کٹہ پورہ یاری پورہ کولگام میں مسلح تصادم ، 2جنگجو جاں بحق،2فرار

علاقے کا سخت ترین محاصرہ اور ناکہ بندی،تصادم کے مقام پر پر تشدد جھڑپیں

13 جنوری 2019 (00 : 01 AM)   
(      )

خالد جاوید
کولگام //یاری پورہ کولگام کے کٹپورہ گائوں میں ایک خونریز مسلح تصادم آرائی میں 2جنگجو جاں بحق جبکہ ایک فوجی اہلکارزخمی ہوا۔بتایا جاتا ہے کہ مہلوک جنگجوئوںمیں البدر کا چیف کمانڈر معروف جنگجو زینت الاسلام بھی ہے،تاہم پولیس نے اسکی تصدیق نہیں کی ۔مقامی لوگوں کا کہنا ہے کہ محاصرے کے دوران 2 جنگجو محاصرہ توڑ کر فرار ہوئے۔تصادم کی جگہ کے نزدیک مظاہرین اور فورسز میں شدید جھڑپیں بھی ہوئیں جس کے دوران کئی افراد مضروب ہوئے۔مسلح تصادم آرائی کے ساتھ ہی کولگام میں انٹر نیٹ سروس معطل کی گئی۔

مسلح تصادم کیسے ہوا؟

پولیس کے مطابق فوج کی34 آرآر، ایس او جی اور سی آرپی ایف نے ایک مصدقہ اطلاع ملنے پر کٹپورہ یاری پورہ کولگام نامی گاؤں کا محاصرہ کیا اور تلاشی کارروائی شروع کی۔پولیس نے بتایا کہ فورسز کو یہ اطلاع ملی تھی کہ علاقے میں کم سے کم 3جنگجو موجود ہیں ،یہ البدر کا گروپ ہے، جس کی قیادت زینت الاسلام کررہا ہے۔پولیس کا کہنا ہے کہ قریب 5بجکر 30منٹ پر انہوں نے یہاں تلاشی کارروائی شروع کردی ۔پولیس کا کہنا ہے کہ جونہی فورسز کی پارٹی مشتبہ جگہ کی طرف جارہی تھی تو کم سے کم 3جنگجو، رہائشی علاقے سے باہر آئے اور محاصرہ توڑنے کی کوشش کے دوران انہوں نے فورسز پر فائرنگ کی، جس کے بعد طرفین میں گولیوں کا شدید تبادلہ ہوا جو کافی دیر تک جاری رہا۔پولیس نے بتایا کہ فائرنگ کے تبادلے میں 2جنگجو مارے گئے لیکن تلاشی آپریشن کو اتوار کی صبح تک ملتوی کیا گیا کیونکہ انہیں خدشہ ہے کہ یہاں اور کئی جنگجو موجود ہیں۔پولیس نے کہا ہے کہ دو جنگجوئوں کی لاشیں وہ دیکھ سکتے ہیں جن میں ایک کے بال لمبے ہیں جو زینت ہوسکتا ہے۔جبکہ دوسرے جنگجو کی شناخت کی جارہی ہے۔پولیس کا مزید کہنا تھا کہ وہ مصدقہ طور پر دونوں جنگجوئوں کی شناخت کے بارے میں تصدیق نہیں کرسکتے ۔فوج ، پولیس اور پیرا ملٹری فورسز کی بھاری جمعیت نے آس پاس علاقوں کو بھی محاصرے میں لے کر چار دائروں والی سیکورٹی تعینات کی ہے۔ گاؤں کو مکمل طور پر سیل کردیا گیااور تمام داخلی وخارجی راستوں کو مسدود کردیا گیا۔گائوں میں روشنی کا انتظام کیا گیا ہے اور لوگوں کو گھروں میں رہنے کی تلقین کردی گئی ہے۔اس دوران مقامی لوگوں نے کشمیر عظمیٰ کو بتایا کہ فائرنگ کے تبادلے کے دوران ہی 2جنگجو فرار ہونے میں کامیاب ہوئے۔

جھڑپیں

مسلح تصادم آرائی شروع ہوتے ہی یہاں نوجوانوں اور فورسز میں جھڑپیں ہوئیں۔یاری پورہ کولگام کے علاوہ دیگر علاقوں میں نوجوانوں نے سڑکوں پر آکر اسلام و آزادی کے حق میں نعرے بازی کرتے ہوئے فورسز پر پتھرائو کیا۔زینت الاسلام کے محصور ہونے کی خبر ملتے ہی پورے علاقے میں تناوی کیفیت پیدا ہوئی۔جس دوران نوجوانوں کی ایک بڑی تعداد گھروں سے باہر آئی اور انہوں نے تصادم کی جگہ کی طرف پیش قدمی کی،تاہم سرکاری فورسز نے تمام راستوں پر سخت ترین پہرے بٹھا کر ان کی کوشش کو ناکام بنایا ، جس کے بعد شدید جھڑپیں ہوئیں۔پتھرائو کرنے والے مظاہرین کو منتشر کرنے کیلئے شدید شلنگ کے علاوہ پیلٹ کا استعمال کیا گیا جس کے دوران قریب 8مظاہرین زخمی ہوئے۔ادھر فورسز نے زینت کے آبائی گائوں سوگن کے اطراف میں بھی سیکورٹی کو سخت کردیا ہے اور جگہ جگہ شبانہ ناکے لگائے گئے ۔

تازہ ترین