد مانگ رہے ہیں جن کی مدد سے وہ کئی برسوں سے اپنی حکومت قائم رکھنے کی جدوجہد کررہے ہیں جبکہ عوام سے بھی اپیل کی ہے کہ وہ افغانستان کے جمہوری تشخص کا دفاع کریں۔
مقامی رہائشیوں نے بتایا کہ شمالی قصبے مزار شریف اور کابل کے درمیان مرکزی سڑک پر صوبہ سمنگان کے دارالحکومت ایبک کے قصبے میں طالبان اپنا کنٹرول مضبوط تر کر رہے ہیں اور سرکاری عمارتوں میں منتقل ہورہے ہیں اور اس دوران زیادہ تر حکومتی سیکیورٹی فورسز پیچھے ہٹتی دکھائی دے رہی ہیں۔
طالبان اور سرکاری حکام نے تصدیق کی ہے کہ طالبان نے حالیہ دنوں میں شمال، مغرب اور جنوب میں چھ صوبائی دارالحکومتوں پر قبضہ کر لیا ہے۔
نیشنل ڈیزاسٹر اتھارٹی کے سربراہ غلام بہاو¿الدین جیلانی نے میڈیا کو بتایا کہ 34 میں سے 25 صوبوں میں لڑائی جاری ہے اور 60ہزار خاندان پچھلے دو ماہ کے دوران بے گھر ہو چکے ہیں اور ان میں سے زیادہ تر کابل میں پناہ کے متلاشی ہیں۔
ایران کی سرحد کے قریب مغربی افغانستان کے صوبے فراہ کے دارالحکومت اور سب سے بڑے شہر فراہ کے ایک رہائشی نے بتایا کہ طالبان نے گورنر کی رہائش گاہ پر قبضہ کر لیا ہے اور وہاں طالبان اور حکومتی فورسز کے درمیان شدید لڑائی جاری ہے۔شہریوں نے بتایا کہ طالبان نے شہر کی تمام اہم سرکاری عمارتوں پر قبضہ کر لیا ہے۔