تازہ ترین

دفعہ370اور35اے | ریاست کے متنازعہ ہونے کی مستنددلیل:گیلانی

3 اگست 2019 (20 : 11 PM)   
(      )

نیو ڈسک
سرینگر//حریت(گ) نے کہا ہے کہ دفعہ370اور35اے  اگرچہ کھوکھلے ہی ہیں، لیکن ان کی اپنی ایک تاریخ، ایک پہچان اور ریاست کے متنازعہ ہونے کی ایک مستند اور عالمی طور پر تسلیم شدہ دلیل ہے اور اب حکومت اس دستاویز کو ختم کرکے یہاں آبادی کے تناسب کو تبدیل کرنے کا ایک گھناؤنا اور مکروہ کھیل کھیلنے کی تیاریاں کررہی ہے ۔ انہوں نے حکومت کو متنبہ کرتے ہوئے کہا کہ ایسی کسی بھی مہم جوئی کی پوری طاقت سے مزاحمت کی جائے گی۔ایک بیان کے مطابق حریت چیرمین نے کہا کہ خصوصی دفعات کو کھوکھلا اور بے اثر کرنے کے اصل ذمہ دار اور مجرم یہاں کے ہندنواز ہیں۔ انہوں نے ہی جاہ وحشمت کی لالچ میں اِن کی روح کو ختم کرکے رکھ دیا تاکہ اُن کے آقاؤں کے خاکوں میں رنگ بھر کر وہ اپنی وفاؤں کا صلہ حاصل کرتے رہیں۔ لینڈ گرانٹس بل کے مطابق غیر ریاستی لوگوں کو 90سال کے لیے زمین دینے کا قانون انہی شعبدہ بازوں نے بنایا۔ اُن کی بکاؤ قیادت نے علی الاعلان کہہ دیا کہ 370کوئی قرآنی آیت تو نہیں جس کو تبدیل نہیں کیا جاسکتا اور اگر یہ رُکاوٹ ختم ہوگی تو ریاست کی ترقی اور خوشحالی کے دروازے کھل جائیں گے۔ آج یہی لوگ خصوصی پوزیشن کے بچاؤ کے لیے مگرمچھ کے آنسو بہاتے ہیں۔ مرکزی حکومت کو سرزمین کشمیر پر للکارنے کا ڈرامہ رچانے والوں کی لگام تھوڑی سی کیا کَسی گئی کہ پوراخاندان بشمول قانونی ضمیر فروش دہلی کے ’’آستانہ‘‘ پر سجدہ ریز ہوگئے۔