تازہ ترین

نابالغ دوشیزہ کیساتھ بدسلوکی جھیل ڈل میں 3افراد پولیس کی گرفت میں

سرینگر// پولیس نے جھیل ڈل کے اندر ایک کمسن دوشیزہ کے ساتھ غیر شائستہ حرکات انجام دینے والے تین افراد کو حراست میں لے لیاہے ۔ پولیس اسٹیشن نگین کو شکایت موصول ہوئی کہ ایک کمسن دوشیزہ کے ساتھ جھیل ڈل میں حضرت بل کے نزدیک غیر شائستہ حرکات انجام دی جارہی ہے۔ چنانچہ پولیس نے اس سلسلے میں ایف آئی آر زیر نمبر 65/2019کے تحت کیس درج کرکے تحقیقات شروع کی اور توحید احمد میر ولد شوکت احمد میر اور احسان الحق ولد شوکت احمد یتو ساکنان صدر بل کی گرفتاری عمل میں لاکر اُنہیں سلاخوں کے پیچھے دھکیل دیا۔ تاہم گرفتار شدگان کا اور ایک ساتھی بلال احمد ڈار عرف کلہ ولد غلام نبی ڈار ساکنہ حضرت بل رات کی تاریکی کا فائدہ اُٹھا کر فرار ہوا۔ البتہ پیشہ وارانہ صلاحیتوں کو بروئے کار لاتے ہوئے پولیس نے مفرور ملزم کو بھی گرفتار کرنے میں کامیابی حاصل کی۔ اس طرح سے پولیس نے اس گھناونے جر م میں ملوث سبھی افراد کو 24گھنٹوں

بانہال کے بیوپاری کی نعش ادہمپور کے جنگلات سے برآمد

بانہال //7دنوں سے لاپتہ بانہال کے شہری کی نعش اودہمپور کے ٹکری جنگلات سے جمعہ کی شام برآمد ہوئی ۔پولیس کو یہ کامیابی پوچھ تاچھ کیلئے اٹھائے گئے عاشق علی گوجر کے اعتراف جرم کے بعد ملی ہے۔ پچھلے 25سال سے بھیڑ بکریوں کے کاروبار سے جڑا 50 سالہ بیوپاری غلام رسول وانی ساکنہ ٹھٹھاڑ بانہال 12جولائی سے اودہمپور کے ٹکری علاقے سے لاپتہ ہوگیا تھا اور اس سلسلے میں 17جولائی کو ٹکری پولیس پوسٹ میں گمشدگی کی ایک رپورٹ درج کرائی گئی جس کے مطابق آخری فون کال کے وقت اسکے ہمراہ عاشق علی گوجرتھا جس کے بارے میں پولیس کو بتایا گیاجس پر پولیس نے اسے پوچھ تاچھ کیلئے حراست میں لیا۔ذرائع نے بتایا کہ مجرم عاشق علی گوجرنے اقبال جرم کرنے کے بعد اعلیٰ افسروں کی قیادت میں پولیس ٹیم کو اس جگہ پہنچایا جہاں اس نے ایک اور ساتھی کے ساتھ ملکر بیوپاری کا قتل کیا۔ذرائع کے مطابق اودہمپور پولیس کی طرف سے سختی برتنے کے بعد عا

بانہال میں ہڑتال شاہراہ 5 گھنٹے بند رہی، یاترا بھی متاثر

بانہال // جمعہ کی صبح سے ہی اودہمپور پولیس کی سست روی کے خلاف شاہراہ پر واقع بانہال ، گنڈ ولکوٹ ، ٹھٹھاڑ ، چریل اور نوگام میں لوگ سڑکوں پر نکل آئے اور مکمل ہڑتال کی وجہ سے معمول کی زندگی متاثر رہی۔ غلام رسول کے آبائی گاؤں ٹھٹھاڑ میں شاہراہ پر دھرنا دیکر   ٹریفک کی آمدورفت پانچ گھنٹوں تک بند رہنے کے بعد بحال کی گئی جبکہ سالانہ امرناتھ یاترا کو بھی کم از کم ایک گھنٹہ کیلئے درماندہ رہنا پڑا۔  اس سے پہلے قصبہ بانہال میں تاجروں ، سول سوسائٹی اور عام لوگوں نے احتجاجی مظاہرہ کیا اور کچھ وقت کیلئے ٹریفک کوبند کردیا تاہم بعد میں ٹریفک بحال کیا گیا ۔تاہم لاپتہ ہوئے شہری غلام رسول وانی کے گاؤں ٹھٹھاڑ میں مرد و خواتین، رضاکار اور سول سوسائٹی کے اہلکار شاہراہ ہر دھرنے پر بیٹھے تھے جس کی وجہ سے ٹریفک کم از کم چار گھنٹوں تک معطل رہا۔ موقعہ کی نزاکت کو دیکھتے ہوئے ایس ایس پی رام بن

کشمیر کا کوئی بھی حل ممکن نہیں: نٹور سنگھ

سرینگر//سابق مرکزی وزیر خارجہ نٹور سنگھ کا کہنا ہے کہ مسئلہ کشمیر کا کوئی بھی حل ممکن نہیں ہے کیوں کہ ہندوستان اور پاکستان کے آپسی رشتے ہمیشہ سے حادثات اور مخاصمت کا شکار رہے ہیں۔انہوں نے الزام عائد کیا کہ پاکستانی حکومت کو فوج اور خفیہ ایجنسی آئی ایس آئی نے ہائی جیک کیا ہوا ہے۔ سابق مرکزی وزیر خارجہ نٹور سنگھ کا کہنا ہے کہ مسئلہ کشمیر کا کوئی بھی حل ممکن نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہندوستان اور پاکستان کے آپسی رشتے ہمیشہ سے حادثے اور مخاصمت کا شکار رہے ہیں لہٰذا ایسی صورتحال میں کشمیر کا حل ممکن نہیں لگ رہا ہے۔نئی دہلی میں ’’ہندوپاک تعلقات:پلوامہ اور بالاکوٹ سے آگے‘‘ نامی کتاب کی رسم رونمائی کی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے سابق مرکزی وزیر نٹور سنگھ نے بتایا کہ دونوں ممالک کا مستقبل ماضی میں مضمر ہے کیوں کہ دونوں کے پاس رشتوں کو مضبوط اور مستحکم کرنے کیلئے ذرائع مو

بھارت دھونس دبائو کا وطیرہ تبدیل کرے: میرواعظ

سرینگر//حریت (ع) چیرمین میرواعظ عمر فاروق نے حکومت ہندوستان پر زور دیا ہے کہ وہ مسئلہ کشمیر کے حل کے ضمن میں دھونس دبائو اور طاقت کی پالیسی اختیار کرنے کے بجائے مفاہمانہ طرز سیاست اختیار کرے کیونکہ طاقت اور تشدد کی پالیسی سے یہ مسئلہ نہ ماضی میں حل ہو سکا ہے اور نہ آئندہ اس مسئلہ کے حل کے حوالے سے اس طرح کا طرز عمل معاون یا مددگار ثابت ہو سکتا ہے کیونکہ طاقت اور تشدد کی پالیسی سے یہاں کے عوام میں بھارت کے تئیں غم و غصے میں اضافہ ہو رہا ہے اور کشمیری عوام کے دلوں میں نفرت اور بیزاری بڑھ رہی ہے ۔مرکزی جامع مسجد سرینگر میں نماز جمعہ سے قبل ایک اجتماع سے خطاب کرتے ہوئے میرواعظ نے کہا کہ حکومت ہندوستان کی جانب سے ایک کشمیر کش اور مسلم کش پالیسی اختیار کی گئی ہے، ہر سطح پر سختیاں ، بندشیں عائد ہیں ، کہیں سڑکیں بند ہیں تو کہیں راستے اور کہیں ٹرین بند ہے اور اس طرح ایک سوچے سمجھے منصوبے کے تح

۔13جولائی کے شہداء پر وکرمادتیہ سنگھ کا بیان مذموم

 سرینگر//13جولائی 1931کے شہداء کشمیر سے متعلق سینئر کانگریس لیڈر وکرمادتیہ سنگھ کے بیان پر ریاست کی مین اسٹریم جماعتوں بشمول نیشنل کانفرنس ،عوامی اتحاد پارٹی اور پیپلز کانفرنس نے شدید رد عمل کا اظہار کرتے ہوئے انہیں فوری طور معافی مانگنے اور اپنا بیان واپس لینے کا مطالبہ کیا ہے۔ نیشنل کانفرنس نے ریاست کے سابق صدر ریاست کرن سنگھ کے فرزند وکرام ادتیہ کے اس بے ہودہ ،ذہنی اختراع پر مبنی اورافسوس ناک بیان کی پُر زور مذمت کرتے ہوئے انہیں پہلے تاریخ کشمیر کا مطالعہ کرنے کا مشورہ دیا ۔ این سی  کے معاون جنرل سیکریٹری ڈاکٹر شیخ مصطفیٰ کمال نے وکرمادتیہ سنگھ کے بیان کوجھوٹ کا پلندہ صداقت اور حقائق سے بعید قرار دیتے ہوئے کہا کہ شہداء وطن نے مہاراجہ سامراجوںکے صدیوں کی غلامی ، بے گاری ، ظلم وستم اور مذہبی آزادی پر قدغن لگانے کے خلاف اٹھائی تھی ۔ کیونکہ شخصی حکمرانوںنے (مہاراجوں ) نے ہمار

سرکاری اسپتالوں میں مہلک جراثیم کاپھیلائو تشویشناک:ڈاک

سرینگر // ڈاکٹرز ایسوسی ایشن کشمیر نے کہا ہے کہ کشمیرکے اسپتال جراثیم کش ادویات سے نہ ختم ہونے والے بیکٹیریا سے بھرے پڑے ہیں۔ ایسوسی ایشن کے صدر ڈاکٹر نثارلحسن نے اپنے ایک بیان میں کہا ہے کہ کشمیر میں کام کرنے والے سرکاری اسپتال جراثیم کش ادویات سے نہ ختم ہونے والے بیکٹیریا کیلئے پیدائش کی جگہوں میں تبدیل ہوگئے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ صدر اسپتال سرینگر میں بیکٹیریا مثلاً Acinetobacter, Pseudomonas, Klebseilla اور Escherichia col ہر جگہ پائے جاتے ہیں اور ان بیکٹیریا جراثیم پر ادویات کا کوئی اثر نہیں ہوپارہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ جراثیم کش ادویات مثلاًcarbapenemsاور colistinبھی صدر اسپتال میں پائے جانے والے جراثیم کا کچھ بھی نہیں بگاڑ رہے ہیں۔ سال 2017-18کے میں شیر کشمیر انسٹیچوٹ آف میڈیکل سائنسز کے اینٹی بائیوگرام کا حوالہ دیتے ہوئے ڈاکٹر نثار  نے کہا ہے کہ سیکمز میں پائے گئے بیکٹیریا

مزید خبریں

مرکزی وزیراورایم ایل سی گورنر سے ملاقی سرینگر// مرکزی وزیر برائے ہیوی انڈسٹریز اینڈ پبلک انٹر پرائزز اروند گنپت ساونت نے یہاں راج بھون میںگورنر ستیہ پال ملک کے ساتھ ملاقات کی۔گورنر اور مرکزی وزیر نے ریاست میں پبلک سیکٹر انٹر پرائزز کو مزید فعال بنانے ، صنعتی شعبۂ میں بہتری لانے اور روز گار کے مواقعے فراہم کرنے پر تبادلہ خیال کیا۔ادھرایم ایل سی وِکرم رنداھوا نے یہاں راج بھون میںگورنر ستیہ پال ملک کے ساتھ ملاقات کی۔ رندھاوا نے گورنر کو عوامی اہمیت کے حامل کئی معاملات کے بارے میں جانکاری دی۔ انہوں نے گورنر کو جموں ہوائی اڈے کو وسعت دینے کی وجہ سے متاثر ہوئے کنبوں کی باز آباد کاری کی استدعا کی۔اس کے علاوہ انہوں نے ارکان قانون سازیہ کے حق میں سی ڈی ایف کی واگذاری کی درخواست کی۔گورنر نے ایم ایل سی یقین دلایا کہ اُن کے مطالبات پر غور کیا جائے گا۔       گور

کھیتوں کی سینچائی نہ ہونے کی وجہ سے فصلیں تباہ

 سرینگر //کھیتوں کی سینچائی کیلئے پانی نہ ملنے کے سبب حدمتارکہ پر واقعہ دھنی سعد پورہ نامی گائوںمیں سینکڑوں کنال اراضی پر پھیلی دھان کی فصل ختم ہو رہی ہے اور پاکستانی زیر انتظام کشمیرسے امسال پانی حاصل کرنے میں انتظامیہ کی جانب سے کوئی بھی کارروائی عمل میں نہیں لائی گئی ۔مقامی لوگوں کا کہنا ہے کہ دو برس قبل لوگوں کو ان مشکلات سے نکالنے کیلئے سرکار نے ایک لفٹ اری گیشن سکیم شروع کی ۔اتنا ہی نہیں  فوج نے سدبھاونا سکیم کے تحت ایک جنریٹر بھی عوام کے نام وقف کیا لیکن صورتحال جوں کی توں ہے اور مقامی آبادی کی فصلیں ایک بار پھر پانی نہ ملنے کی وجہ سے ختم ہورہی ہیں ۔ مقامی زمینداروں نے ریاستی ومرکزی سرکار سے مطالبہ کیا ہے کہ پانی کے حوالے سے ایک فلیگ میٹنگ کرائی جائے تاکہ انہیں کوئی نقصان نہ ہو ۔ایگزیکٹیو انجینئر کرناہ راجندر سنگھ نے کشمیر عظمیٰ کو بتایا کہ سکیم کو فوج کی سدبھاونا سکی

بادل پھٹنے کا شاخسانہ،لولاب میں ماحول افسردہ

کپوارہ// لولاب وادی میں گزشتہ روز بادل پھٹنے کی وجہ سے نصف درجن سے زیادہ یہات متا ثر ہوگئے اور ان علاقوں میں سیلابی ریلے نے کھیت کھلیانو ں میں بھاری پیمانے پر تباہی مچادی ۔طوفانی ہوائو ں اور ژالہ باری سے علاقے میں متعد د ڈھانچے تباہ ہوگئے اور درجنو ں درخت اکھڑ گئے جبکہ بجلی کا نظام بھی تباہ ہوگیا۔طغیانی کی وجہ سے کھیتو ں میں دھان کی فصل اور سبزی کو بھاری نقصان پہنچ چکا ہے ۔اس دوران بادل پھٹنے کے باعث کھودی گاگل میں ایک خاتون شمیمہ بیگم سیلابی ریلے کے ساتھ بہہ گئی اوراپنی جان کھو بیٹھی ۔مقامی لوگو ں کا کہنا ہے کہ وہ کسی کام سے کھیت پر جارہی تھے کہ اس دوران علاقہ میں بادل پھٹ گئے اور بارشو ں کا سلسلہ شروع ہوا ۔مقامی لوگو ں نے شمیہ کو نالہ سے بر آمد کیا اور اسپتال لے جانے کی کوشش کی ۔کھوڈی کے لوگو ں نے کشمیر عظمیٰ کو بتا یا کہ یہا ں سے دو کلو میٹر دورسڑک ہے اور وہ شمیمہ کو وہا ں تک پیدل

پلوامہ میں کئی واٹر سپلائی سکیمیں برسوں سے ٹھپ

پلوامہ // پلوامہ کے کئی دیہات میں برسوں سے بیکار پڑی واٹر سپلائی سکیموں کی وجہ سے جہاں ہزاروں نفوس پینے کے صاف پانی سے محروم ہیں وہیں ان بیکار پڑی سکیموں پر ہر سال لاکھوں روپے خرچ کئے جارہے ہیں۔لوگوں کا الزام ہے کہ منظور نظر ٹھیکیداروں کو فائدہ پہنچانے کی غرض سے خزانہ عامر ہ کو لوٹا جارہا ہے۔پلوامہ کے شاہورہ علاقہ میں تملہ ہال ،زاسو اور دیگر دیہات کو پینے کے صاف پانی کی فراہمی کیلئے اگرچہ کئی مرتبہ پائپ لائن بچھائی گئی تاہم پانی کی سپلائی کبھی بھی یقینی نہیں بن پائی۔مقامی لوگوں کے مطابق گذشتہ 10برسوں کے دوران یہاں 3مرتبہ پائپیں بچھائی گئیں تاہم پانی صرف چند دنوں تک ہی سپلائی ہوا۔لوگوں کا کہنا ہے کہ 4انچ پائپ بچھانے کے بجائے 2انچ پایپ ہی بچھائی جارہی ہے اور پھر کچھ عرصہ گذرنے کے بعد ان پائیپوں کو واپس نکال کر نئے سرے سے ڈالا جارہا ہے اور یہ سلسلہ 10برسوں سے جاری ہے۔اس سلسلے میںایگزیکٹیو