تازہ ترین

وزیرداخلہ کابیان حقیقت سے بعید:سوز

دفعہ370عارضی ہے توریاست کاالحاق بھی عارضی؛ناصروانی /راتھر

30 جون 2019 (00 : 01 AM)   
(      )

نیو ڈسک
سرینگر//پردیش کانگریس کے سینئررہنمااور سابق مرکزی وزیر پروفیسر سیف الدین سوز اور نیشنل کانفرنس کے سینئررہنمائوں عبدالرحیم راتھر اور ناصر اسلم وانی نے مرکزی وزیرداخلہ امیت شاہ کے آئین ہندکی دفعہ370کوعارضی دفعہ قراردیئے جانے پرشدیدردعمل کااظہار کرتے ہوئے کہا کہ وزیرداخلہ کے اس بیان سے صاف ظاہر ہوتا ہے کہ وہ حقیقت کوسمجھنے سے مکر رہے ہیں۔ ایک بیان میں  پروفیسرسیف الدین سوزنے مرکزی وزیرداخلہ کو یاددلایا کہ آئین ہندکے تحت دفعہ370نہ صرف عارضی ہے بلکہ عبوری نوعیت کی مد ہے ،مگر اب اس کی حقیقت دائمی ہوگئی ہے ۔سوزنے اپنے بیان میں مرکزی ویزرداخلہ امیت شاہ سے سوال کیا کہ آخر کیوں گزشتہ 70برسوں میں مرکز اس دفعہ کو منسوخ نہیں کرسکا؟انہوں نے کہا کہ ریاست کے لوگ مرکزی سرکار کودفعہ370ہٹانے کی کبھی اجازت نہیں دیں گے ۔سوزنے مزیدکہا کہ جب کشمیر کا مسئلہ حل ہوجائے گا توآئین ہند کی یہ دفعہ خود بخود زائدالمعیاد ہوجائے گی ۔ ادھرنیشنل کانفرنس کے صوبائی صدر ناصر اسلم وانی اور سینئر لیڈر عبدالرحیم راتھر نے رفیع آباد میں پارٹی کنونشنوں سے اپنے خطاب میں وزیر داخلہ کے اُس بیان کو مسترد کیا جس میں موصوف نے کہا ہے کہ دفعہ370ضروری نہیں بلکہ عارضی ہے۔ انہوں نے کہا کہ اگردفعہ370عارضی ہے تو پھر جموںوکشمیر اور ملک کا الحاق بھی عارضی ہے۔ پارٹی عہدیداروں اور کارکنوں کو نیشنل کانفرنس اور قیادت کی مضبوطی کیلئے کام کرنے پر زور دیتے ہوئے کہا کہ ہماری جماعت اُسی صورت میں ریاست کی خصوصی پوزیشن ، دفعہ370اور 35اے کا دفاع کرسکتی ہے جب اسے عوام کا بھر پور اشتراک اور تعاون حاصل ہوگا۔ اس کیلئے ضروری ہے کہ ہم عوام کیساتھ قریبی رابطہ رکھیں اور آپسی صفوں کو مضبوط کریں۔ دونوں لیڈران نے کہا کہ اتحاد و اتفاق وقت کی اہم ضرورت ہے کیونکہ ہماری ریاست کیخلاف سازشوں کے جال بُنے جارہے ہیں ۔ لیڈران نے کہا کہ اس وقت وادی میں نئی پارٹیاں اور نئے اتحاد بنائے جارہے ہیںجن کا واحد مقصد یہاں کے عوام کی آواز کو تقسیم کرکے کمزور کرنا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ریاست کی خصوصی پوزیشن کا دفاع کرنے ریاست کے تینوں خطوں کے لوگوں کو متحد ہوکر لڑنا ہوگا۔ انہوں نے کہا کہ جو لوگ ان دفعات کو ختم کرنے کی باتیں کرتے ہیں وہ ملک کی سالمیت اور آزادی کو خطرے میں ڈالنے کی کوشش کررہے ہیں۔