تازہ ترین

سفری تفاصیل چھپانے والوں کیلئے جیل

۔5روز کے اندر راشن کی فراہمی مکمل کی جائے: بصیر احمد خان

26 مارچ 2020 (00 : 01 AM)   
(      )

نیوز ڈیسک
سرینگر//لیفٹینٹ گورنر کے مشیر بصیر احمد خان، جو کہ کشمیر صوبے میں کورونا وائیرس کے پھیلاؤ پر قابو پانے کیلئے کی جا رہی کوششوں کے انچارج بھی ہیں ، نے تمام ڈپٹی کمشنروں کو ہدایت دی ہے کہ وہ پیدہ شدہ صورتحال مدِ نظر رکھتے ہوئے جنگی بنیادوں پر کام کریں ۔ انہوں نے ڈپٹی کمشنروں کو ہدایت دی کہ وہ کورونا وائیرس کو پھیلنے سے روکنے کیلئے قریبی تال میل بنائے رکھیں ۔ مشیر موصوف نے یہ ہدایات مختلف اضلاع کی انتظامیہ کی جانب سے حالات کا نمٹارہ کرنے کیلئے کی گئی تیاریوں کا جائیزہ لینے کے دوران دیں ۔ انہوں نے تمام اضلاع کی انتظامیہ کے افسروں سے آئیسو لیشن میں رکھے گئے مشتبہ افراد کی تفصیلات اور ہسپتالوں و ہوم کورنٹائین میں رکھے گئے افراد کے بارے میں جانکاری طلب کی ۔ مشیر نے ضلع ہسپتالوں اور سکریننگ مراکز کے علاوہ لوگوں کو ضروری اشیاء فراہم کرنے کی سرگرمیوں کا بھی جائیزہ لیا ۔ بصیر احمد خان نے اگلے 21 دن کے مکمل لاک ڈاؤن کو سختی سے لاگو کرنے اور احکامات کی خلاف ورزی کرنے والوں کے خلاف ایف آئی آر درج کرنے کی ہدایت دی ۔ انہوں نے کشمیر آنے والے مسافروں اور بیرون ریاست مزدوروں کی مکمل سکریننگ کے بھی احکامات دئیے ۔ راشن ، رسوئی گیس اور اشیائے ضروریہ کی تقسیم کاری کے تعلق سے ڈپٹی کمشنروں کو ایک منظم لایحہ عمل تیار کرنے کی ہدایت دی گئی تاکہ لوگ ایک دوسرے سے دوری کو بنائے رکھتے ہوئے یہ چیزیں حاصل کر سکیں ۔ بصیر احمد خان نے راشن کی تقسیم کاری کا عمل پانچ روز کے اندر مکمل کرنے کی ہدایت دی ۔ بصیر احمد خان نے ہدایت دی کہ متعلقہ محکموں کو سہولیات اور خدمات کی بلا خلل فراہمی یقینی بنانی چاہئے ۔ انہوں نے ضروری خدمات کو دن رات بجلی سپلائی فراہم کرنے پر بھی زور دیا ۔ ڈپٹی کمشنروں نے ویڈیو کانفرنسنگ کے ذریعے شرکت کی ۔ ضلع ترقیاتی کمشنر سرینگر نے بدھ کو اعلان کیا کہ ضلع میں صارفین کو28مارچ سے اُن کے گھروں کی دہلیز پر راشن فراہم کیا جائے گا اورمحتاجوں و کمزور طبقوں سے وابستہ شہریوں کو بھی اُن کے گھروں تک اشیائے خوردنی کے پیکٹ پہنچائے جائیں گے۔ ڈاکٹر شاہد اقبال چودھری نے سماجی رابطہ گاہ  ٹیوٹر پر تحریر کیا’’ سرینگر میں ایک لاکھ60ہزار کنبوںکو اُن کے گھروں تک راشن پہنچانے کا عمل28مارچ سے سخت حفاظتی انتظامات اور ضوابط کے تحت شروع کیا جائے گا،محکمہ رسدات،زراعت،پولیس کے ساتھ ساتھ ایس آر ٹی سی،سرینگر مونسپل کارپوریشن اور مختلف رضاکار اور مجسٹریٹ اس عمل میں شامل ہونگے،برائے مہربانی گھروں میں ہی رہیں اور زنجیر توڑنے کے پیغام کو پھیلائیں‘‘