تازہ ترین

وکلاء کیلئے میڈی ایشن سے متعلق تین روزہ ریفریشر ورکشاپ

ورکشاپ کے دوسرے دِن ثالثی کے فوائد اُجاگر کئے گئے

10 فروری 2019 (00 : 01 AM)   
(      )

نیو ڈسک
جموں//ریاستی ہائی کورٹ کی میڈی ایشن اینڈ کنسی لیشن کمیٹی اور جموں وکشمیر حکومت کے اشتراک سے منعقد کئے گئے تین روزہ ورکشاپ کے دوسرے روز یہاں مختلف معاملات کو حل کرانے کے لئے ثالثی کے عمل کو مکمل طور سے بروئے کار لانے کے لئے سیر حاصل بحث مباحثوں کا انعقاد کیا گیا۔ دوسرے دن چار اجلاس منعقد ہوئے جن کی صدارت جسٹس سندھو شرما، جسٹس راجیش بندل، جسٹس سنجے کمار گپتا اور جسٹس رشید علی ڈار نے کی اور ان اجلاسوں کے دوران مختلف موضوعات کو اُجاگر کیا گیا۔خاص طور سے معاملات کو نمٹانے کے دوران متعلقہ فریقوں، وکلاء اور درمیانہ دار کے رول کی عکاسی کی گئی۔معروف مقررین نے اس بات پر تفصیل سے روشنی ڈالی کی کہ کس طرح افہام و تفہیم کے ذریعے میڈیشن کے عمل کوبروئے کار لاتے ہوئے حل کیا جاسکتا ہے۔اس دوران میڈی ایشن کے قواعد کو اجاگر کرتے ہوئے کہا گیا کہ اس عمل سے کم خرچے پر موثر اور تیز تر بنیادو ں پر باعزت طریقے سے معاملات کو حل کیا جاسکتا ہے۔اس موقعہ پر مزید بتایا گیا کہ تربیت یافتہ میڈییٹر مصالحت کاری کے جدید طور طریقوں کو بروئے کار لاکر معاملات کا موزوں حل نکال سکتے ہیں۔مقررین نے کہا کہ اس طرح کے ورکشاپوں سے معاملات کو نمٹانے کے تعلق سے میڈیشن کو ایک متبادل ذریعے کے طور پر استعمال میں لانے میں مدد ملے گی۔قومی اور بین الاقوامی شہرت یافتہ جن ریسورس پرسنز نے  اجلاس میں شرکت کی اُن میں جے پی سنگھ، سدھانشو بترا، سادھنا راما چندرن، وینا رالی، امیتا سہگل اور انوج اگروال شامل ہیں۔