تازہ ترین

کشتوار میں انٹرنیٹ سروس بحال، کرفیو میں تین گھنٹوں کی نرمی

سرینگر/کم و بیش ایک ہفتے تک معطل رہنے کے بعد کرفیو زدہ کشتوار قصبہ میں سوموار کو انٹر نیٹ سروس بحال کی گئی۔ حکام نے کہا کہ قصبے میں صورتحال کی بہتری کو مد نظر رکھتے ہوئے آج کرفیو کے اندر تین گھنٹوں کی نرمی کی گئی ۔ واضح رہے کہ قصبہ میں گذشتہ منگل کو آر ایس ایس لیڈر چندر کانت شرما اور اس کے محافظ پر حملے اور دوونوں کی ہلاکت کے بعد قصبے میں حالات کشیدہ ہوئے تھے جس کے بعد وہاں کرفیو نافذ کرنا پڑ اتھا۔ حکام نے کہا کہ آج دن میں بارہ بجے سے تین بجے تک کرفیو میں نرمی کی گئی جس کے دوران کوئی ناخوشگوار واقعہ پیش نہیں آیا۔ ضلع کمشنر کشتوار اے ایس رانا کے مطابق کرفیو میں نرمی کا وقت پرامن طور گذر گیا جس کے دوران بازاروں میں رش دیکھنے کو ملا اور لوگ ضروری چیزیںخریدنے میں مشغول رہے۔  قابل ذکر ہے کہ پولیس نے متعدد افراد کو چندرکانت کی ہلاکت کے کیس کے سلسلے میں حراست میں لے ل

راجوری میں کنٹرول لائن پر ہند۔پاک افواج کے مابین فائرنگ کا تبادلہ

سرینگر/بھارت اور پاکستان کی افواج نے سوموار کو ضلع راجوری میں کنٹرول لائن پر ایک دوسرے کے ٹھکانوں کو نشانہ بناتے ہوئے فائرنگ کا تبادلہ کیا۔ اس کراس ایل او سی فائرنگ کا واقعہ راجوری کے نوشیرا سیکٹر میں پیش آیا۔ دفاعی ذرائع نے کہا کہ پاکستان نے جنگ بندی کی خلاف ورزی عمل میں لاتے ہوئے بھارتی ٹھکانوں پر فائرنگ کی۔ انہوں نے مزید کہا کہ بھارتی فورسز پاکستانی فائرنگ کا'' بھر پور'' جواب دے رہی ہیں۔  

چار ماہ سے زیادہ عرصہ بعد سونا مرگ روڑ ٹریفک کیلئے کھل گیا

سرینگر/دس کلو میٹر لمبا گگن گیر۔سونا مرگ روڑ سوموار کو ساڑھے چار ماہ تک بند رہنے کے بعد ٹریفک کیلئے کھل گیا۔ حکام نے کہا کہ یہ روڑ گذشتہ برس ماہ دسمبر میں برفباری کے بعد بند ہوا تھا۔ حکام کی طرف سے اجازت ملتے ہی آج سیاحوں اور دیگر سواریوں کو لیکر متعدد گاڑیاں سونا مرگ کی طرف روانہ ہوگئیں۔ ایس ڈی ایم کنگن مسرت ہاشم نے مذکورہ روڑ کھلنے کی تصدیق کی ہے۔ انہوں نے کہا کہ سونا مرگ کو بجلی اور پانی کی سپلائی بحال کرنے کا کام جاری ہے۔  

جنوبی کشمیر کے اننت ناگ ضلع میں محبوبہ مفتی کے قافلے پر سنگباری

سرینگر/جنوبی کشمیر میں ضلع اننت ناگ کے بجبہارہ علاقے میں سوموار کو پیپلز ڈیمو کریٹک پارٹی ( پی ڈی پی) کی صدر اور سابق وزیر اعلیٰ محبوبہ مفتی کے قافلے پر سنگباری ہوگئی۔ یہ واقعہ بجبہارہ کے سرہامہ علاقے میں اُس وقت پیش آیا جب محبوبہ کھرم زیارت شریف سے بجبہارہ کی طرف جارہی تھی جہاں اُسے ایک پارٹی تقریب میں حصہ لینا تھا۔ اطلاعات کے مطابق جونہی محبوبہ کے ساتھ جارہا گاڑیوں کا کارواں سرہامہ پہنچا تو اُس کو پتھروں سے نشانہ بنایا گیا۔ حکام نے کہا کہ محبوبہ کو اس حملے میں کوئی گزند نہیں پہنچی تاہم اُس کے کارواں میں شامل ایک گاڑی کو نقصان پہنچا۔ حکام کے مطابق فورسز نے علاقے کو گھیرے میں لے کر محبوبہ کو بہ حفاظت وہاں سے نکال کر بجبہارہ پہنچایا جہاں سابق وزیر اعلیٰ کو ایک پارٹی کنونشن میں حصہ لینا تھا۔ محبوبہ اننت ناگ لوک سبھا نشست کیلئے پی ڈی پی کی اُمیدوار ہے جہاں رواں ماہ کی2

گیلانی کے بڑے بیٹے نعیم کے نام این آئی اے کی تازہ سمن

سرینگر/قومی تحقیقاتی ایجنسی (این آئی اے) نے سوموار کو حریت کانفرنس (گ) کے چیئر مین سید علی گیلانی کے بڑے فرزند نعیم گیلانی کے نام دوسری سمن جاری کی۔ ذرائع کے مطابق ایجنسی نے نعیم کو کہا ہے کہ وہ فنڈنگ کیس کی تحقیقات کے سلسلے میں پوچھ تاچھ کیلئے این آئی اے کے صدر دفتر واقع نئی دلی میں22اپریل کو پیش ہوجائیں ۔ اس سے قبل نعیم گیلانی کے نام پہلی سمن جاری ہوئی تھی جس میں اُن سے9اپریل کو پیش ہونے کیلئے کہا گیا تھا۔ واضح رہے کہ این آئی اے نے گیلانی کے چھوٹے فرزند نسیم گیلانی کو کئی بار پوچھ تاچھ کے مراحل سے گذارا ہے۔  

سرینگر۔لیہہ شاہراہ سے برف ہٹانے کا کام اختتام پذیر:بارڈر روڑس آرگنائزیشن

سرینگر/بارڈر روڑد آرگنائزیشن (بی آر او) نے سوموار کو کہا کہ سرینگر۔لیہہ شاہراہ سے برف ہٹانے کا کام ''پروجیکٹ وجایک'' کے تحت اختتام پذیر ہوا ہے۔ اس پروجیکٹ پر گذشتہ دو ماہ سے کام جاری تھا۔ بی آر او نے یہ بھی کہا کہ اب دراس سے زوجیلا پاس تک سڑک صاف کرنے کی کوششیں جاری ہیں جہاں حالیہ سردیوں میں بے حد برف جمع ہوئی تھی۔ ''وجایک ''پروجیکٹ کے کمانڈر کرنل راجیو لوہانی نے ایک بیان میں کہا کہ یہ پروجیکٹ انتہائی کٹھن تھا لیکن انتھک کوششوں کے بعد اس کو اختتام پذیر کیا گیا ہے اور بی آر او اب اُس مقام تک پہنچ گئی ہے جس کو زیرو پوئینٹ کہا جاتا ہے اور جہاں تودے گر آنے کا خطرہ رہتا ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ اہلکار اور مشینری زوجیلا پاس پر برف ہٹانے کے کام میں کسی وقفے کے بغیر لگے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ زوجیلا پاس پر برف کا ایک انچ ہٹانا بھی ایک چیلنج کی طرح

جنوبی ضلع کولگام میں ایک گائوں کا فورسز محاصرہ اور تلاشی آپریشن

سرینگر/فورسز نے سوموار کی صبح جنوبی ضلع کولگام کے ایک گائوں کو محاصرے میں لیکر گھر گھر تلاشی آپریشن شروع کیا۔ فورسز کی یہ کارروائی بوگام گائوں میں انجام دی جارہی ہے جہاں گھر گھر تلاشی کا کام شروع کیا گیا ہے۔ ذرائع کے مطابق یہ آپریشن فوج، سی آپی ایف اور ایس او جی اہلکاروں نے گائوں میں جنگجوئوں کی موجودگی کی اطلاع کے بعد شروع کیا۔