وزیر خزانہ کے خود کو ’ٹیچر‘بتانے پر اپوزیشن کا واک آؤٹ

11 جولائی 2019 (00 : 01 AM)   
(      )

 نئی دہلی// لوک سبھا میں مالی سال 2019-20 کے بجٹ پر بحث کا جواب دینے کے لئے میں بدھ کو وزیر خزانہ نرملا سیتا رمن کی طرف سے خود کو 'ٹیچر' سے تشبیہ دیئے جانے پر اپوزیشن اراکین بھڑک اٹھے اور حزب اقتدار کے ارکان کے ساتھ ان کی معمولی کہا سنی بھی ہوئی۔بعد میں وزیر خزانہ کا جواب مکمل ہونے سے پہلے ہی ان کے بیان اور بجٹ سے متعلق کچھ دیگر مسائل پرانہوں نے ایوان سے واک آؤٹ کیا۔ محترمہ سیتا رمن نے بجٹ میں مجموعی گھریلو مصنوعات (جی ڈی پی) کے اعداد و شمار اور اقتصادی سروے میں جاری اعداد و شمار میں بے ضابطگیوں پر اپوزیشن کے خدشات کو مسترد کرتے ہوئے کہا کہ حساب جوڑنے کے لئے الگ الگ بنیاد منتخب کرنے کی وجہ سے ایسا ہوا ہے ۔ اس کے بعد وزیر خزانہ نے کہا کہ " جیسے ایک 'ٹیچر' بچوں کو سمجھاتي ہیں، اسی طرح انہوں نے اپنی بات ایوان کے تمام اراکین کو سمجھانے کی کوشش کی ہے اور اگر اس کے بعد بھی کسی رکن کے ذہن میں شک و شبہ رہ گیا ہو تو وہ کمرہ نمبر 36 (پارلیمنٹ میں وزیر خزانہ کا چیمبر) میں آکر مجھ سے وضاحت لے سکتے ہیں"۔  ان کے اتنا کہتے ہی کانگریس ، ترنمول اور کچھ دیگر اپوزیشن جماعتوں کے ممبران اپنی اپنی جگہ پر کھڑے ہو گئے ۔ ترنمول کانگریس کے سوگت رائے نے کہا کہ یہاں تمام اراکین برابر ہیں اور کوئی 'ٹیچر' یا طالب علم نہیں ہے ۔ اس پر حکمراں پارٹی کے کچھ اراکین بھی بولنے لگے ۔ شور و غل کے درمیان کانگریس کے ایک رکن نے اپنا اعتراض پیش کرتے ہوئے کہا کہ وزیر خزانہ کو جو بھی کہنا ہے وہ ایوان میں کہیں۔ وضاحت کے لئے کمرہ نمبر 36 میں جانے کی کیا ضرورت ہے ؟ اسپیکر اوم برلا نے ارکان کو پرسکون کرنے کی کوشش کی۔ بالآخر جب وہ اپنی جگہ پر کھڑے ہوئے تب مشتعل اراکین خاموش ہوئے ۔ مسٹر برلا نے کہا کہ پوری کارروائی کو دیکھنے کے بعد جیسا مناسب ہوگا وہ ویسی کارروائی کریں گے ۔کچھ دیر بعد محترمہ سیتا رمن نے مہنگائی کے اعداد و شمار کے بارے میں بات کرتے ہوئے اپوزیشن پر طنز کیا کہ "اب میں وہ اعدادوشمار بتانے جا رہی ہوں جس سے پتہ چل جائے گا کہ لوگوں نے کنا:ں کیوں مسترد کردیا"۔ اس پر اپوزیشن رکن پھر ایک بار ہنگامہ کرنے لگے ۔ وہ 'کسان مخالف بجٹ واپس لو'، 'غریب مخالف بجٹ واپس لو' اور 'مودی حکومت ہائے ہائے ' کے نعرے لگانے لگے ۔ اپوزیشن کی نعرے بازی کے درمیان ہی وزیر خزانہ نے بتایا کہ جب مودی حکومت اقتدار میں آئی تھی تو خوردہ مہنگائی 5.9 فیصد پر تھی جو اب گھٹ کر تین فیصد رہ گئی ہے ۔ خوراک، خوردہ مہنگائی مالی سال 2014-15 میں 6.4 فیصد تھی جو مارچ 2019 میں گھٹ کر 3.0 فیصد پر آ گئی ہے ۔ انہوں نے کہا کہ "(بحث کے دوران) اپوزیشن نے ہمیشہ اعدادوشمار دینے کی مانگ کی۔ اب جب میں اعدادوشمار پیش کر رہی ہوں تو وہ سننے کے لئے تیار نہیں ہیں"۔ اس کے بعد کانگریس اور کچھ دیگر اپوزیشن جماعتوں کے رکن ایوان سے باہر چلے گئے ۔ ترنمول کے رکن فوری ایوان سے باہر نہیں گئے ۔ وزیر خزانہ کا جواب ختم ہونے کے بعد ترنمول کے سدیپ بندوپادھیائے نے کہا کہ وہ اس جواب سے مطمئن نہیں ہیں۔ ساتھ ہی انہوں نے پٹرول-ڈیزل پر دو -دو روپے اضافی ٹیکس لگائے جانے کا مسئلہ بھی اٹھایا اور کہا کہ ان کی پارٹی بھی ایوان سے واک آؤٹ کر رہی ہے ۔ اس کے بعد ترنمول کے تمام اراکین بھی ایوان سے باہر چلے گئے ۔یو این آئی
 

تازہ ترین