تازہ ترین

فوجی سکول میں 422طلباء میں سے 219 کو مفت تعلیم فراہم

معیاری تعلیم کیلئے باقاعدگی سے ویڈیو کانفرنسنگ ودیگر سہولیات بھی دستیاب کی جارہی ہیں

10 جون 2019 (00 : 01 AM)   
(      )

سمت بھارگو
 
راجوری//دیہی علاقوں کے بچوں کو معیاری تعلیم فراہم کرنے کے سلسلہ میں سرحدی ضلع پونچھ کے سرنکوٹ علا قہ میں فوج کی جانب سے قائم کردہ سکول میں بی پی ایل زمرے سے تعلق رکھنے والے 219طلباء کو مفت معیاری تعلیم فراہم کی جارہی ہیں جبکہ اس سکول میں معیاری تعلیم کیلئے باقاعدگی سے ویڈیو کانفرنسنگ کو آٹھویں کلاسز تک ضروری بنایا گیا ہے تاکہ آرمی گڈ ویل سکول میں زیر تعلیم بچوں کو جدید تعلیم سے آراستہ کیاجاسکے ۔فوج کی جانب سے 25مئی 2003کو سرنکوٹ کے پوٹھہ علاقہ میں آرمی گڈ ویل پبلک سکول کی بنیاد رکھی گئی جس کے بعد ابھی تک متعدد دیہی علا قوں کے کل5046 بچوں نے تعلیم حاصل کی ۔سکول کی وائس پرنسپل پونم مانی نے بتایا کہ اس وقت سکول میں 420طلباء زیر تعلیم ہیں جن میں 171لڑکے اور 249لڑکیاں شامل ہیں ۔انہوں نے بتایا کہ اس وقت سکول میں غریب طبقہ کے 219طلباء کو مفت تعلیم فراہم کی جارہی ہیں ۔موصوفہ نے مزید بتایا کہ سرنکوٹ کے ہل کاکا اور مڑھ گائوں کے دو درجن کے قریب طلباء کو نہ صرف سکول میں بغیر فیس لئے تعلیم فراہم کی جارہی ہے بلکہ فوج کی جانب سے ان کو مفت ٹرانسپورٹ کی سہولیات بھی فراہم کی گئی ہیں ۔انہوں نے بتا یا کہ ان دونوں گائوں میں رہائش پذیر لوگوں نے ملی ٹینسی کو ختم کرنے کیلئے اہم رول ادا کیا تھا جس کے بعد ان علا قوں کے بچوں کو معیادی تعلیم کیساتھ ساتھ دیگر سہولیات فراہم کرنے میں فوج ایک اہم رول ادا کر رہی ہے ۔انہوں نے کہاکہ ملی ٹینسی کے دوران مذکورہ علاقوں میں فوج کی جانب سے 64ملی ٹینٹوں کو ہلاک کیا گیا تھا جوکہ ریاستی تاریخ میں سب سے زیادہ ہیں ۔وائس پرنسپل نے مزید بتایا کہ آرمی پبلک گڈویل سکول میں جلد ہی سمارٹ کلاسوں کا اہتمام کیا جارہاہے تاکہ طلباء کو جدید اور معیاری تعلیم فراہم کی جاسکے ۔سکول پرنسپل مرید حسین نے کشمیر عظمیٰ کو بتایا کہ سکول میں شریک نصاب سرگرمیوں کیلئے تمام انتظامات کئے گئے ہیں جبکہ طلباء کی سہولیات کیلئے سپورٹس ،ڈانسنگ روم ،لائبریری ودیگر سہولیات موجود ہیں جبکہ مذکورہ سکول میں سے والی بال کے دو کھلاڑیوں نے قومی سطح پر بھی اپنی صلاحیتوں کا مظاہرہ کیا ہے ۔ساتویں جماعت کی طالب علم ایضا اکرم نے بتایا کہ وہ مذکورہ سکول میں مفت تعلیم حاصل کر رہی ہیں جبکہ اسی طرح ہل کاکا کے غلام عباس نے بتایا کہ فوج کی جانب سے شروع کردہ سرگرمیوں سے اس کی زندگی ہی بد ل گئی ہے ۔ہاڑی مڑوٹ کے اعثمان غنی جس کے والد معذور ہیں ،نے بتایا کہ آرمی گڈویل سکول انتظامیہ کی جانب سے اس کو مفت تعلیم فراہم کی جارہی ہیں تاہم ان کے بغیر ان کی تعلیم ممکن نہیں تھی ۔