’اردو اساتذہ کی صلاحیت سازی ‘

سرینگر//قومی کونسل برائے فروغ اردو زبان کے ڈائریکٹر ڈاکٹر شیخ عقیل احمدنے اردو زبان و ادب کو موجودہ سائنسی و تکنیکی تقاضوں سے ہم آہنگ کرنے پر زیادہ زور دیا ہے جبکہ مولانا آزاد نیشنل اردو یونیورسٹی کے ریجنل ڈائریکٹر کشمیر ڈاکٹر اعجاز اشرف کے مطابق اردو زبان کا جنازہ اٹھ رہا ہے۔ڈاکٹر عقیل اور ڈاکٹر اعجاز اشرف ہفتے کے روز چرار شریف بڈگام میں ’انجمن فروغ اردو جموں و کشمیر‘کی طرف سے 'اردو اساتذہ کی صلاحیت سازی' کے عنوان پر منعقدہ دو روزہ ورکشاپ سے خطاب کررہے تھے ۔ ورکشاپ میں ضلع بڈگام کے چرار شریف ،ناگام اور چاڈورہ کے تعلیمی زون میں ابتدائی سطح پر اردو درس و تدریس سے وابستہ اساتذہ نے شرکت کی۔اس موقع پر قومی کونسل برائے فروغ اردو زبان کے ڈائریکٹر ڈاکٹر شیخ عقیل احمد بھی موجود تھے ۔انہوں نے صدارتی خطبہ میں ایک استاد کی حیثیت ، اس کے فرائض اور ذمہ داریوں کے علاوہ اردو زبان و ادب کو موجودہ سائنسی و تکنیکی تقاضوں سے ہم آہنگ کرنے پر زیادہ زور دیا ۔ انہوں نے اردو زبان و ادب کی جاودانیت کا انحصار اس بات پر قرار دیا کہ اسے بچوں کی صلاحیتوں ، دلچسپیوں اور وقتی تقاضوں کے مطابق ڈالا جائے۔انہوںنے انجمن کو ہر طرح کا ممکنہ تعاون فراہم کرنے کی یقین دہانی کی۔مانو ریجنل ڈائریکٹر ڈاکٹر اعجاز اشرف نے کہا’’اردو زبان کا جنازہ اٹھ رہا ہے اورہم انتظار کر رہے ہیں ۔ہم سب لوگ اس میں ذمہ دار ہیں کیونکہ ہم مسئلے کو سنجیدگی سے نہیں لے رہے ہیں‘‘۔انہوں نے مزید کہا’’جس طرح ہم اپنے مال و جان اور عزت و ناموس کی حفاظت کرتے ہیں اسی طرح ہمیں اردو زبان کی بھی حفاظت کرنی چاہئے جب کوئی اس زبان کے ساتھ کوئی چھیڑ چھاڑ کرے گا ہمیں کھڑے ہو کر آواز بلند کرنی چاہئے‘‘۔ڈاکٹر اعجاز اشرف نے کہا کہ پہلے ہماری قوم عربی بولتی تھی پھر یہاں فارسی بھی بولی جاتی تھی اس کے بعد اردو لیکن آج اس کا برا حال ہے ۔انہوں نے کہا کہ اگر آج ہمارے بچے ٹوٹی پھوٹی اردو بول رہے ہیں لیکن مستقبل قریب میں کوئی ٹوٹی پھوٹی اردو بھی نہیں بول پائے گا۔ورکشاپ میں انجمن فروغ اردو جموں و کشمیر کے سرپرست اعلیٰ میر علی محمد شیدا نے استقبالیہ کلمات پیش کئے ۔انجمن کے صدر ڈاکٹر الطاف انجم نے انجمن کے اغراض و مقاصد پیش کر کے اردو زبان کے فروغ کی اہمیت پر سیر حاصل روشنی ڈالی۔ورکشاپ میں پرائیویٹ سکولز ایسوسی ایشن کے سکریٹری غلام نبی شاکر اور انجمن کے نائب صدر ڈاکٹر محی الدین زور نے بھی خیالات کا اظہار کیا۔