تازہ ترین

بھاجپا کی سٹیٹ ورکنگ کمیٹی کا اجلاس

اسمبلی انتخابات اور سیاسی صورتحال پر تبادلہ خیال

16 جون 2019 (00 : 01 AM)   
(      )

یوگیش سگوترہ
جموں //جموں وکشمیر بھارتیہ جنتاپارٹی نے سنیچر کے روز ریاست میں متوقع اسمبلی انتخابات اور اس کے بعد حکومت سازی کے معاملات پر تبادلہ خیال کیا ۔پارٹی کی سٹیٹ ورکنگ کمیٹی کی میٹنگ تنظیم کے قومی نائب صدر و جموں وکشمیر انچارج اویناش رائے کھنہ کی صدارت میں منعقد ہوئی جس دوران تمام معاملات بشمول ریاست کی موجودہ سیاسی صورتحال پر تفصیل سے تبادلہ خیال کیا گیا ۔اس موقعہ پر بتایاگیاکہ ریاست میں بھاجپا کی ممبر شپ ایک ملین تک پہنچ چکی ہے ۔پارٹی کے ایک سینئر لیڈر نے بتایاکہ بی جے پی کے ریاست میں 9لاکھ سے زائد سرگرم ممبر ہیں جن میں سے 4.80لاکھ جموں سے اندراج ہیں جبکہ 3لاکھ کشمیر اور بقیہ لداخ خطے سے ۔ انہوں نے بتایاکہ پارٹی کی طرف سے یکم جولائی سے وسیع پیمانے پر ممبر شپ مہم شروع کی جارہی ہے تاکہ مزید ممبران کو شامل کیاجائے ۔وہیں اویناش رائے کھنہ نے ذرائع ابلاغ سے بات کرتے ہوئے کہاکہ ریاست میں جب بھی اسمبلی چنائو منعقد ہوں ،بی جے پی اگلی حکومت بنائے گی اور وزیر اعلیٰ بھی بی جے پی کا ہی ہوگا۔ان کاکہناتھا’’ہم نے 2014میں 44پلس کا نعرہ دیاتھا لیکن 2019لوک سبھا انتخابات میں یہ نعرہ ایک حقیقت بن گیا ،پارٹی نے جموں کی نشستوں پر سبقت حاصل کی اور ساتھ ہی کشمیر میں اوڑی اور ترال سے بھی ، جبکہ لداخ میں سویپ کیا ‘‘۔انہوں نے کہاکہ پارٹی آئندہ اسمبلی انتخابات کے بعد ریاست میں بغیر کسی پارٹی کی مدد کے حکومت تشکیل دے گی ۔انہوں نے دیگر سیاسی جماعتوں کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہاکہ پی ڈی پی تباہی کے راستے پر ہے ،نیشنل کانفرنس کی کشتی بھی ہچکولے کھارہے ہیں اور وہ کشمیر کے چند اضلاع میں ہی موجود ہے جبکہ کانگریس کا ریاست میں کوئی وجود نہیں اس لئے کوئی بھی طاقت بی جے پی کو جیت سے روک نہیں سکتی ۔