تازہ ترین

دفعہ35اےآئینی غلطی اور دفعہ370نفرت کی دیوار، دونوں دفعات کو جانا ہے: رویندر رینہ

27 مئی 2019 (00 : 01 AM)   
(      )

یو این آئی
جموں// بھارتیہ جنتا پارٹی جموں وکشمیر یونٹ کے صدر رویندر رینہ نے ریاست کو خصوصی پوزیشن عطا کرنے والی آئین ہند کی دفعہ 35 اے اور دفعہ 370 کو بالترتیب 'آئینی غلطی' اور 'نفرت کی دیوار' قرار دیتے ہوئے ان دفعات کو فوری طور پر ہٹانے کا مطالبہ کیا ہے۔انہوں نے کہا کہ سابقہ این ڈی اے حکومت نے وادی کشمیر میں آپریشن آل آوٹ شروع کیا اور فورسز کو کھلی چھوٹ دی جس کے نتیجے میں ملک میں 'راشٹرواد' پیدا ہوا اور نریندر مودی لوگوں کے چہیتے لیڈر بن گئے۔بی جے پی کے شعلہ بیان ریاستی صدر نے اتوار کے روز یہاں ترکوٹہ نگر میں واقع بی جے پی دفتر پر پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا 'دفعہ370 اور دفعہ 35 اے نے جموں وکشمیر کے ساتھ بہت زیادہ ناانصافی کی ہے۔ دفعہ 370 کی وجہ سے ریاست میں علاحدگی پسندی کی سوچ پیدا ہوئی ہے۔ اس نے جموں وکشمیر کا بہت بڑا نقصان کیا ہے۔ سو ایسے سیاسی خاندان ہوں گے جنہوں نے اس دفعہ کے نام پر جموں وکشمیر کو لوٹ لوٹ کر کھایا ہے۔ لوگوں کے پیسے سے دنیا کے مختلف کونوں میں پراپرٹی بنائی ہے'۔انہوں نے کہا 'دفعہ 370 آئین کے اندر ایک عارضی دفعہ ہے۔ یہ کبھی ہمارا مستقل قانون نہیں رہا ہے۔ اس میں توسیع کرکے یہاں تک پہنچایا گیا ہے۔ ساتھ ہی ساتھ دفعہ 35 اے ایک آئینی غلطی ہے۔ جب بھی کوئی قانون بنتا ہے تو وہ لوک سبھا، راج سبھا اور پھر صدر جمہوریہ کی منظوری کے بعد نافذ ہوجاتا ہے۔ دفعہ 35 اے کو چوری چھپے قانون کی کتاب میں شامل کیا گیا ہے۔ جبکہ دفعہ 370 نفرت کی دیوار ہے۔ دونوں دفعات کو جانا ہے۔ ہم چاہتے ہیں کہ ان دفعات کو فی الفور ختم کیا جائے'۔رویندر رینہ نے کہا کہ کشمیر میں آپریشن آل آوٹ اور فوج کو کھلی چھوٹ دینے سے متعلق پالیسیوں کی وجہ سے ملک میں راشٹرواد مضبوط ہوا۔ان کا کہنا تھا 'جموں وکشمیر میں آپریشن آل آوٹ کی بدولت تمام جنگجو تنظیمیں کے کمانڈروں کو ہلاک کیا گیا۔ فوج کو کھلی چھوٹ دی گئی۔ نریندر مودی کی ان پالیسیوں کے چلتے ہندوستان میں راشٹرواد مضبوط ہوا۔ نتیجتاً نریندر مودی ملک کے لوگوں کے چہیتے لیڈر بن گئے'۔