تازہ ترین

مزید خبریں

3 اگست 2019 (00 : 12 AM)   
(      )

نیو ڈسک

کپوارہ میں کتوں کے کاٹنے کے واقعات اور سکول میں گندگی

ریاستی کمیشن برائے تحفظ حقوق خواتین و اطفال نے نوٹس لیا

سرینگر//ریاستی کمیشن برائے تحفظ خواتین و بچہ حقوق نے کپواڑہ ضلع میں پیش آئے دو واقعات کا سوموٹو نوٹس لیتے ہوئے متعلقہ حکام کو ایکشن ٹیکن رِپورٹ پیش کرنے کی ہدایت دی ہے۔اِن دو واقعات میں ترہگام میں آوارہ کتوں نے 6اَفراد کو کاٹا تھا جن میں تین طلاب بھی شامل ہیں ۔یہ بات میڈیا رِپورٹوں کے ذریعے سے 30اور31؍جولائی 2019ء کو سامنے آئی ہے کہ پرائمری سکول پیر محلہ ڈولی پورہ ترہگام میں کلاس روم کافی گندگی کے شکارہے اور طلباء وہاں تعلیم حاصل کرنے کے لئے مجبور ہو رہے ہیں۔معاملے کی سنجیدگی کو مد نظر رکھتے ہوئے کمیشن نے متعلقہ حکام کو ہدایت دی ہے کہ وہ آوارہ کتوں کی بدعت پر قابو کرنے کے لئے لازمی اقدامات کریں اور طلاب کی سلامتی و فلاح کے لئے بھی اقدامات شروع کریں۔
 
 
 

مکیش سنگھ کوآئی جی پی جموں کا اضافی چارج تفویض

جموں //حکومت نے سینئر آئی پی ایس افسر مکیش سنگھ کو انسپکٹر جنرل آف پولیس جموں زون کا اضافی چارج تفویض کیاہے ۔مکیش سنگھ اس وقت انسپکٹر جنرل آف پولیس کرائم جموں وکشمیر ہیں اور انہیں آئی جی پی جموں زون کا اضافی چارج بھی دیاگیاہے ۔
 
 

صحافی نریش کمار کی اہلیہ کو 2لاکھ روپے کا چیک دیاگیا

جموں //جوائنٹ ڈائریکٹر اطلاعات و رابطہ عامہ جموں نریش کمار نے سینئر صحافی ارون کمار گپتا کی اہلیہ کو 2لاکھ روپے کا چیک پیش کیا۔ارون کمار گپتا 19؍ اکتوبر 2017ء کو کرنٹ لگنے سے جان بحق ہوئے تھے۔نریش کمار نے آنجہانی صحافی کی طرف سے سماج میں ادا کئے گئے رول کو اُجاگر کیا۔انہوں نے کہاکہ حکومت میڈیا برادری کی بہبودی کے لئے ہرممکن اقدامات کرنے کی وعدہ بند ہے۔اس موقعہ پر ڈپٹی ڈائریکٹر اطلاعات ( پی آر ) میناکشی وید ، ڈپٹی ڈائریکٹر اطلاعات ہیڈ کوارٹر ڈاکٹر ریحانہ اختر بجلی اور کئی دیگر افسران بھی موجود تھے۔
 
 

شوکت اعجاز بٹ نے ترقیاتی کمشنر کولگام کا عہدہ سنبھالا 

کولگام//شوکت احمد بٹ نے ضلع ترقیاتی کمشنر کولگام کا عہدہ سنبھالا ۔ اس موقعہ پر ضلع انتظامیہ کے افسران نے اُن کا گرمجوشی کے ساتھ استقبال کیا ۔ شوکت اعجاز دوسری بار ترقیاتی کمشنر کلگام کی ذمہ داریاں سنبھال رہے ہیں ۔ ضلع انتظامیہ کی طرف سے منعقدہ ایک سادہ مگر پُر وقار تقریب کے دوران رخصت ہو رہے ترقیاتی کمشنر ڈاکٹر شمیم احمد وانی کو شاندار الوداعیہ دیا گیا ۔ تقریب میں ایس ایس پی کلگام ، اے ڈی ڈی سی ، اے سی آر اور اے سی ڈی کے علاوہ تمام ضلع اور پولیس افسران موجود تھے ۔ 
 
 
 

مودی سے ڈاکٹر فاروق کی ملاقات گنجلک: وکیل

سرینگر//پیپلزکانفرنس کے سینئرنائب صدر عبدالغنی وکیل نے نیشنل کانفرنس صدر ڈاکٹر فاروق عبداللہ کی قیادت میں وفد کی وزیر اعظم نریندری مودی سے ملاقات کرنے پر تنقید کی ہے۔ وکیل نے رد عمل اظہار کرتے ہوئے کہا کہ وزیر اعظم سے ملنا ٹھیک ہے مگر ڈاکٹر فاروق عبداللہ یہ بتائیں کہ وہ اجتماعی کوششیں کہاں گئیں جن کا وہ اور پی ڈی پی صدر محبوبہ مفتی 35Aکے تحفظ کے حوالے سے دعویٰ کرتے اور ڈھنڈورا پیٹتے تھے۔ انہوں نے پوچھا کہ کہیں یہ میٹنگ نیشنل کانفرنس کی لیڈر شپ خود کو قانونی شکنجے سے بچنے کے لئے تو نہیں کررہی ہے ؟ چاہئے تو یہ تھا کہ فاروق عبداللہ پہلے محبوبہ مفتی کی طرف سے آل پارٹیز میٹنگ بلانے کے درخواست پر عمل کرتے اور ایک مشترکہ لائحہ عمل 35Aکے تحفظ کے حوالے سے اختیار کرتے مگر ایسا نہیں ہوا، جس سے مختلف خدشات کی عکاسی ہورہی ہے۔وکیل نے اس بات پر بھی حیرانگی کا اظہار کیا کہ کل تک فاروق عبداللہ اور عمر عبداللہ وادی کے حالات ابتر جتلا تے تھے لیکن میٹنگ کے بعد یہ حالات کیسے بہتر ہوگئے۔ وکیل نے نیشنل کانفرنس لیڈر شپ پر زور دیا کہ وہ عوام کے سامنے اور آل پاٹیزکے سامنے اپنی پوزیشن واضح کریں کیونکہ آل پارٹیز نے ان کو 35A کے تحفظ کے حوالے سے اجتماعی کوششوں کے لئے پوری حمائت کا اعلان کیا تھا۔
 
 

۔10ڈی ایس پیز کے تبادلے 

جموں //سرکار نے دس ڈی وائی ایس پیز کے تبادلے عمل میں لائے ہیں ۔اس سلسلے میں جاری ہونے والے حکمنامہ کے مطابق ڈی وائی ایس پی آرمڈ پولیس آٹھویں بٹالین محمد عثمان کو تبدیل کرکے ڈی وائی ایس پی پی سی سرینگر تعینات کیاگیاہے جبکہ ڈی وائی ایس پی آرمڈ پولیس آٹھویں بٹالین عبدالغفور کو ڈی وائی ایس پی پی سی بانڈی پور بھیجاگیاہے ۔اسی طرح سے ڈی وائی ایس پی ایس ڈی آر ایف سیکنڈ بٹالین پرپکار سنگھ کو ڈی وائی ایس پی پی سی جموں ،ایس ڈی پی او گاندھی نگر جموں ڈاکٹر ثانیہ وانی کو ڈی وائی ایس پی آئی آر پندرہویں بٹالین ،ڈی وائی ایس پی کرائم برانچ جموں پشکر ناتھ ٹیکو کو ڈی وائی ایس پی پی سی ڈوڈہ ،ڈی وائی ایس پی سنٹرل سٹورز جموں رام سنگھ کو ایس ڈی پی او گاندھی نگر جموں ،ڈی وائی ایس پی آئی آر پندرہویں بٹالین جیتن جی متو کو ڈی وائی ایس پی ساتویں بٹالین ،ڈی وائی ایس پی سی آئی ڈی بٹوت پون کمار کو ڈی وائی ایس پی سنٹرل سٹورز جموں اور ڈی وائی ایس پی ایس ایس جی سجاد احمد کو ایس ڈی پی او تھنہ منڈی جبکہ ایس ڈی پی او تھنہ منڈی محمد صدیق کو ڈی وائی ایس پی سی آئی دی بٹوت تعینات کیاگیاہے ۔
 
 

سیکریٹری کواپریٹیو ریوینو محکمہ کا اضافہ چارج سنبھالیں گے

سری نگر //حکومت نے ایک حکمنامہ جاری کیا ہے جس میںکہا گیا ہے کہ سیکرٹری کواپریٹیو عبدالمجید بٹ سیکریٹری ریوینو کے عہدے کا اضافی چارج سنبھالیں گے۔جی اے ڈی کی طرف سے جاری کئے گئے حکمنامے میں کہا گیاہے کہ سیکرٹری کواپریٹیو ، قبائلی امور اور سیکرٹری ریوینو محکمہ کا اضافی چارج بھی سنبھالیں گے۔
 
 

تحریک حریت رکن کی گرفتاری

صحرائی کی مذمت 

سرینگر//تحریک حریت چیئرمین محمد اشرف صحرائی نے تنظیم کے رُکن عاشق حسین نارچور اننت ناگ (اسلام آباد )کو کل شام گھر سے گرفتار کرکے صدر تھانہ اسلام آباد میں بند رکھنے کی مذمت کرتے ہوئے اس کی گرفتار ی کو بلاجواز قرار دیا۔ صحرائی نے کہاکہ عاشق حسین چند ماہ قبل ہی طویل مدت کے بعد رہا ہوکر گھریلو کام کاج میں مصروف تھا۔صحرائی نے کہاکہ عاشق حسین نے کوئی ایسی غیرقانونی سرگرمی انجام نہیں دی تھی جس کو بنیاد بناکر اس کو گرفتار کرنا ضروری تھا۔ صحرائی نے عاشق حسین نارچور اور دیگر سیاسی قیدیوں کی رہائی کا مطالبہ کیا۔ 
 
 
 

شکیل بخشی پر قاتلانہ حملہ کی مذمت 

سرینگر//محاذآزادی کے سرپرست اعلی محمد اعظم انقلابی ،صدر سید الطاف اندرابی،جنرل سیکریٹری محمد الطاف کلو اور ترجمان اعلیٰ محمد یوسف گلکار نے اسلامک سٹوڈنٹس لیگ کے سرپرست شکیل احمد بخشی پر نامعلوم افراد کی طرف سے قاتلانہ حملے کی پرزور مذمت کی ہے۔ انہوںنے کہا کہ اس قسم کی حرکتوں سے مرعوب نہیں ہونگے ۔انہوںنے کہا کہ محاذآزادی حصول مقصد کیلئے اپنی پرامن جدوجہد جاری رکھیں گے اور محبوسین کی رہائی کا مطالبہ کرتی ہے۔ 
 
 
 

وادی میں لیگل میٹرالوجی کی کارروائیاں

۔563 دوکانداروں اور تاجروں سے6.5لاکھ روپے جرمانہ وصول 

سرینگر//لیگل میٹرولاجی محکمہ کی مختلف ٹیموں نے شہر سرینگر اور وادی کے دیگر اضلاع میں ناجائیز منافع خوروں ، ذخیرہ اندوزوں اور ملاوٹی اشیاء فروخت کرنے والوں کے خلاف گذشتہ ماہ کے دوران 563 معاملات درج کئے ۔ اُن کے خلاف قانونی کاروائی عمل میں لائی گئی اور اُن سے مجموعی طور پر 6.5 لاکھ روپے کا جرمانہ وصول کیا گیا ۔ محکمہ کو صارفین کی طرف سے 66 شکایات موصول ہوئی تھیں جن میں 63 شکایات کو نمٹایا گیا۔ ایل ایم ڈی کے مطابق وادی کے طول و عرض میں 5803 دکانوں اور کاروباری اداروں کا معائینہ کیا گیا اور ان میں سے قصور وار پائے گئے دکانداروں کے خلاف ضابطے کے تحت کاروائی عمل میں لائی گئی ۔ ادھر محکمہ کے بیان میں کہا گیا ہے کہ صارفین فون نمبر 0194-2490390 پر اپنی جائیز شکایات درج کرا سکتے ہیں ۔ 
 
 
 

موجودہ حالات تشویشناک: نیشنل کانفرنس

عارف بلوچ

اننت ناگ //نیشنل کانفرنس کے سرکردہ رکن نشتر حُسین بٹ نے شاہ آباد بالا کادورہ کرکے مقامی لوگوں کو درپیش مسائل پر تبادلہ خیال کیا ۔اُنہوں نے محبوب العالم زیارت ژوھن پر حاضری دی اور ریاست کی سالمیت کے لئے خصوصی دعا مانگی ۔انہوںنے وادی کے موجودہ حالات پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے مرکزی قیادت سے اپیل کی کہ وہ کوئی بھی ایسا قدم اُٹھانے سے اجتناب کریں جس سے ریاست میں افراتفری کا ماحول پیدا ہو ۔اُنہوں نے کہاکہ اگر دفعہ370اور35Aکے ساتھ کسی قسم کی چھیڑ چھاڑ کی گئی تو  ریاست میں حالات بد سے بدترین ہوسکتے ہیں۔ 
 
 
 
 

سی آئی آئی کا وفد گورنر سے ملاقی 

سرینگر//کنفیڈریشن آف انڈین انڈسٹری کے ایک وفد نے اس کے چئیر مین سمیر گپتا کی سربراہی میں یہاں راج بھون میں گورنر ستیہ پال ملک کے ساتھ ملاقات کی ۔ اُن کے ہمراہ شمالی خطے میں علاقائی کمیٹی برائے ٹورازم اینڈ ہاسپٹیلٹی کے چئیر مین کے بی کاچرو بھی تھے ۔ اس دوران انہوں نے جموں کشمیر انوسٹر سمٹ ۔ 2019 جو امسال اکتوبر میں منعقد ہونے والا ہے ،کے تعلق سے اپنی تجاویز گورنر کے سامنے رکھی۔ گورنر نے اس موقعہ پر کہا کہ سمٹ کے دوران ریاست کی تاجر برادری کو دیگر ریاستوں کے تاجروں کے ساتھ باہمی تبادلہ خیال کرنے کا بہترین موقعہ دستیاب ہو گا اور اس قدم سے یہاں کی تجارت اور صنعت کاری کو فروغ ملے گا ۔ 
 
 
 

روڈ سیفٹی فنڈ ایکشن پلان ۔2019-20 ء منظور 

سری نگر //فائنانشل کمشنر خزانہ ارون کمار مہتا نے روڈ سیفٹی فنڈ ایکشن پلان برائے سال 2019-20 ء کو حتمی شکل دینے کے لئے فنڈ منیجمنٹ کمیٹی کی میٹنگ کی صدارت کی۔میٹنگ میں ریاست بھر میں روڈ سیفٹی اقدامات کے تحت 26.55 کروڑ روپے کے تصرف کو یقینی بنانے سے متعلق ایکشن پلان پر تبادلہ خیال کیا گیا۔میٹنگ میں پرنسپل سیکرٹری ٹرانسپور ٹ محکمہ اصغر حسن سامون، ٹرانسپورٹ کمشنر جے اینڈ کے ایس پی وید ، آئی جی پی ٹریفک جے اینڈ کے آلوک کمار ، ڈی جی بجٹ محمد یعقوب یتو ، آر ٹی او کشمیر اکرام اللہ ٹاک، ایڈیشنل سیکرٹری روڈ سیفٹی رومیش کے بھٹ ، ایڈیشنل سیکرٹری داخلہ خالد مجید اور کئی دیگر اَفسران بھی موجود تھے۔کمیٹی نے مختلف روڈ سیفٹی آلات خریدنے کیلئے 16.70کروڑ روپے ٹرانسپورٹ کمشنر کے اختیار میں رکھے۔جبکہ 6.34کروڑ روپے آئی جی ٹریفک کے اختیار میں رکھے گئے تاکہ لازمی روڈ سیفٹی آلات خرید ے جاسکیں۔ٹرانسپورٹ کمشنر جموں وکشمیر ایس پی وید نے میٹنگ میں بتایا کہ 110 رائیل انفیلڈ بائیک محکمہ کی طرف سے خریدے جائیں گے تاکہ ریاست میں ٹریفک نظامت میں مزید بہتری لائی جاسکے۔اس موقعہ پر بتایا گیا کہ آئی ڈی ٹی آر کی طرز پر ریاست میں ڈرائیورنگ انسٹی چیوٹ کھولے جائیں گے ۔علاوہ ازیں سکولوں اور کالجوں میں ٹریفک قوانین کے بارے میں بیداری پیدا کرنے کیلئے ایک ہزار روڈ سیفٹی کلب قائم کئے گئے ہیں۔
 
 
 

سہ طلاق قانون | سپریم کورٹ اور دلی عدالت عالیہ میں چیلینج 

نئی دہلی// نئے قانون جس کے تحت مسلمانوں میں تین طلاق کوتین برس کیلئے قابل سزاجرم قراردیاگیاہے ،کو سپریم کورٹ اور دہلی ہائی کورٹ میں چیلنج کیاگیاہے ۔سپریم کورٹ میںکیرالہ کی مسلم تنظیم نے عرضی دائر کی ہے جبکہ دہلی ہائی کورٹ میں ایک وکیل نے عرضی دائر کی ہے جس میں الزام لگایا گیا ہے کہ مسلم خواتین ( تحفظ حقوق) قانون2019مسلم شوہروں کے بنیادی حقوق کی پامالی ہے ۔ سمستھ کیرالہ جمعیت علماء نامی سنی مسلمانوں کی تنظیم اوردہلی کے ایک وکیل شاہد علی نے دعویٰ کیا ہے کہ یہ قانون آئین کی دفعہ14,، 15اور21 کے برعکس ہے اور اِسے کالعدم قراردیا جانا چاہیے۔دونوں عرضیاں صدر رام ناتھ کوند کی طرف سے اس نئے قانون کو منظوری دیئے جانے کے ایک دن بعد دائر کی گئی ۔سمستھ کیرالہ جمعیت علماء تنظیم جس کادعویٰ ہے کہ وہ مسلمانوں کی بڑی تنظیم ہے ،نے کہا ہے کہ یہ قانون خاص مسلمانوں کیلئے ہے اور اس کا مقصد تین طلاق کو ختم کرنا نہیں بلکہ مسلمان خاوندوں کو سزادینا ہے ۔اس نئے قانون کی رو سے تین طلاق دینے والے شوہر کو تین برس کی سزادی جاسکتی ہے اور یہ سیکشن 7کے تحت ناقابل ضمانت ہے ۔دہلی ہائی کورٹ میں دائر عرضی میں کہاگیا ہے کہ نئے قانون نے تین طلاق کو جرم بنایا ہے اور اس کی تین سال کی سزا مقرر کی گئی ہے جس سے خاوند اور بیوی کے درمیان مفاہمت کے تمام دروازے بند کئے گئے ہیں ۔
 
 
 

کشمیر میں خوف پیداکرنے کی کیا وجہ ؟تاریگامی 

وزیراعظم نے پارلیمنٹ میں خاموش کیوںاختیار کی

سرینگر //وادی میں پیرا ملٹری فورسز کے مزید 25 ہزار اہلکاروں کی تعیناتی اور ایئر فورس کو ہائی الرٹ پر رہنے کی ہدایت کے بیچ محکمہ داخلہ کی طرف سے یاتریوں اور سیاحوں کو فوری واپسی کرنے کے حکمنامہ سی پی آئی ایم کے سینئر رہنما محمد یوسف تاریگامی نے کہاکہ وزیر اعظم نریند رمودی کیوں خاموش ہیں اور وہ کیوں کشمیر کے حوالے سے ان معاملات پر پارلیمنٹ پر نہیں بولتے ۔ایک بیان میں تاریگامی نے کہاکہ تاریخ میں پہلی مرتبہ یاتریوں کو یاترا چھوڑنے پر مجبور کیاگیاہے جس کی یہاں کوئی مثال نہیں ملتی ۔ان کاکہناتھاکہ یہ حکمنامہ غیر فطری ہے اور پچھلے 30 سال میں تب بھی سیاحوں اور یاتریوں کو منع نہیں کیاگیا جب ملی ٹینسی عروج پر تھی لیکن سرکار اتنی بڑی تعداد میں سیکورٹی فورسز کی تعیناتی کے باوجود یاترا کے احسن طریقہ سے اہتمام میں بے بس کیوں ہوئی ۔انہوں نے کہاکہ اس سے مقامی لوگوں کے ساتھ ساتھ یاتریوں اور سیاحوں میں زبردست افراتفری اور بے چینی پیدا ہوئی ہے اور کیوں ایساحکمنامہ جاری کرنے کی ضرورت پڑی ہے ۔ان کاکہناتھاکہ اضافی اہلکاروں کی تعیناتی اور ایئر فورس کو ہائی الرٹ پر رکھنے کی کیوں ضرورت ہے ۔ان کاکہناتھاکہ یاترا احسن طریقہ سے چل رہی ہے اور اس برس ریکارڈ یاتریوں نے درشن کئے اور یہ بھی کہاجارہاہے کہ کشمیر میں صورتحال میں بہتری آرہی ہے ۔ ان کاکہناتھاکہ حال ہی میں گورنر نے دفعہ 35اے کی تنسیخ کی افواہوں کو بھی بھی مسترد کردیا جس کے بعد کیوں ایسے اقدامات کرنے کی ضرورت پڑی ہے ؟۔تاریگامی نے کہاکہ پارلیمنٹ کا سیشن چل رہاہے اور کیوں وزیر اعظم خاموش ہیں اورکیوں حکومت ملک کو اندھیرے میں رکھ رہی ہے ۔انہوں نے کہاکہ حکومت کو ملک کو اعتماد میں لیناچاہئے اور وزیر اعظم کو پارلیمنٹ میں بیان دیناچاہئے ۔ ان کاکہناتھاکہ عید کو دس روز باقی رہ گئے ہیں اور اس طرح کی بے چینی عید کے تہوار کو متاثر کرسکتی ہے ۔
 
 

یاترا کوبند کرنااور سیاحوں کیلئے ایڈوائزری تشویشناک:سی پی آئی ایم

سرینگر//کمیونسٹ پارٹی آف انڈیا(مارکسسٹ) کے سیکریٹری جی این ملک نے امرناتھ یاتریوں اور سیاحوں کو جتنی جلد ممکن ہو ،کشمیر چھوڑ کر چلے جانے کی حکومت کی صلاح کو بے مثال قراردیتے ہوئے کہا کہ اس صورتحال نے یاتریوں اور سیاحوں میں ڈرا ورخوف پیدا کیا گیا ۔امرناتھ یاترا دہائیوں سے ہوتی آئی ہے اور ملی ٹینسی کے عروج میں بھی اس طرح بیچ میں یاتراکو کبھی نہیں روکا گیا جیساکہ اب کی بار کیاگیا۔حکومت کی اس طرح کی صلاح جس کی ماضی میں کوئی نظیر نہیں ملتی ہے،سے یاتریوں ،سیاحوں اور ان کے گھروالوں میں خوف وتشویش پیدا ہوا ہے۔ حفاظتی اہلکاروں کی بھاری تعداد میں تعیناتی کے باوجود اچانک حکومت نے یاتریوں کو واپس چلے جانے کو کہا ہے ۔کیا حکومت  بجائے ایڈوائزری جاری کرنے کے یاترا کو جاری نہیں رکھ سکتی تھی؟اس حکم سے یاتریوں ،سیاحوں اور عام لوگوں میں زبردست غیر یقینی پیداہوئی ہے ۔
 
 
 

پیر پنچال اور چناب خطوں میں فورسز کی اضافی تعیناتی

۔.1990کے بعد پہلی مرتبہ بی ایس ایف بھدرواہ میں داخل 

سید امجد شاہ 

جموں //جموں کے خطہ چناب اور خطہ پیر پنچال میں پیرا ملٹری فورسز کی تازہ تعیناتی پر مقامی لوگوں میں زبردست خوف اور بے چینی پائی جانے لگی ہے ۔ذرائع کاکہناہے کہ دونوں خطوں کے لوگ دفعہ 35اے کی تنسیخ اور ریاست کی تقسیم کے خدشات سے فکر مند ہیں ۔ایک افسر نے نام مخفی رکھنے کی شرط پر بتایاکہ بھدرواہ میں 1990کے بعد پہلی مرتبہ بی ایس ایف کی دو کمپنیاں وارد ہوئی ہیں جنہیں گورنمنٹ ہائراسکینڈری سکول بھدرواہ کی عمارت میں ٹھہرایاگیاہے ۔ذرائع نے بتایاکہ بھدرواہ میں چار کنکریٹ بنکر تعمیرکئے گئے ہیں اورایسے مزید کئی بنکروں کی تعمیر ہوگی ۔کشمیرعظمیٰ سے بات کرتے ہوئے انجمن اسلامیہ بھدرواہ کے صدر خیرات حسین فراش نے بتایاکہ پورا بھدرواہ خوف میں جی رہاہے اور کئی جگہوں پر بنکر تعمیر کئے جارہے ہیں جبکہ فورسز کی تعیناتی کا سلسلہ جاری ہے جس سے یہ خدشہ پیدا ہوتاہے کہ کچھ غلط ہونے جارہاہے ۔انہوں نے کہاکہ اس حوالے سے بھی ضلع انتظامیہ بھی خاموش ہے جس سے عوام میں زیادہ شکوک پائے جارہے ہیں ۔ذرائع نے بتایاکہ بھدرواہ میں مساجداور آئمہ کی تفصیل جمع کی گئی ہے ۔بانہال میں بھی صورتحال مختلف نہیں ہے ۔مقامی شہری سجاد احمد نے بتایاکہ وہ خوف میں مبتلا ہیں کیونکہ ان کے بچے جموں میں زیر تعلیم ہیں اور افواہوں کا بازار سرگرم ہے ۔وہیں کشتواڑ میں بھی پیراملٹری فورسز کی تعیناتی ہوئی ہے جبکہ کچھ کمپنیاں راستے میں ہیں ۔اس حوالے سے بات کرتے ہوئے ڈپٹی کمشنر ڈوڈہ ڈاکٹر ساگر ڈی ڈوئیفوڈ نے بتایاکہ یہ وہی پرانی فورس ہے جو انتخابات میں تھی ۔دریں اثناء راجوری اور پونچھ میں بھی پیرا ملٹری فورسز کی تازہ تعیناتی ہوئی ہے اور مقامی لوگوں نے بتایاکہ انہوں نے گزشتہ رات فورسز کی نقل و حرکت دیکھی ۔
 
 
 

جموں بار کے فیصلے کیخلاف ممبران کا احتجاج 

۔2سینئر وکلاء کی رکنیت بحالی نہ ہونے پر اجتماعی استعفے کا انتباہ 

سید امجد شاہ 

جموں //بار ایسو سی ایشن جموں کے دو سینئر وکلاء کو دفعہ 35اے کی حمایت کرنے پر بار کی بنیادی رکنیت سے معطل کرنے فیصلے کو مسترد کرتے وکلاء نے پرامن احتجاج کرنے کافیصلہ لیاہے ۔ وکلاء کاکہناہے کہ اگر سینئر وکلاء کی رکنیت بحال نہ کی گئی تو وہ اجتماعی طور پر بار کی ممبر شپ سے مستعفی ہوجائیں گے ۔بڑی تعداد میں وکلاء نے ہائی کورٹ کی کینٹین میں جمع ہوکر اس حوالے سے تبادلہ خیال کیا ۔اجلاس کی صدارت کرنے والے ایڈووکیٹ جمیل کاظمی نے کہاکہ اگر بار نے اپنا سیاسی ایجنڈا اسی طرح سے جاری رکھاتو وہ اجتماعی طور پر مستعفی ہوجائیں گے ۔انہوں نے کہاکہ دو سینئر وکلاء کی معطلی کافیصلہ فوری طور پر واپس لیاجائے نہیں تو وکلاء سڑکوں پر نکل آئیں گے ۔کاظمی کاکہناتھاکہ یہ ضروری ہے کہ اس لمحے بار ایسو سی ایشن کے سابق صدر ایڈوکیٹ اے وی گپتا اور سابق ایڈیشنل ایڈووکیٹ جنرل ایس سی گپتا کے ساتھ ہمدردی کا اظہار کیاجائے جنہوں نے ریاست کو حاصل خصوصی تشخص کی وکالت کی اوربار کے فیصلے کو سیاسی نوعیت کا قرار دیا۔انہوں نے کہاکہ آج سے ہم نے پرامن طورپر احتجاج کر نے کافیصلہ لیاہے اور 3اگست کو وکلاء ساڑھے دس بجے سیاہ کپڑوں میں ملبوس ہوکر ہائی کورٹ کمپلیکس میں جمع ہوں گے ۔انہوں نے صوبہ بھر کی بار تنظیموں سے یہ اپیل کی کہ وہ بھی سینئر وکلاء کی حمایت میں پرامن احتجاج کریں ۔انہوں نے کہاکہ بار ایسوسی ایشن میں کوئی بھی شخص اپنے سیاسی آقائو ں کی خوشنودی کیلئے سیاسی نوعیت کے فیصلہ نہیں کرسکتااور بار کے تمام ممبران متحد رہ کر ایسی کوششوں کو ناکام بنائیں گے ۔اس موقعہ پر بولتے ہوئے ایڈوکیٹ پون کنڈل نے کہاکہ بار کا فیصلہ آزادی اظہار رائے پر قدغن ہے اور اگر یہی ایجنڈا چلتارہاتو وہ بار ایسو سی ایشن سے منسلک نہیں رہنا چاہیں گے۔ایڈووکیٹ اشوک بسوترہ نے بھی اجتماعی استعفیٰ پر زور دیتے ہوئے کہاکہ سینئر وکلاء کی بحالی نہ ہوئی تو استعفیٰ دیئے جائیں گے اور بار ممبران فرقہ وارانہ ایجنڈے کو کامیاب نہیں ہونے دیں گے جس کے سیاسی مقاصد ہیں ۔نوجوان وکیل سپریا سنگھ چوہان نے کہاکہ آزادی اظہار رائے جیسے بنیادی حق کو چھینا نہیں جاسکتاہے ۔ایڈوکیٹ انور چوہدری کاکہناتھاکہ یہ ایک غیر آئینی فیصلہ ہے اوروکلاء کی رکنیت ختم نہیں کی جاسکتی ہے ۔وہیں ایڈووکیٹ حسین احمد فاروقی نے کہاکہ بار ایسو سی ایشن کے چند ممبران فرقہ وارانہ خطوط پر آگے بڑھ رہے ہیں جو سنگین مسئلہ ہے ۔