تازہ ترین

غزلیات

اُن کو دیکھے بِناجی بہلتانہیں  اِس نظرمیں کوئی اَب ٹھہرتانہیں   اُن سے جب سے محبت ہوئی دل بِنا ان کے تب سے مچلتا نہیں   ہے سمائی یہ دُھن کیسی دلدار کی اب کسی دُھن پہ یہ دِل دھڑکتانہیں   ایک عالم بپا بے قراری کاہے لاکھ کوشش کریں کچھ بھی بنتا نہیں   خوب سمجھایا تھا دل کو صورتؔ، مگر دل تو دل ہے کبھی خُو بدلتا نہیں   صورت سنگھ رام بن، موبائل نمبر؛9419364549     کیوں عداوت رکھیں زمانے سے    تیر کو عشق ہے نشانے سے ایک دن دل کو چین آتا تھا باغ میں تتلیاں اُڑانے سے ہے مصیبت اگر تو کیا ہوگا سر پہ یوں آسمان اٹھانے سے آج مایوس ہو کے لوٹا ہوں میں محبت کے آستانے سے اُس کو کوئی فرق نہیں پڑتا یاد رکھنے سے بھول جانے سے دشمنی ہی عزیز ٹ