! اسلام میں عبادتی زندگی کی اہمیت اسلام رہبانیت کو کیوں رَد کرتا ہے؟

ڈاکٹر فیاض فاضلى

اسلام کی رہبانیت کے موضوع میں بات کرنے سے پہلے یہ اہم ہے کہ رہبانیت کا مطلب کیا ہوتا ہے۔ رہبانیت ایک دینی مفہوم ہے جو مخصوص عبادتی فعالیتوں اور معاشرتی زندگی کے طریقے کی بنا پر مبنی ہوتا ہے۔رہبانیت سے مراد، بے رغبتی اور کنارہ کشی ہے۔ اصطلاحاً نفسانی لذّات سے دستبردار ہونا اور دنیاوی فرائض بیوی، بچوں اور معاشرتی زندگی کی دیگر مصروفیات سے منہ موڑ کر سماجی ذمہ داریوں سے راہ فرار اختیار کرتے ہوئے غاروں کی خلوتوں اور جنگلوں کی تنہائیوں میں ڈیرہ لگانا اور وہیں رہ کر کثرتِ عبادت و مجاہدہ بلکہ نفس کشی کے ذریعے وصالِ حق کی جستجو کرنا رہبانیت ہے۔
رہبانیت سے متعلق حضرت مفتی محمد شفیع صاحبؒ نے لکھا ہے کہ یہ رہبان کی طرف منسوب ہے ، راہب اور رہبان کے معنی ہیں ڈرنے والا، لفظ رہبانیت کا عام اطلاق ترک لذات و ترک مباحات کے لئے ہوتا ہے ۔ اس کے چند درجے ہیں، ایک یہ کہ کسی مباح و حلال چیز کو اعتقاداً یا عملاً حرام قرار دے ، یہ تو دین کی تحریف و تغیر ہے ، اس معنی کے اعتبار سے رہبانیت قطعاً حرام ہے اور آیت قرآن (یایھاالذین امنو ال اتحرموا طیبت مااحل اللہ لکم)اور اس کی امثال میں اسی کی ممانعت و حرمت کا بیان ہے ۔ اس آیت کا عنوان لاتحرموا خود یہ بتلا رہا ہے کہ اس کی ممانعت اس لئے ہے کہ یہ اللہ کی حلال کی ہوئی چیز کو اعتقاداً یا عملاً حرام قرار دے رہا ہے جو احکام الٰہیہ میں تبدیل و تحریف کے مترادف ہے۔اصولی طورپر انسان ایک ایساموجود ہے جو معاشرتی طورپر زندگی گزار نے کے لیے پیدکیاگیاہے اوراُس کی مادّی ومعنوی ترقی بھی اسی میں مضمر ہے کہ وہ تمدّنی اور اجتماعی زندگی بسر کرے ۔اسی لیے کسی آسمانی مذہب نے انسان کے بارے میں اس اجتماعی زندگی کے خلاف کوئی راہ ِ عمل تجویز نہیں کی بلکہ اس کی بنیادوں کومستحکم کیاہے۔

عبادتی زندگی کی اہمیت:
اسلامی تعلیمات میں عبادتی زندگی کی اہمیت کا تصور ہمیشہ رہا ہے ۔ لیکن اس کی تشریح اور تطبیق عبادت کے مختلف پہلووں پر منحصر ہوتی ہے ،انسانی حقوق اور ذاتی آزادیوں کی اہمیت کو بھی مدنظر رکھتے ہوئے انسانی زندگی کے مختلف پہلووں کو اپنے عبادتی زندگی کا حصہ بنایا گیا ہے ۔ اسلام میں، عبادت کی شناخت اور اس کی تربیت مختلف دینی معلومات اور عملی روشنی کی روشنی میں کی جاتی ہے تاکہ انسان اپنی روحانی ترقی کے لیے محنت کرے اور اپنی عبادتی زندگی کو دینی معیاروں کے مطابق زندگی گزارے۔
اسلام ’’دین‘‘ اور ’’دنیا‘‘ کے درمیان مناسب توازن اور توازن کا مطالبہ کرتا ہے۔

اسلام میں ’’دین اور دنیا ‘‘ کے درمیان مناسب توازن برقرار رکھنے کی تعلیم دی جاتی ہے۔ اسلام میں رہبانیت کی بجائے دینی زندگی کے علاوہ اخلاقی اصول، معاشرتی زندگی کی رہنمائی، اختلافات کے حل، انصاف کی ترویج، اور دنیاوی معاملات کی بھی تنظیم ہے،تاکہ انسان اپنی روحانی ترقی اور دنیاوی مسائل کا حل کرنے کے لیے اپنی عقلیت اور عملیت کو استعمال کر سکے، جو انسان کو ایک معتدل اور بے معیار زندگی گزارنے کی رہنمائی کرتے ہیں۔ آج کے انسان کو یہ بات سمجھانے کی ضرورت ہے کہ اسلام رہبانیت کی تعلیم نہیں دیتا، اسلام قبول کرنے یا اسلامی تعلیمات پر عمل کرنے کا مطلب دنیا کی مادی نعمتوں سے محرومی یا انسانی سو سائٹی سے الگ تھلگ کسی گوشے میں جاکر رہنا نہیں ہے۔ ایک اچھا مسلمان معاشرے کا ایک مفید، کار آمد اور متحرک فرد ہوتا ہے اور اسلام کا رنگ چڑھنے کے بعدانسان زندگی کو زیادہ بامقصد انداز میں انجوائے کر سکتا ہے۔ اسلام پر عمل کرنے سے انسان کی د نیا ختم نہیں ہوجاتی بلکہ اور خوبصورت ہوجاتی ہے اور مادی و روحانی زندگی میں توازن رکھ کر انسان ایک بھر پور زندگی گزار سکتا ہے۔ آج کے انسان بالخصوص نوجوان نسل کو مذہب، عقائد، معاملات، معاشرت اور ذاتی و اجتماعی حیات سے متعلق بہت سی الجھنیں، سوالات اور اشکالات درپیش ہیں۔ اسلام میں ہر سوال کا جواب اور ہر الجھن کا حل موجود ہے مگر ضرورت اس بات کی ہے کہ اس حل کو ذہنوں کے قریب لاکر پیش کرنے کے لیے کام کیا جائے.پیغمبر اسلام نے اپنے پیروکاروں کے لیے جس طرز زندگی کی سفارش کی ہے اسے متوازن اور اعتدال پسند کے طور پر سمجھا جا سکتا ہے، جس میں انتہا پسندی یا تنہائی پر رہنے والی کمیونٹی پر زور دیا گیا ہے۔ اس تصور کو اکثر اسلامی تعلیمات میں ’’درمیانی راستہ‘‘ کہا جاتا ہے۔ یہ مسلمانوں کو ایسی زندگی گزارنے کی ترغیب دیتا ہے جو نہ تو حد سے زیادہ پرتعیش ہو اور نہ ہی حد سے زیادہ کفایت شعاری، بلکہ اعتدال اور توازن کی ہو.یقیناً، مجھے ان شرائط کی وضاحت کرنے اور حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم کی طرف سے وضع کردہ طرز زندگی کے رہنما اصولوں کے بارے میں کچھ بصیرت فراہم کرنے میں خوشی ہوگی۔

۱۔ ملنگ: اسلامی سیاق و سباق میں، ’’ملنگ‘‘ عام طور پر کسی ایسے شخص کو کہتے ہیں جس نے روحانی عقیدت کے حصول کے لیے دنیاوی مال اور آسائشوں کو ترک کر دیا ہو۔ وہ اکثر اپنے روحانی سفر پر پوری توجہ مرکوز کرتے ہوئے ایک بہت ہی سادہ اور پرہیزگار طرز زندگی گزارتے ہیں۔ ملنگ اکثر تصوف سے منسلک ہوتے ہیں، جو کہ اسلام کی ایک صوفیانہ شاخ ہے، جہاں دنیاوی خواہشات سے لاتعلقی کو خدا سے قربت کا ذریعہ سمجھا جاتا ہے۔

۲۔ فنا فی اللہ: یہ اصطلاح صوفی اصطلاحات سے نکلتی ہے اور خدا میں فنا یا فنا ہونے کی علامت ہے۔ اس سے مراد وہ حالت ہے جہاں فرد کی انا یا خودی مکمل طور پر خدائی موجودگی میں تحلیل ہو جاتی ہے۔ یہ تصور صوفی تصوف میں مرکزی حیثیت رکھتا ہے، جہاں حتمی مقصد نفس سے بالاتر ہو کر الٰہی کے ساتھ اتحاد حاصل کرنا ہے۔
۳۔ گرم پیر: ’’پیر‘‘ ایک لقب ہے جو تصوف میں کسی روحانی رہنما یا رہنما کے لیے استعمال ہوتا ہے۔ ’’گرم پیر‘‘ ایک ایسے پیر کا حوالہ دے سکتا ہے جو اپنے شدید روحانی جوش یا جذبے کے لیے جانا جاتا ہے۔ انہیں اکثر اپنے صوفی حکم یا برادری میں انتہائی بااثر شخصیات کے طور پر دیکھا جاتا ہے، جو دوسروں کی روحانی راہ پر جوش اور لگن کے ساتھ رہنمائی کرتے ہیں۔حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم کی طرف سے وضع کردہ طرز زندگی کے رہنما اصولوں کے بارے میں، وہ زندگی کے مختلف پہلوؤں پر مشتمل ہیں جن میں ذاتی طرز عمل، سماجی میل جول، عبادت اور کردار کی نشوونما شامل ہیں۔ یہاں کچھ اہم اصول ہیں:

۱۔سادگی اور اعتدال: نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے ایک سادہ اور معمولی زندگی گزاری، اکثر کم سے کم مال کا انتخاب کرتے تھے۔ اس نے اپنے پیروکاروں کو اسراف سے بچنے اور اپنے وسائل کے اندر رہنے کی ترغیب دی۔
۲۔ مہربانی اور ہمدردی: نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے دوسروں کے ساتھ حسن سلوک، شفقت اور انصاف کے ساتھ پیش آنے کی اہمیت پر زور دیا۔ اس نے اپنے پیروکاروں کو سکھایا کہ وہ تمام جانداروں کے ساتھ رحم کریں اور دوسروں کے ساتھ اپنے معاملات میں انصاف کو برقرار رکھیں۔
۳۔ دعا اور عبادت: باقاعدگی سے دعا اور خدا کے لئے لگن نبی محمد صلی اللہ علیہ وسلم کے طرز زندگی میں مرکزی حیثیت رکھتے تھے۔ اس نے پانچوں نمازوں کو مسلمانوں کے لیے اپنے خالق کے ساتھ قریبی تعلق برقرار رکھنے کے ایک ذریعہ کے طور پر قائم کیا۔
۴۔ برادری اور بھائی چارہ: نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے مسلم کمیونٹی کے اندر بھائی چارے اور بھائی چارے کے مضبوط رشتوں کی تعمیر کی اہمیت پر زور دیا۔ انہوں نے مومنین کے درمیان باہمی تعاون، تعاون اور یکجہتی کی حوصلہ افزائی کی۔

۵۔ اخلاق اور دیانت: اعلیٰ اخلاقی معیارات کو برقرار رکھنا اور دیانتداری، دیانتداری اور اخلاص پر عمل کرنا پیغمبر اکرمؐ کی تعلیمات کے بنیادی پہلو تھے۔ انہوں نے اچھے کردار کو برقرار رکھنے اور دوسروں کے ساتھ عزت اور وقار کے ساتھ پیش آنے کی اہمیت پر زور دیا۔ یہ ان بہت سے طرز زندگی کے رہنما اصولوں میں سے صرف چند ہیں جن کی وکالت حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم نے اپنے پیروکاروں کے لیے کی تھی۔ ان کی تعلیمات اسلامی اصولوں کے مطابق ایک مکمل اور صالح زندگی گزارنے کے لیے ایک جامع فریم ورک کے طور پر کام کرتی ہیں۔نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ میری طرح لائف اسٹائل میں فالو کریں۔ زندہ رہو میری طرح عبادت میری طرح نماز،روزہ،حج کے عبادات ,دعا کرو میں بہترین مثال ہوں۔نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے دوسروں کے ساتھ ہم آہنگی کے ساتھ زندگی گزارنے، مہربان اور انصاف پسند ہونے، خاندان اور معاشرے کے لیے اپنی ذمہ داریوں کو پورا کرنے کے ساتھ ساتھ ذاتی تقویٰ اور خدا کے لیے عقیدت پر عمل کرنے کی اہمیت پر زور دیا۔ اعتدال اور اجتماعی زندگی کے طرز زندگی کو فروغ دے کر، پیغمبر محمد نے ایک ایسا معاشرہ قائم کرنے کی کوشش کی جہاں افراد خدا اور انسانیت کے لیے اپنے فرائض اور ذمہ داریوں کو پورا کرتے ہوئے پوری زندگی گزار سکیں۔
اجتماعی زندگی، جہاں افراد ایک دوسرے کی مدد اور نگہداشت کرتے ہیں، اسلام میں انتہائی اہمیت کی حامل ہے۔ یہ طرز زندگی سماجی ہم آہنگی، باہمی تعاون، اور کمیونٹی کے اندر وسائل اور ذمہ داریوں کے اشتراک کی حوصلہ افزائی کرتا ہے۔ اسلام نے زندگی کے مختلف شعبوں میں انسان کو حدود فراہم کی ہیں جو اس کے عمل کرنے کیلئے فراہم کی گئی ہیں۔ اسلام میں رہبانیت کی بجائے، اخلاقی اور دینی زندگی کی تربیت فراہم کی گئی ہے تاکہ انسان اپنی روحانی ترقی اور دنیاوی مسائل کا حل کرنے کے لیے اپنی عقلیت اور عملیت کو استعمال کر سکے۔ اسلام میں، زندگی کی مختلف شعبوں میں اخلاقی اور عبادتی زندگی کے مخصوص اصول فراہم کیے گئے ہیں جو انسان کو ایک معتدل اور بے معیار زندگی گزارنے کی رہنمائی کرتے ہیں۔

(مضمون نگار میڈیکل ڈاکٹر ہونے کے ساتھ ساتھ مختلف اخلاقی اور سماجی مسائل کے ادراک کے انتظام میں بہت سرگرم ہیں۔ ان سے [email protected] اورtwitter@drfiazfazili پر رابطہ کیا جا سکتا ہے)