کتاب و سنت کے حوالے سے مسائل کا حل

سوال:۔ ہم نابینا افراد کا حال بہت ہی ابتر اور بہت ہی افسوسناک ہے۔ جن نابینائوں کے والدین زندہ ہیں، اُن کو تو والدین کی پدری شفقت کی بنا پر کچھ نہ کچھ راحت حاصل ہوتی ہےلیکن جن کے والدین گذر گئے اُن کے بھائی بھتیجے وغیرہ کچھ حُسن سلوک کرتے ہیں لیکن کچھ کا حال ناقابل بیان ہے۔ کچھ نا بینا بھائیوں کا حال یہ ہے کہ اُن کوطعنے سننے پڑتے ہیں۔ کچھ کو کھانا تک بھی ٹھیک طرح سے نہیں ملتا۔ کبھی کوئی ہاتھ پکڑنے والا بھی نہیں ہوتا۔ بیمار ہو جائیں تو علاج معالجے کی کوئی سبیل نہیں بنتی۔وراثت میں حصہ بھی ہر ایک کونہیں ملتا۔ اگر کسی کو نکاح کی ضرورت ہو تو یہ بات زبان پر لانی بھی مشکل ہوتی ہے۔ سماج میں بھی ہم کو عزت ملناکجا کبھی اپنے خاندانوں میں بھی ہم کو بوجھ سمجھا جاتا ہے۔ ہمارے لئے روزگار کےکوئی وسائل نہیں نہ حکومت نہ خیراتی ادارے نہ کوئی فورم نہ کوئی این جی او ہماری پُر سان حال ہے۔ ہم میں کچھ نابی

مکہ معظمہ کی اسلامی کانفرنس

  نوٹ :یہ مقالہ ڈاکٹر عبداللطیف الکندی صاحب کا وہ خطاب ہے جو اُنہوں نے مکہ مکرمہ میں 15-16 ؍اگست 2018 ء کو منعقدہ عالمی حج سمپوزیم میں کیا۔ مقالے کی اہمیت کے پیش نظر سمیر سلفی نے اس کا اردو ترجمہ کیا جسے ہدیۂ ناظرین کیا جارہا ہے(مدیر)  کلمات مسنونہ ! امابعد:اس اہم عالمی کانفرنس کے موقع پر جس کاموضوع ـ ـ" حج امن واطمنان وراحت وسکون کا سب سے مشرف ومیمون مقام ووقت وزمان ہے ـ ‘‘۔ کانفرنس کے اہم موضوعات میں ’’عالمی امن وسلامتی کے فروغ میں اسلام اور مسلمانوں کا کردار‘‘ پر روشنی ڈالنے کی ذمہ داری مجھ پر ڈالی گئی ہے۔   عزت مآب دوستو! ہمارا دین دین اسلام ہے جو مادۃ "السلم " سے مشتق ہے ہمارا رب فرماتا ہے :ایمان والو! سلامتی میں پورے کے پورے داخل ہوجاؤ۔(لقرآن 2:( 208 اور پیغمبر رحمت ؐنے دنیا کے بادشاہوں کو یہ کہ

تازہ ترین