تازہ ترین

لل دیدہسپتال کے باہر سڑک کی حالت ناگفتہ بہہ

ایمبولنسوںاور مریضوں کو لانے والی گاڑیوں کو مشکلات کا سامنا

10 فروری 2019 (00 : 01 AM)   
(   عکاسی: امان فاروق    )

سٹی رپورٹر
سرینگر// لل دید ہسپتال کے مین گیٹ کے باہر سڑک پر گہرے کھڈ ہونے کی وجہ سے جہاں ٹریفک کی آوجاہی میں خلل پڑ رہا ہے وہیں یہاں دور دراز علاقوں سے مریضوں کو لانے والی گاڑیوں کو ہسپتال احاطے میں داخل ہونے میں پریشانیوں کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے ۔ہسپتال کے باہر سڑک کی حالت ایسی ہے کہ یہاں حادثات پیش آنے کا بھی احتمال ہے ۔کئی ڈرائیوں نے کشمیر عظمیٰ کو بتایا کہ مریضوں کو لانے کے دوران ہسپتال گیٹ پر پہنچتے ہی انہیں یہاں کئی منٹوں تک رکنا پڑتا ہے کیونکہ سڑک کے بیچوں بیچ گہرے کھڈ موجود ہونے کی وجہ سے یہاں گاڑیاں رک جاتی ہیں اور پھر کبھی کبھی ٹریفک جام بھی لگ جاتا ہے ۔اس کے ساتھ ساتھ ہسپتال گیٹ کے سامنے ہی گاڑیوں کیلئے یو ٹرن ( U Turn) ہے ۔اور جب یہاں نجی اور پبلک ٹرانسپورٹ گاڑیاں جن میں سومو ،تویرا اور دیگرمیٹا ڈار شامل ہیں ،سڑک کی دوسری اور گھوم جاتی ہیں تو چند سکینڈوں کے ساتھ ہی یہاں ٹریفک جام ہوجا تا ہے جس کی وجہ سے گاڑیاں درماندہ ہوجاتی ہیں اور مریضوں کو لانے والی نجی گاڑیاں اور ایمبولنس بھی ٹریفک جام میں پھنس جاتی ہیں اور ہسپتال آنے والے مریضوں کے ساتھ ساتھ دکانداروں اور راہ گیروں کو پریشانی ہوتی ہے ۔ہسپتال احاطے میں پارک گاڑیوں کے ڈرائیوروں نے بتایا کہ شہر میں جہاں بیشتر مقامات پر سڑکوں کی حالت انتہائی خراب ہے وہیں شہر کے بڑے زنانہ ہسپتال کے باہر سڑک کی جو حالت ہے ،وہ ناگفتہ بہہ ہے اور خواتین مریضوں کے ساتھ ساتھ یہاں سے گذرنے والی گاڑیوں میں سوار افراد کو زہنی کوفت کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔ہسپتال کی ایک سینئر ڈاکٹر نے بتایا کہ لل دید ہسپتال میں چوبیسوں گھنٹے مریضوں کا رش رہتا ہے اور یہاں جو مریض لائے جاتے ہیں وہ انتہائی حساس ہوتے ہیں لہذا ہسپتال کے باہر اچھی سڑک کا ہونا انتہائی لازمی ہے ۔لوگوں نے محکمہ آر اینڈ سے مطالبہ کیا ہے کہ ہسپتال کے باہر خراب پڑی سڑک کی فوری طور مرمت کی جائے اور یہاں پر یو ٹرن ( U Turn)کا انتخاب ہسپتال سے دور کسی اور جگہ کیا جائے ۔