تازہ ترین

بھارت اور نیوزی لینڈکے درمیان آج سیریز کا فیصلہ کن میچ کھیلا جائیگا

10 فروری 2019 (00 : 01 AM)   
(      )

یو این آئی
ھیملٹن/ دوسرے مقابلے میں گیند اور بلے سے شاندار کارکردگی کا مظاہرہ کر کے فتح حاصل کرنے کے بعد اپنا حوصلہ بلند کر چکی ٹیم انڈیا میزبان نیوزی لینڈ کے خلاف اتوار کو ہونے والے تیسرے اور فیصلہ کن ٹوئنٹی -20 میچ میں غیر ملکی زمین پر سیریز جیت کا چوکا لگانے کے مضبوط ارادے سے اترے گی۔ہندستان نے آسٹریلیا اور نیوزی لینڈ کے اکثر دوروں پر شاندار کارکردگی کا مظاہرہ کیا ہے ۔ ہندستان نے آسٹریلیا میں ٹوئنٹی -20 سیریز 1-1 سے ڈرا کھیلی اور ٹیسٹ سیریز 2-1 سے اور ون ڈے سیریز 2-1 سے جیت لی۔ ہندستان نے اس کے بعد نیوزی لینڈ کے دورے میں ون ڈے سیریز پر 4-1 کے ریکارڈ فرق سے قبضہ کیا اور اب باری ٹوئنٹی -20 سیریز کی ہے ۔ٹیم انڈیا نے پہلا ٹوئنٹی -20 میچ 80 رنز کے ریکارڈ فرق سے گنوانے کے بعد شاندار واپسی کی اور آکلینڈ میں دوسرا مقابلہ سات وکٹ سے جیت کر سیریز میں 1-1 سے برابر کر لی۔ ہندستان نے اس طرح ٹوئنٹی -20 مقابلے میں نیوزی لینڈ زمین پر پہلی کامیابی حاصل کی۔نیوزی لینڈ نے آٹھ وکٹوں کے نقصان پر 158 رن بنائے جبکہ ہندستان نے 18.5 اوور میں تین وکٹ پر 162 رن بنا کر جیت اپنے نام کر لی۔ لیفٹ آرم اسپنر کرونال پانڈیا 28 رن پر تین وکٹ لے کر مین آف دی میچ بنے جبکہ کپتان روہت شرما (50) نے بہترین نصف سنچری بنائی اور نوجوان وکٹ کیپر بلے باز رشبھ پنت نے ناٹ آؤٹ 40 رنز کی شاندار اننگز کھیلی۔میچ کے بعد روہت نے مانا کہ ٹیم نے پہلے میچ کی شکست میں کی گئی غلطیوں سے سبق لیا۔ انہوں نے کہاکہ یہ دیکھ کر کافی خوشی ہوئی کہ ہم نے بہترین گیند بازی کی اور ہم بیٹ کے ساتھ بھی اچھے سے کھیلے ۔ ہمارے حق میں بہت سی چیزیں گئیں۔ ہمارے کھیل میں بھی معیار تھا، لیکن ہم نے اپنی غلطیوں سے سیکھنے کے بعد اپنے منصوبوں کوبہتر طریقے سے نافذ کیا۔ دوسری طرف میزبان ٹیم کے کپتان کین ولیمسن نے بھی کہا کہ ٹیم پہلے میچ کی کارکردگی کو برقرار نہیں رکھ پائی۔ ولیمسن نے کہاکہ ہمیں پتہ تھا کہ ویلنگٹن کی کارکردگی کو دہرانا آسان نہیں ہے ۔ اس میچ میں ہم بلے سے کچھ خاص نہیں کرپائے ۔ اس پچ پر بیٹنگ کرنا آسان نہیں تھا لیکن اگر ہم ڈیتھ اووروں میں 20 رن مزید بنا لیتے تو یہ اچھا ثابت ہوتا۔ نیوزی لینڈ نے پہلے میچ میں 200 سے اوپر کا اسکور بنا کر ہندستانی بلے بازی کو دباؤ میں ڈال دیا تھا لیکن دوسرے میچ میں 158 رن کا اسکور ایسا نہیں تھا جس سے ہندستانی ٹیم دباؤ میں آ پاتی۔ روہت اور شکھر دھون کی شاندار شروعات نے ہندستان کا کام آسان کیا تھا۔ اگرچہ شکھر کو اپنی ابتدائی لڑکھڑاہٹ سے نکلنا ہوگا اور اچھے آغاز کو بڑے اسکور میں تبدیل کرنا ہوگا۔ہندوستان کو ھیملٹن کے میدان کے اپنے ریکارڈ کو ذہن میں رکھنا ہوگا جہاں ہندستانی ٹیم چوتھے ون ڈے میں صرف 92 رن پر لڑھک گئی تھی اور اسے آٹھ وکٹ سے شکست کا سامنا کرنا پڑا تھا۔ ہندستان کو اگر غیر ملکی زمین پر سیریز جیت کا چوکا لگانا ہے تو اسے ھیملٹن میں اپنے ماضی کی کارکردگی کو پیچھے چھوڑ کر بہتر کارکردگی کرنا ہوگا۔یو این آئی