فرقہ پرستوں نے اردو کو مسلمانوں کے ساتھ جوڑ کر بڑا ظلم کیا

سرینگر//کشمیر یونیورسٹی میںکل23ویں کُل ہند اردو کتاب میلہکا افتتاح کرتے ہوئے سابق وزیر اعلیٰ اورپا رلیمنٹ ممبر ڈاکٹر فاروق عبداللہ نے ریاست میں اردو کی موجودہ صورتحال پر افسوس کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ اردو کھبی بھی کسی مخصوص طبقے،مذہب یا فرقے کی نہیں رہی،جبکہ قومی کونسل برائے فروغ اردو کے ڈائریکٹر شیخ عقیل احمد نے کشمیر کو اردو کا مرکز اور علم و ادب کا گہوارہ قرار دیا۔ ایک ہفتہ تک جاری رہنے والے اس میلے کا اہتمام قومی کمیشن برائے فروغ اردو زبان نے کیا ہے۔تقریب میںکشمیر یونیورسٹی کے وائس چانسلر پروفیسر طلعت احمد بھی موجود تھے۔ میلہ کا افتتاح کرتے ہوئے ڈاکٹر فاروق عبداللہ نے کہا کہ اردو بھارت کے گنگا ،جمنی تہذیب کی عکاسی اور نمائندگی کرتی ہے۔‘‘انہوں نے ریاست میں علاقائی زبانوں اور اردو کی موجودہ صورت حال پر اظہار افسوس کرتے ہوئے کہا کہ کشمیری عوام کو اپنی مادری زبان کے ساتھ

۔5 نقب زنوں کاگروہ پولیس کی گرفت میں

سرینگر // پولیس نے نقب زنوں کے ایک گروہ کا پردہ فاش کرتے ہوئے پانچ چوروں کی گرفتاری عمل میں لا کر اُن کے قبضے سے لاکھوں روپیہ مالیت کا مالہ مسروقہ برآمد کرکے ضبط کیا۔ صفا کدل پولیس کو تحریری طورپر شکایت موصول ہوئی کہ باغ نند سنگھ علاقے میں قائم گودام سے نقب زنوں نے لاکھوں روپیہ مالیت کا مالہ مسروقہ اُڑایا ہے ۔ ایس ایس پی سرینگر ڈاکٹر حسیب مغل کی ہدایت پر ایس ڈی پی او ایم آر گنج ، ایس ایچ او صفا کدل ، انچارج پولیس پوسٹ باغیاث اور انچارج پولیس پوسٹ نورباغ کی سربراہی میں خصوصی تحقیقاتی ٹیم کا قیام عمل میں لایا گیا ۔چنانچہ پولیس ٹیم نے پیشہ وارانہ صلاحیتوں کو بروئے کار لارتے ہوئے پانچ مشتبہ افراد محمد یاسین حجام ولد غلام مصطفی ساکنہ ترکول بل پٹن، مظفر احمد ڈار ولد غلام محمد ساکنہ ہانجی ویرہ پٹن، الطاف احمد میر ولد غلام احمد میر ساکنہ خمینی چوک بمنہ ، عرفان ناگر ولد غلام نبی ساکنہ سیدہ کدل

طلاب کی رسائی پر قدغن | میلہ کو سیاست کی نذر کرنے کا الزام

 سرینگر//جامعہ کشمیر میں سنیچر کو پولیس کی طرف کتابی میلہ میں طلاب کی رسائی پر قدغن لگائی گئی،جس پر انہوں نے برہم ہوکر کہا کہ میلہ کو سیاست کی نذر کیا جارہا ہے۔ یونیورسٹی کے ابن خلدون آڈیٹوریم کے باہر اس وقت غیر یقینی صورتحال رونما ہوئی جب کتاب میلے کے افتتاحی سیشن سے ڈاکٹر فاروق عبداللہ مخاطب ہورہے تھے ۔ عینی شاہدین کے مطابق کتاب میلے کے ابتدائی سیشن کے دوران کسی بھی طالب علم کو آڈیٹوریم کے اندر جانے کی اجازت نہیں دی گئی۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ اگر چہ جامعہ میں زیر تعلیم طلبا و طالبات کی ایک بڑی تعداد کتابوں کی نمائش و خریداری کیلئے یہاں دور دور سے پہنچے تھے تاہم یہاں تعینات پولیس اہلکاروں نے انہیں اندر جانے کی اجازت نہیں دی۔طلبا کے مطابق یونیورسٹی کو صبح سے ہی فورسز نے اپنی تحویل میں لے رکھا تھا جس دوران طلبا و طالبات کو ابن خلدون آڈیٹوریم کے اندر قطعی طور پر اندر جا نے کی اجازت

زیارت غوثیہ خانیار میں مجلس وعظ

سرینگر/ زیارت غوثیہ خانیار شریف میں بعد معمولات تا نماز ظہر مجلس وعظ کا انعقاد ہوا جو طے شدہ پروگرام کے مطابق اس روز ماہانہ تبلیغ ہوتا ہے۔ جس کے تناظر میں انجمن حمایت الاسلام کے صدر مولانا خورشید احمد قانونگو نے نعمت خداوندی کے موضوع پر بیان کرتے ہوئے کہا کہ انسان کے وجود میں ذائقہ و احساس نعمت خداوندی ہے۔ جس انسان کے اندر علمی، اخلاقی و روحانی احساس و ادراک موجود نہ ہوتے ہوئے اس نعمت سے انکار ہو، یہی خدا کے دربار میں سب سے بڑی ناشکری ہے ۔ جس وجہ سے وہ نعمت خداوندی اصلی حقیقی ادراک سمجھنے سے قاصر ہوتے ہوئے علمی معاملات میں اختلافات میںبڑھنے کا اندیشہ ہے۔ اس موقعہ پر سابق سجادہ نشین مرحوم میر سید حسن گیلانی کے یوم وصال کے تناظر میں ان کی خدمات کا ذکرکرت ہوئے انہیں ایصال ثواب کیاگیا۔   

طبی اداروں کی فیکلٹی کو بہتر خدمات کی دستیابی کیلئے قائدانہ رول ادا کرنا ہوگا: اتل ڈُلو

سرینگر //فائنانشل کمشنر صحت و طبی تعلیم اتل ڈُلو نے طبی اداروں کے فیکلٹی ممبران پر زور دیا ہے کہ وہ لوگوں کو بہتر سے بہتر خدمات بہم پہنچانے کے لئے قائدانہ رول ادا کریں۔سکمز میڈیکل کالج بمنہ میں طبی تعلیم سے متعلق ایک ورکشاپ کی افتتاحی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے اتل ڈُلو نے کہا کہ تعلیم دانوں اور فیکلٹی ممبران پر یہ ذمہ داری عائد ہوتی ہے کہ وہ ان اداروں میں دستیاب طبی سہولیات میں مزید بہتری لائیں۔انہوں نے اس طرح کے ورکشاپوں کا انعقاد ایم سی آئی کی طرف سے بنیادی طبی تعلیم کے مختلف پہلوؤں میں بہتری لانا ہے۔ انہوں نے کہا کہ اس دوران شرکاء کو طِب کی دُنیا کے جدید پہلوؤں سے اپنے آپ کو ہمکنار کرانے میں مدد ملتی ہے۔ممبر گورننگ باڈی سکمز پروفیسر ڈاکٹر محمد سلطان کھورو، ڈائریکٹر سکمز پروفیسر ڈاکٹر عمر جاوید شاہ، پرنسپل سکمز میڈیکل کالج بمنہ ڈاکٹر ریاض اونتو، چیئرمین اکیڈیمکس سکمز میڈیکل کالج ڈا

شہر خاص کی ثقافت اور عظمت ختم ہونے کے دہانے پر:رنزو شاہ

سرینگر//کشمیر سوسائیٹی اور کشمیر ڈیویلپمنٹ کے چیرمین خواجہ فاروق رنزو شاہ نے کل نامہ نگاروں سے بات کرتے ہوئے کہا  کہ کشمیر کی عظیم ثقافت ،اعلی تمدن کردار کو چند مسائل،  تنازعات،محاذ 3 فیصد ووٹ بنک کی نظر نہیں کیا جاسکتا ہے ،انہوں نے کہا ہماری عالمی میراث،آثاثہ اور وراثت جیسے کہ زبرون ،تخت سلیمان،کوہ ماران  جوکہ محکمہ پہاڑ اور ندی نالوں کی دیکھ بھال کے ماتحت آتا ہے اس پر فوری اور ہنگامی بنیادوں پر توجہ دینے کی اشد  ضرورت ہے،انہوں نے کہا پچھلے 70 سال کے نامسائد حالات کے باعث عالمی ثقافتی وراثت جو کہ سرینگر کے  شہر خاص میں واقع پذیر ہیں میں کو نا تلافی نقصان پہنچا ہے خصوصی طور  جھیلوں و ندی نالوں کو جیسے کہ عالمی مقبولیت یافتہ سیاحتی جھیل ڈال لیک،آنچار لیک،نالہ مارن یا تو عدم توجہی کا شکار ہوا ہے یا مجرمانہ غفلت شعاری سے اس کی  میراث و ثقافتی  کر

بزرگوں کے ساتھ زیادتیوں کا عالمی دن | کوٹھی باغ سکول میں تعلیم دانوں کیلئے اورنٹیشن پروگرام کا انعقاد

سرینگر //بُزرگوں کے حقوق سے متعلق عالمی دِن کے موقعہ پر تعلیم دانوں کے لئے ایک اورنٹیشن پروگرام کا انعقاد کیا گیا۔ اورنٹیشن پروگرام’’ ایجنگ وِد ڈگنٹی‘‘ موضوع کے تحت شروع کی گئی ایک ہفتہ طویل مہم کا حصہ ہے ۔ اس پروگرام کا انعقاد کل ڈی ایل ایس اے کی طرف سے گرلز ہائیر سکینڈری سکول کوٹھی باغ میں کیا گیا۔اس موقعہ پر پرنسپل ڈسٹرکٹ اینڈ سیشنز جج سرینگر عبدالرشید ملک نے کہا کہ اس اورنٹیشن پروگرام کا بنیادی مقصد یہ ہے کہ معزز شہریوں کو درپیش مختلف چیلنجوں کو حل کیا جاسکے اور طُلاب و تعلیم دانوں کو معزز شہریوں کی ضروریات سے آگاہ کیا جاسکے۔علاوہ ازیں انہیں سنیئر سٹیزن ایکٹ کے بارے میں جانکاری دی جاسکے۔انہوں نے کہا کہ اس طرح کے پروگرام نوجوانوں اور معزز شہریوں کے درمیان موجود دوریوں کو کم کرنے میں سود مند ثابت ہوں گے۔ممبر سیکرٹری جے اینڈ کے سٹیٹ لیگل سروسز اتھارٹی محمد اکر

قومی کونسل برائے فروغ اردو کے ڈائریکٹر کی قدر افزائی

سری نگر//قومی کونسل برائے فروغ اردو نئی دہلی کے ڈائریکٹر ڈاکٹر شیخ عقیل احمد کے دورئہ وادی کشمیر کے دوران نگینہ انٹر نیشنل کی جانب سے ان کے اعزاز میں بلائی گئی ایک پر رونق ادبی نشست میں،سربراہوردہ ادبی اور علمی شخصیات کی موجودگی میں، ان کی، سندِافتخار اور دوشالہ اوڑھاکر قدر افزائی کی گئی۔ڈاکٹر اشرف آثاری نے مہمان ذی وقار کی سند کو پڑھ کر سنایا۔ ایوانِ صدارت میںریٹائرڈ جسٹس بشیر احمد کرمانی اور مہمانِ ذی وقار ڈاکٹر شیخ عقیل احمد کے علاوہ وحشی سعید بھی تشریف فرما رتھے۔ادبی نشست میں وحشی سعید کے تازہ افسانوی مجموعہ’’آخر کب تک۔۔۔‘‘ کی رسم رونمائی بھی انجام دی گئی۔کتاب پر تبصرہ محمد عبداللہ خاور نے لکھا تھا اور پڑھ کر سنایا۔ڈاکٹر شیخ عقیل احمد نے  اپنی فکر انگیز تقریر میںپرخلوص اور بے لوث تاثرات سے نوازا اور صدارتی خطبے میں جسٹس بشیر احمد کرمانی نے ادبی نشست ک

تازہ ترین