تازہ ترین

غزلیات

حنا میں دستِ صبا پر رچانے آیا ہوں  کلی کی آنکھ میں کاجل لگانے آیا ہوں    جہانِ عشق میں ہلچل مچانے آیا ہوں  نگاہِ یار میں دنیا بسانے آیا ہوں   مجھے حیات کا سودا نہ راس آیا ہے  تری  دکان سے خود کو اُٹھانے آیا ہوں   مجھے خبر ہے اندھیروں کا ہے سفر مشکل  تمہاری رات میں مشعل جلانے آیا ہوں    جفا سے کس کا  بھلا ہو چکا ہے دنیا میں  وفا کے پھول چمن میں کِھلانے آیا ہوں    اُٹھو اُٹھو نہ کرو دیر آنکھ تو کھو لو  مسافرِ شبِ غم کو جگانے آیا ہوں    قلم پہ اتنا بھروسہ تو ہے  مجھے عادل ؔ ہنر کے تاج محل میں بنانے آیا ہوں    اشرف عادلؔ کشمیر یونیورسٹی حضرت بل  سرینگر کشمیر ،رابط 9906540315