برہان کی تیسری برسی پر وادی میں معمولات متاثر

بانہال میں بھی ہڑتال،انٹر نیٹ سروس کی رفتار کم، ریل سروس بند

9 جولائی 2019 (00 : 01 AM)   
(      )

بلال فرقانی
سرینگر// حزب المجاہدین کمانڈر برہان وانی کی تیسری برسی کے موقع پر پیر کے روز وادی میں ہڑتال کے باعث معمولات زندگی درہم وبرہم ہو کر رہ گئے۔حکام نے پائین شہر کے کچھ علاقوں میں بندشیں عائد کیں۔اس دوران جنوبی کشمیر میں انٹرنیٹ منقطع کیا گیا،جبکہ سرینگر سمیت وسطی کشمیر میں اس کی رفتارکم کی گئی۔سیکورٹی کے پیش نظر ریل سروس بھی معطل رہی۔دریں اثناء حکام نے احتیاطی تدابیر کے تحت یاترا ایک دن کیلئے معطل کردی۔پیر کو جموں سے کسی بھی یاتری گاڑی کوسرینگر کی طرف  جانے کی اجازت نہیں دی گئی اور نہ ہی سونہ مرگ اور پہلگام سے جموں کی طرف کسی گاڑی کو جانے دیا گیا۔

ہڑتال و بندشیں

علیحدگی جماعتوں کی طرف سے برہان وانی کی تیسری برسی کے موقعہ پر دی گئی کال کے پیش نظر وادی کے جنوب و شمال میں مکمل ہڑتال رہی،جبکہ کاروباری ادارے،تجارتی مرکز مقفل رہے،اور سڑکوں پر ٹریفک کی نقل و حمل بھی مکمل طور پر بند تھی۔ نامہ نگار سید اعجاز کے مطابق کسی بھی پرگراوم کو ناکام بنانے کے لئے سوموار کو ترال جانے والے تمام راستوں ستورہ روڑ،ترال،کہلیل،ترال، ڈاڈسرہ،ترال نودل ،بٹنور،پنگلش ،سمیت  راستوں کو سیل کیا گیا تھا۔فورسز نے عید گاہ ترال، جہاں مزار شہدا اور برہان کا مقبرہ بھی ہے، کو  اپنی تحویل میں لیا اور کسی کو یہاں جانے کی اجازت نہیں دی جا رہی تھی۔ ادھر فورسز نے برہان وانی کے آبائی گھر شریف آباد میں بھی پہرا بٹھایا تھا تاکہ کوئی پروگرام منعقد نہ ہو سکے ۔پلوامہ کے علاوہ  پانپور،نیوہ،راجپورہ، کھریو،لدھو،اونتی پورہ سمیت دیگر علاقوں میں بھی مکمل ہڑتال رہی ۔اسی طرح شوپیان میں بھی ہڑتال رہی۔وسطی کشمیر کے ضلع بڈگام اور گاندربل میں بھی مکمل ہڑتال کے بیچ بازار اور کاروباری ادارے بند رہیں۔کولگام میں بھی مکمل ہڑتال رہی۔ضلع کے صدر مقامات دمحال ہانجی پورہ،کھڈونی،ریڈونی،فرصل،محمد پورہ،یاری پورہ اور دیگر علاقوں میں بھی مکمل ہڑتال سے عام زندگی کی رفتار تھم گئی۔اننت ناگ قصبہ کے ساتھ ساتھ اچھ بل ،دیالگام ،مٹن ،کوکرناگ ،ڈورو ،ویری ناگ اور قاضی گنڈ علاقوں میں پولیس ،سی آر پی ایف و فوجی اہلکاروں کی تعیناتی عمل میں لائی گئی تھی ۔ شمالی کشمیر کے سوپور اور دیگر قصبوں و تحصیل ہیڈکوارٹروں میں بھی علیحدگی پسند راہنماؤں کی اپیل پر مکمل ہڑتال کی گئی۔ بارہمولہ سے بھی مکمل ہڑتال کی اطلاعات موصول ہوئیں جہاں تمام تجارتی اور دیگر سرگرمیاں معطل رہیں۔ قصبے میں اولڈ ٹاون کو سیول لائنز کے ساتھ جوڑنے والے پلوں پر سیکورٹی فورسز کی اضافی نفری تعینات کردی گئی ہے۔ سوپور،پٹن،ٹنگمرگ،شیری،رفیع آباد،سنگرامہ اور دیگر علاقوں میں بھی مکمل ہڑتال کی وجہ سے عام زندگی کا کاروبار تھم گیا۔ضلع بانڈی پورہ میں مکمل طور پر ہڑتال رہی ، سکول کالج بند رہے۔ بانڈی پورہ قصبہ، کلوسہ، سنرونی، پاپچھن، اجس، بانیاری، نائندکھے، شاہ گنڈ، شادی پورہ ،سمبل حاجن ، کہنوسہ، اشٹنگو، آلوسہ میں ہڑتال رہی ہے ۔کپوارہ سے اشرف چراغ نے اطلاع دی کہ ضلع کے لنگیٹ ،کرالہ گنڈ ،ہندوارہ ،چوگل ،کولنگام ،لال پورہ،سوگام ،کرالہ پورہ ،ترہگام اور ویلگام علاقوں میں مکمل ہڑتال کی وجہ سے عام زندگی مفلوج ہو کر رہ گئی ۔برہان  وانی کی تیسری برسی پر وادی کشمیر کی طرح ضلع رام بن، تحصیل بانہال ،تحصیل کھڑی اور سب ڈویثر ن بانہال کے دیگر مارکیٹوں میں مکمل ہڑتال کی گئی جس کی وجہ سے معمول کی زندگی تھم کر رہ گئی۔ ہڑتال کی وجہ سے شاہراہ پر واقع قصبہ بانہال ، چریل ، ٹھٹھاڑ ، نوگام اور کھڑی آرْپنچلہ کے قصبوں اور مارکیٹوں میں تمام دکانیں اور کاروباری ادارے بند رہے  اور سڑکوں سے مقامی ٹریفک بھی مکمل طور پر غائب تھا۔
 

تازہ ترین