تازہ ترین

نصیبِ دوستاں آئی

بصورت اِک عروسِ نَو یہ اُردُو کیا زباں آئی جِسے کہتا ہے عالم سب یہ کیا شیریں زباں آئی جو عرش و فرش میں ہم نے یہی ذکرِ زباں پایا مُہذب ہند میں اُردو بصورت کہکشاں آئی نئی تہذیب کا سوُرج ہُوا پھِر ضَو فِشاں اِس سے اَخوّت کا علم لے کر یہ کیا جادو بیاں آئی بہُت زرخیز مٹی ہے جہانِ ہِند کی عُشّاقؔ اِسی آنگن کے حِصّے میں نویلی یہ زباں آئی ایلورہؔ اور اجنتاؔ کی ہُوئی ہے یاد پھِر تازہ لِئے آغوش میں اپنی نئی اِک داستاں آئی بلا تفریق پالا ہے اِسے ہندو مُسلماں نے ترنگے میں اخوت کا لِئے باہم نِشاں آئی عجب الفاظ و معنی کی زباں میں تابداری ہے اماں کیا تان میں اِن کی اُبھر کر کہکشاں آئی لگا کر یوں گلے اِس کو یہاں پر صوفی سنتوں نے بدولت اِن کی کاوش کے یہاں شعری زباں آئی سُنا ہے کشتِ کشپؔ میں لگا اُردو کا میلہ ہے غنیمت ہے سعاد