آج سے کشمیر ہائی وے پر بھاری ٹول ٹیکس عاید، لوگوں کا احتجاج

سرینگر/ کشمیر ہائی وے پر چلنے کیلئے منگل سے بھاری ٹول ٹیکس عاید کیا گیا ہے جس کیخلاف لوگوں نے شدید غم و غصے کا اظہار کیا ہے۔

ذرائع کے مطابق کئی مہینوں کے بعد سنگم کے نزدیک ٹول ٹیکس وصولنے کا کائونٹر مکمل ہوگیا ہے اور اس کو آج سے چالو کیا گیاہے۔

خبر رساں ایجنسی جی این ایس کے مطابق آج جونہی اس شاہراہ پر چلنے والی چھوٹی گاڑیوں سے فی گاڑی 85روپے وصولنے کا سلسلہ شروع ہوا تو سینکڑوںلوگوں نے حیرانگی کے عالم میں اس کیخلاف احتجاج کیا اور اس کو ''تانا شاہی'' حکم قرار دیا۔

احتجاجی لوگوں کا کہنا تھا کہ سیولین گاڑیوں پر بھاری ٹول ٹیکس عاید کرنے کا مطلب یہ ہے کہ حکام اس شاہراہ کو عام لوگوں کیلئے بند ہی رکھنا چاہتے ہیں۔

واضح رہے کہ کشمیر شاہراہ پر3اپریل سے پابندیاں عاید ہیں۔

 جی این ایس کے مطابق ڈویژنل کمشنر ،کشمیر بصیر احمد خان نے کشمیر شاہراہ پر قائم ٹول کائونٹر سے بیس کلو میٹر کے فاصلے تک رہنے والے شہریوں کو اس ٹیکس سے مستثناء رکھا گیا ہے اس سلسلے میں بہت جلد احکامات صادر کئے جارہے ہیں۔

دریں اثناء عام شہریوں،پبلک ٹرانسپورٹ سے وابستہ افراد ،طالب علموں،تاجروں اور سرکاری ملازمین نے کشمیر ہائی وے پربھاری ٹول ٹیکس کیخلاف احتجاج کا ارادہ ظاہر کیا ہے۔