امریکہ ایران مخاصمت

خلیجی پانیوں میں امریکی بحری بیڑے کی موجودگی اور لڑاکا طیارو کی فضا میں گھن گرج نے پورے خطے میں خوف کی فضا طاری کر رکھی ہے ۔ ماہرین کے مطابق ذرا سی غفلت یعنی ایک معمولی سی چنگاری پوری دنیا کے امن کو تہ و بالا کر سکتی ہے ۔ ایران امریکہ چپقلش اپنی انتہا کو چھو چکی ہے ۔ ایک طرف امریکہ ایران کو زیر کرنے کیلئے کسی بھی حد تک جانے کو تیار ریتا ہے تو دوسری جانب ایران بھی اپنی میزائل ٹیکنالوجی کے بل بوتے پر امریکہ کے سامنے پوری قوت سے ڈَٹ چکا ہے اور خلیج میں امریکی مفادات ایرانی میزائل سسٹم کی زد میں ہیں۔ اس انتہائی مخدوش صورت حال میں 13جو ن کو امریکی ففتھ فلیٹ کے دو آئل ٹینکرز تیل دھماکوں سے تباہ ہونے کی صورت میں حالات میں مزید سنگینی بڑھ گئی ۔ ناروے خبر رساں ایجنسی کے مطابق فرنٹ الٹیز پر متحدہ عرب امارات کے الفجرہ نامی بندرگاہ سے تیل بھرا گیا تھا ۔ یہ بحری جہاز ناروے کی فرنٹ لائن نامی جہاز ر

ہماری ذہنی کنجوسی!

امریکہ   کی ایک کمپنی ہے، الفابٹ، اپنے ہاں کم ہی لوگوں نے اس کا نام سنا ہے، یہ دنیا کی پانچویں بڑی ٹیکنالوجی کی کمپنی ہے، دنیا بھر میں پھیلے اس کے ملازمین کی تعداد تقریباً 80ہزار ہے، سالانہ منافع12.7 ارب ڈالر ہے جبکہ اثاثوں کی مالیت 197ارب ڈالر ہے، عالمی فہرست میں اس کمپنی کا نمبر52 ہے، اس سے پہلے ایمازون 18اور ایپل11ویں نمبر پر ہیںمگر اس کمپنی کی ایک خاص بات ہے جس کی وجہ سے یہ کمپنی دنیا کی سب سے قیمتی کمپنی ہے۔ خاص بات یہ ہے کہ الفابٹ کمپنی گوگل کی مالک ہے۔ انٹرنیٹ پر ہونے والی کھوج (search) کا تقریباً90 فیصد گوگل کے ذریعے کیا جاتا ہے، آپ نے کسی بھی قسم کی معلومات حاصل کرنا ہو، کوئی تحقیق کرنا ہو یا کسی موضوع کے بارے میں چھان بین کرنا ہو، گوگل سے پوچھ لیں، اس کے پاس معلومات کے خزانے کی کنجی ہے۔ گوگل کا دور دور تک کوئی مقابل نہیں، فیس بک کے ساتھ مل کر گوگل انٹرنیٹ کی نہ صرف

مودی اور مسلمان !

 پارلیمان  کے مرکزی حال میں این ڈی اے کے نومنتخب شدہ ارکان کو مخاطب کرتے ہوئے وزیراعظم نریندر مودی نے کچھ ایسی باتیں کیں جن سے پتہ چلتا ہے کہ ان کو مسلمانوں پر ہونے والی زیادتیوں کا احساس ہوگیا ہے اور وہ مستقبل میں مسلمانوں کو کسی نہ انصافی کے محفوظ رکھنا چاہتے ہیں۔ اگرچہ ایسے الفاظ مودی جی  بزبان قال ادا نہیں کئے ہیں بلکہ انہوں نے ان باتوں کو مختلف پیرایۂ بیان میں ظاہر کیا لیکن مودی کے نئے’’ مسلمان‘‘ بھکتوں اور ہر بات میں بلاوجہ کی روشن خیالی ڈھونڈ کرمسلمانوں کا نقصان کرنے والے دانش و روں نے ان باتوں کا بڑا خوش آئند مطلب لیا اور سڑکوں پر جگہ جگہ ’’مودی مودی‘‘ کے نعرے لگانے والوں کی طرح اپنی تحریروں اور تقریروں میں ’’مودی مودی‘‘ کرنے لگے۔ ہم اور ہماری فکر کی طرح فکر رکھنے والے لوگ وزیر اعظم نریندر

تازہ ترین