سکنڈلوں میں ملوث اخلاقیات کا درس نہ دیں:این سی

افسپا کا نفاذ اور قتل عام کے18واقعات پی ڈی پی کا کارنامہ

12 جنوری 2019 (00 : 01 AM)   
(      )

 سرینگر//نیشنل کانفرنس نے کہاہے کہ پی ڈی پی کی تنزلی کا اندازہ اس بات سے لگایا جاسکتا ہے کہ اب یہ پارٹی جرائم پیشہ اور بدنامِ زمانہ سکینڈلوں میں ملوث افراد کے ذریعے اخلاقی بیانات جاری کرنے پر مجبور ہوگئی ہے کیونکہ ان کے پاس اب کوئی جانا پہنچا چہرہ باقی نہیں رہ گیا ہے۔ نیشنل کانفرنس کے صوبائی ترجمان عمران نبی ڈار نے پی ڈی پی کے لیڈر خورشید عالم کے بیان کو بوکھلاہٹ قرار دیتے ہوئے کہاکہ موصوف اصل میں اپنے پارٹی کے مرحوم بانی کے کارناموں کو نیشنل کانفرنس پر تھوپنے کی کوشش مذموم کوشش کررہے ہیں۔انہوں نے کہاکہ موصوف کو یاد ہوناچاہئے کہ اخوان کی بنیاد مرحوم مفتی محمد سعید نے اُس وقت ڈالی جب وہ مرکز میں وزیر داخلہ کی کرسی بر براجمان تھے اور اُس وقت یہاں نیشنل کانفرنس کی حکومت نہیں بلکہ گورنر راج تھا اور مفتی محمد سعید نے اپنے دیرینہ ساتھی اور کشمیریوں و مسلمانوں کے ازلی دشمن جگموہن کو یہاں کا گورنر بنایا تھا۔ نیشنل کانفرنس کے ترجمان نے کہا کہ کشمیرمیں آج تک ہوئی تمام ہلاکتوں کی بنیاد AFSPAہے اور یہ افسپا پی ڈی پی کے سرپرست مفتی محمد سعید نے جموں وکشمیرمیں بذات خود لاگو کیا ہے۔ ترجمان نے کہاکہ مرحوم مفتی محمد سعید اور پی ڈی پی نے ہمیشہ کشمیری مفادات کے خلاف کام کیا۔ 2015میں الیکشن کے خاتمے کے ساتھ پی ڈی پی اپنی بانی جماعت بھاجپا کیساتھ مل گئی ۔ تب سے لیکر آج تک کشمیر میں خون بہنے کا سلسلہ جاری ہے۔ بھاجپا کے ساتھ حکومت سازی کے دوران پی ڈی پی والوں نے جی ایس ٹی، فوڈ سیکورٹی ایکٹ اور سرفیسی ایکٹ سمیت آدھ درجن مرکزی قوانین کو لاگو کو دفعہ370کو زبردست دھچکا پہنچایا۔ مرحوم مفتی محمد سعید نے 2002میں بھی ریاست کا وزیر اعلیٰ بن کر خواتین جائیداد منتقلی بل اور حقوق شہریت بل کو لاگو کروا کے دفعہ370 کی دھجیاں اُڑا دیں اور اسی جماعت ایک وزیر نے شرائن بوڈ کو زمین منتقل کی۔ ترجمان نے کہا کہ دفعہ 370کو زک پہنچانا پی ڈی پی کا پُرانا شیوا رہا ہے ،مرحوم مفتی محمد سعید ہر اس جماعت اور شخص کے شانہ بہ شانہ رہے جنہوں نے 1953سے لیکر1975تک دفعہ370کو زک پہنچائی اور اس دوران دفعہ370میں 37ترامیم عمل میں لائیں گئیں۔ ترجمان نے کہاکہ پی ڈی پی نے ہمیشہ سے ہی کشمیری عوام کے مفادات کے منافی کام کیا ہے ، جگموہن کی جموں وکشمیر کے گورنر کی تقرری سے لیکر بے نام قبررستانوں تک ،کنن پوش پورہ میں اجتماعی عصمت ریزی کے بدترین انسانی حقوق کی پامالی سے لیکر شہید میرواعظ مولوی محمد فاروق کے جلوس جنازہ میں شامل لوگوں پر گولیاں برسانے تک ، گائو کدل سے لیکر بجبہاڑہ اور ہندوار سے لیکر مشعالی محلہ تک قتل عام کے 18واقعات مفتی مرحوم محمد سعید کی سرپرستی میں ہی انجام پائے۔ انہوں نے کہا کہ جموں وکشمیر کا بچہ بچہ جانتا ہے کہ پی ڈی پی اب چوروں، لٹیروں اور راشی افراد کی جماعت بن کر رہ گئی ہے۔انہوں نے کہا کہ لوگوں کے چاول اور بوریاں لوٹنے والے، کسانوں کی کھاد چوری کرنے والے،انکائونٹر سپیشلٹس، بھرتی عملی میں دھاندلی کرکے اپنے بچوں کو بڑے بڑے عہدوں پر فائز کرنے والے اور زمینیں ہڑپنے والے اس وقت پی ڈی پی کے پالیسی میکر بن گئے ہیں۔ صوبائی ترجمان نے کہا کہ دوسروں کو مشورہ دینے کے بجائے پی ڈی پی کو نوشتہ دیوار پڑھ لینی چاہئے کہ قلم دوات جماعت جلد ہی مکمل طور پر غرق ہونے والی ہے۔ 
 

تازہ ترین