تازہ ترین

اے پی ڈی پی کا خاموش احتجاج | لاپتہ افراد کی بازیابی کا مطالبہ دہرایا

10 جولائی 2019 (25 : 11 PM)   
(      )

نیو ڈسک
سرینگر//وادی کشمیر میں انیس سو نوے کی دہائی میں شروع ہوئی مسلح شورش کے دوران مبینہ طور پر فورسز کے ہاتھوں لاپتہ ہوئے افراد کی بازیابی کے لئے محو جدوجہد تنظیم ایسوسی ایشن آف پیرنٹس آف ڈس اپیئرڈ پرسنز (اے پی ڈی پی) کی طرف سے بدھ کویہاں پرتاب پارک میں ماہانہ احتجاجی دھرنے کا اہتمام ہوا۔احتجاجی دھرنے میں درجنوں مرد وخواتین جن میں بیشتر عمر رسیدہ تھے، اپنے لخت ہائے جگر کی تصویریں اور پلے کارڈس ہاتھوں میں اٹھارکھے تھے اور ان کے مایوس چہروں پر لاچاری اور بے بسی کی چادر ان کی اندورنی کربناک کیفیت بیان کررہی تھی۔اس موقع پر اے پی ڈی پی کی چیئرپرسن پروینہ آہنگر نے میڈیا کے ساتھ بات کرتے ہوئے کہا کہ ہم یہ احتجاج گزشتہ تیس برسوں سے کررہے ہیں اور ہم خاموش نہیں بیٹھیں گے۔ انہوں نے کہا کہ عدالت میں بھی ہمیں انصاف نہیں ملتا ہے۔کشمیر میں انسانی حقوق کی مبینہ پامالیوں کے حوالے سے اقوام متحدہ کی طرف سے جاری حالیہ رپورٹ کے بارے میں پروینہ آہنگر نے کہا: 'یو این او کا پچھلے سال بھی انسانی حقوق کی پامالیوں کے حوالے سے ایک رپورٹ آیا تھا اور اس سال بھی آیا ہے ہم اس کا خیر مقدم کرتے ہیں، یو این او کے ورکنگ گروپ کو یہاں آنے کی اجازت نہیں دی جاتی ہے'۔آہنگر نے کہا کہ یہاں جبری گمشدگیاں بند ہونی چاہئے۔(یو این آئی)