تازہ ترین

لالو کا بھاجپا اور آر ایس ایس پر نشانہ

پٹنہ// راشٹریہ جنتادل کے سربراہ نے انکم ٹیکس کی کارروائی کو بدلے کی سیاست قرارد یتے ہوئے اقتدار کے غلط استعمال کا الزام لگایا ہے۔ یہی نہیں لالو یادو نے ٹویٹ کرکے بی جے پی اور آر ایس ایس پر بھی نشانہ سادھا ہے۔ خیال رہے کہ سپریم کورٹ سے دھچکا ملنے کے بعد ان 22 ٹھکانوں پر انکم ٹیکس حکام نے 1000 کروڑ روپے کی گمنام جائیداد کے معاملے میں چھاپہ ماری کی تھی۔لالو پرساد یادو نے ٹویٹ کرکے بی جے پی اور آر ایس ایس پر نشانہ سادھا ہے۔ انہوں نے ٹویٹ کرکے کہا کہ بی جے پی اور آر ایس ایس کے لوگوں سنیں، خواہ میری جو بھی صورت حال ہو، لالو تم لوگوں کو دہلی کی کرسی سے اتاردے گا .. میں صاف صاف کہہ رہا ہوں کہ مجھے ڈرانے کی ہمت نہ کرو۔قبل ازیں منگل کو بہار کی سیاست میں اس وقت ہلچل مچ گئی تھی جب لالو پرساد یادو نے ٹویٹ کیا تھا کہ بی جے پی کو نیا اتحاد مبارک ہو۔ لالو ڈرنے والا نہیں ہے۔ جب تک آخری سانس ہے فاشسٹ طا

شیوسینا کا مودی فیسٹ پر طنز

ممبئی// بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی) کی قیادت والی مرکزی حکومت کے 3سال مکمل ہونے پر مودی فیسٹ جشن منانے کے فیصلے پر شیو سینا نے طنز کرتے ہوئے کہا ہے کہ کسان خودکشی کر رہے ہیں، سرحد پر جوانوں کا مارا جانا عروج پر ہے اور ایسے میں بی جے پی کی جشن منانے والے گروپ کو مبارکباد۔ شیو سینا کے ترجمان اخبار 'سامنا کے اداریہ میں لکھا گیا ہے کہ بی جے پی حکومت کے تین سال مکمل ہونے پر ملک میں تمام مشکلات کے باوجود اگر 26 مئی سے جشن منانے والے گروپ نے ملک کا دل پڑھ لیا ہے تو شاید ایسا نہیں ہے۔بادشاہ بھلے ہی جشن منائے لیکن جب تک عوام اس میں شامل نہیں ہوتے جشن پھیکا رہتا ہے۔اس جشن میں کروڑوں روپے خرچ ہوں گے۔ سوچھتا مہم میں بھی کروڑوں روپے خرچ کئے گئے لیکن صفائی ستھرائی نظر آتی ہے کیا۔ گنگا ندی کی صفائی کا خرچیلا کام جاری ہے لیکن لوگوں کے ذہنوں میں سوال ہے کہ گنگا ندی کا پانی صاف ہو رہا ہے یا ملک کی

بھاجپا زحکومت کے 3سال

نئی دہلی//کانگریس نے نریندرمودی حکومت کی 3سالہ کارکردگی کے بلندبانگ دعووں کا مضحکہ اڑاتے ہوئے کہا کہ بی جے پی کی قیادت والی حکومت نے صرف بے روزگاری کے محاذ پر ترقی حاصل کی ہے ۔کل ہند کانگریس کے ترجمان ابھیشیک منوی سنگھوی نے یہاں نامہ نگاروں سے کہا کہ کہاں تو دعوی کیا گیا تھا کہ ہر سال دو کروڑ روزگار فراہم کئے جائیں گے لیکن بنیادی حقیقت یہ ہے کہ لوگ بے روزگار ہوتے جارہے ہیں۔انہوں نے کہا کہ کانگریس کی قیادت والی یوپی اے حکومت کی کارکردگی سے این ڈی اے حکومت کی کارکردگی کا موازنہ کیا جائے ۔ خاص طور پر روزگار فراہم کرنے کے محاذ پر تو موجودہ حکومت کے حق میں نتیجہ صفر نظر آتا ہے ۔انہوں نے دعوی کیا کہ 2009-10میں 8.7لاکھ ،2010-11میں 9لاکھ روزگار کے مواقع پیدا کئے گئے تھے ۔ مودی حکومت قائم ہونے کے بعد 2014-15میں روزگار کے مواقع 1.35لاکھ کی حد تک ہی پیدا کئے جاسکے ۔ڈاکٹر سنگھوی نے کہا کہ مودی حکو

سرکار کی ناکامی کی سزا نوجوان بھگت رہے ہیں

نئی دہلی//کانگریس کے نائب صدر راہل گاندھی نے مرکز پر نوجوانوں کو نظر اندا ز کرنے کا الزام لگاتے ہوئے کہا مودی حکومت کے ترقی کے دعوے کھوکھلے ہیں اور ان کا حقیقت سے کوئی تعلق نہیں ہے ۔ مسٹر گاندھی نے کہا کہ کام کرنے کے بجائے صرف دعوے کرنے کا سب سے زیادہ نقصان ملک کی نوجوان آبادی کو اٹھانا پڑرہا ہے ۔ انہوں نے مودی حکومت پر حملہ کرتے ہوئے ٹوئٹ کیا کہ صرف باتیں کرنے والی حکومت عوام پر بوجھ ہوتی ہے ملک کے نوجوانوں کو اس کا خمیازہ بھگتنا پڑ رہا ہے ۔ انہوں نے کہا سب کا ساتھ سب کا وکاس کی بات کرنے والی مودی حکومت نے 2022تک کسانوں کو اس کی آمدنی دوگنی کرنے کا وعدہ کیا ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ یہ ایک بڑا شعبہ ہے اور ملک کی 47 فی صد آبادی زرعی مزدوروں پر مشتمل ہے ۔یو این آئی