گول کی اندرونی رابطہ سڑکوں پر تارکول کے کام میں غیر معیاری میٹریل کا الزام

سٹیٹ ویجی لینس آرگنائزیشن اور تحقیقاتی ایجنسیوں سے تحقیقات کی مانگ

24 جون 2019 (00 : 01 AM)   
(      )

زاہد بشیر
 گول// ضلع رام بن کے ضلعی ہیڈکوارٹر سے 52کلو میٹر کی دوری پر واقع سب ڈویژن گول کی اندرونی سڑکوں پر تارکول بچھانے میں بھاری مقدار میں خرد بردکئے جانے کا الزام لگاتے ہوئے مقامی لوگوں نے سٹیٹ ویجی لینس اور تحقیقاتی ایجنسیوں سے تحقیقات کی مانگ کی ۔ مقامی لوگوں کا کہنا ہے کہ گول میں بہت ساری اندرونی سڑکیں جن میں پولٹری فارم سے جرال محلہ ، پولٹری فارم سے موئلہ ،زیارت روڈ ، گول بائی پاس روڈ، زیرو پوائنٹ داچھن سے ششل روڈ، گول بس اسٹینڈ سے سلبلہ روڈ جن پر محکمہ آر اینڈ بھی سب ڈویژن گول نے ٹھیکیدار کے ساتھ ساز باز کر کے سڑکوں پر معمولی مقدار میں میکڈم بچھاکر منظر عام پرلایا اور خزانہ عامرہ سے جلد از جلد بلیں بھی نکالیں ۔ان کاکہناتھاکہ اگر چہ موقعہ پر محکمہ آر اینڈ بی کے آفیسران سے بھی اس سلسلے میں پوچھا گیا تھا لیکن انہوں نے اس کو تسلی بخش قرا ر دیا اور تین سال تک اس میں کوئی بھی خرابی پیدا ہونے سے انکار کیا لیکن چھ ماہ کے بعد ہی تمام سڑکوں پر میکڈم اور تار کول اسی فیصد اکھڑ گیا ہے اور سڑکیں کھنڈرات کی شکلیں اختیار کر گئیں ۔ اس سلسلے میں لوگوں نے کئی مرتبہ انتظامیہ اور اعلیٰ حکام سے بھی مطالبہ کیا لیکن یہاں کی طرف کسی نے کوئی توجہ نہیں دی ۔ مقامی لوگوں کا کہنا ہے کہ تعمیرات کے دوران ٹھیکیدار اور محکمہ آر اینڈ بی کے ملازمین نے رات کے دوران کہیں سے باجری غیر معیاری میٹریل ملاکر مذکورہ روڈ پر بچھا دیا اور لوگوں نے منع بھی کیا لیکن اس کے با وجود محکمہ اپنا کام چلاتا رہا ہے ۔لوگوں کاکہناہے کہ یہ میکڈم اور تار کول محکمہ ہمیشہ سردیوں کے ایام میں کرتا ہے ۔ ان سڑکوں پر جو میکڈم لایا جاتا تھا وہ وادی کشمیر کے اننت ناگ سے لایا گیا اور اس کو گول پہنچنے تک تقریباً آٹھ گھنٹے لگتے تھے تب تک درجہ حرارت جو ہونا چاہئے تھا وہ ختم ہو جاتا تھا ۔ یہاں یہ بات قابل غور ہے کہ گول میں پی ڈی پی کی حکومت کے دوران محکمہ تعمیرات عامہ کے وزیر نعیم اختر نے دورہ کیا تھا اور خود یہاں پولٹری فارم سے موئلہ روڈ کے ذریعے سے ڈگری کالج کا جائزہ لیا اور اسی دوران یہاں پر اس سڑک پر میکڈم پڑ رہا تھا اور اس میکڈم کو نا تسلی بخش قرار دیا تھا وہیں گول ارناس کے ایم ایل اے اعجاز احمد خان نے بھی گول سلبلہ روڈ پر دورہ کیا تھا اور یہاں پر بچھائے گئے تارکول کو نا تسلی بخش قرار دیا گیا لیکن اس کے با وجود یہ کام زیادہ دیر تک ٹک نہیں پایا۔ آج کل یہ سڑکیں کھڈرات کی شکلیں اختیار کر گئیں ۔ مقامی لوگوں نے سٹیٹ ویجی لینس آرگنائزیشن اور دیگر تحقیقاتی ایجنسیوں سے اپیل کی ہے کہ تمام سڑکوں پر ہوئے کاموں کی تحقیقات کروائی جائے ۔
 

تازہ ترین