تازہ ترین

شیخ محمدعبداللہ کی برسی پرراجوری ،تھنہ منڈی ،سرنکوٹ اورپونچھ میں تقریبات کااہتمام

مقررین نے مرحوم کوانقلابی لیڈر،سماج کے پسماندہ طبقوں کا مسیحا اورسیکولرازم ، سوشلزم اورجمہوریت کا علمبردارقراردیا

6 دسمبر 2018 (00 : 01 AM)   
(      )

سمیت بھارگو+طارق شال
 راجوری //نیشنل کانفرنس نے راجوری میں شیخ محمدعبداللہ کوخراج عقیدت پیش کیاجس میں آنجہانی لیڈرکی سیاسی وسماجی خدمات کویادکرتے ہوئے انہیں خراج عقیدت پیش کیاگیا۔اس دوران تقریب میںمقررین نے کہاکہ مرحوم شیخ محمدعبداللہ بلالحاظ مذہب وملت پسماندہ ،غرباء، دلت اور دبے کچلے سماج کے مسیحاتھے۔ ان کی لڑائی زندگی بھررجعت پسند اورفرقہ پرست طاقتوں سے رہی۔وہ مساوات اورمذہبی رواداری کے حامی تھے اورتاریخ گواہ ہے کہ وہ کبھی دوقوموں کی تھیوری کے آگے نہیں جھکے۔ 1947 کے خونی اورہولناک پرآشوب دورمیں چٹان کی طرح ڈٹے اوراپنے کارکنان کی جانی قربانیاں دیکربھی اقلیتوں کاکشمیرکے اندرمکمل تحفظ کیا۔راشترپتامہاتماگاندھی جی کوروشنی اورامن کی کرن جلتی ہوئی کشمیرمیں ہی نظرآئی تھی۔حصول اقتدار کے قلیل سے پانچ سال کے دورمیں ان کی سرکارنے وہ انقلابی اقدام اٹھائے جس سے ان کانام رہتی دنیاتک منوررہے گا۔ فیوڈل ازم ،جاگیرداری اورچک داری کاخاتمہ کرکے انہوں نے کاشتکارکومالک زمین بنایا ۔صدیوں پرانے بے گاراورخون چوسنے والے قرضہ نظام کوختم کیا۔ جس کاسیدھافائدہ پسماندہ ،دلت طبقہ کوہواہے ،ریاست کوآئین ہندکے اندراندرونی خودمختاری دلائی۔ مقررین نے کہاکہ شیخ محمدعبداللہ سیکولرازم ، سوشلزم اورجمہوریہ کے بلندپایہ علمبردارتھے اورآزادی کے تھوڑے دنوں کے بعدپنچایتی راج کواورلوک راج کوگائوں تک پہنچایا۔ہرخطے کی یکساں ترقی کیلئے سنگل لائن ایڈمنسٹریشن لاگوکرکے ہمہ گیرترقی کروائی ۔ریاست کی سیاسی،اقتصادی حالت کوبدل ڈالا جس کے نتائج ہمارے سامنے ہیں۔انہوں نے کہاکہ شیخ عبداللہ کوحقیقی خراج عقیدت ان کے سنہرے اصولوںکی آبیاری کرنا اوران کومشعلِ راہ بناناہے۔اس کے علاوہ ضلع راجوری کے تحصیل ہیڈکوارٹروں میں بھی شیخ محمدعبداللہ کوخراج عقید ت پیش کرنے کیلئے تقریبا ت کااہتمام کیاگیاتھا۔علاوہ ازیں تھنہ منڈی میں مرحوم شیخ محمد عبداللہ کی 113  ویںبرسی کے سلسلہ میں تقریب کااہتمام کیاگیا۔اس موقع پر نیشنل کانفرنس کے ورکروں نے مرحوم شیخ محمد عبداللہ کو شاندار خراج عقیدت پیش کیا۔ اس دوران تقریب کی سربراہی بلاک صدر نیشنل کانفرنس تھنہ منڈی مشتاق احمد شال نے کی اوراس موقعہ پر پارٹی کے عہدیداران کے علاوہ نو منتخب سرپنچ اورپنچ بھی موجودتھے۔  مرحوم شیخ محمد عبداللہ کے یوم پیدائش کے موقع پربلاک صدر اور عہدیداران نے کہاکہ بیسویں صدی کے بر صغیر کے عظیم رہنما کے  یوم پیدائش کے سلسلہ میں ریاست جموں۔کشمیر کے ہر بلاک ہر ضلع اور صوبائی ہیڈکوارٹروں پر فاتح خوانی کی جارہی ہے۔ جنہوں نے برسا برس کی قیدوبند کی زندگی کو جموں کشمیر کے عوام کے نام وقف کر کے جاگیردارانہ نظام اور مہاراجہ کے ظلم و ستم سے عوام کو آزادی دلائی۔اورریاست میں جمہوری عمل شروع کیا۔انہوںنے کہا کہ اس اہم موقعہ پر تھنہ منڈی کی عوام عظیم لیڈر کو خراج عقیدت پیش کرتی ہے ان کیلئے  دعا ئے مغفرت کرتی ہے کہ اللہ رب العزت عظیم شخصیت کو اعلی مقام نصیب فرمائے ۔علاوہ ازیں انہوں نے اس موقعہ پر  بلاک تھنہ منڈی اور ضلع راجوری کے زعماء سے پر زور اپیلکی کہ وہ شیخ محمدعبداللہ کی تحریک کوفروغ دیں۔انہوں نے کہاکہ  نیشنل کانفرنس ایک عوامی مقبولیت رکھنے والی جماعت ہے۔انہوں نے کہاکہ شیر کشمیر شیخ محمد عبداللہ نے جو نقوش چھوڑے ہیں ان نقوش پر چل کر نیشنل کانفرنس کو طاقت دے کر ریاست جموںوکشمیر کی عوام کو سختیوں سے نجات دلانی  ہے جسکے لئے تمام ورکروں کو محنت کرنی ہوگی۔ بلاک صدر نیشنل کانفرنس کے علاوہ محمد غفور ڈاربسرپنچ ، شمیم احمد مغل سینئر لیڈر،چوہدری نور حسین سرپنچ،ایڈوکیٹ آفتاب احمد میر، عبدالحمید ڈار،محمد حنیف کملاک،محمد پرویز، محمد اسحاق ٹھکر، فیروز وانی،عبدالحق، عبدالرشید نائیک کے علاوہ کافی تعداد میں ورکر موجود تھے۔
 
 

شیرکشمیرکی تحریک کوفروغ دینے کیلئے ہرفردکرداراداکرے:شہنازگنائی

حسین محتشم
پونچھ//ایم ایل سی ڈاکٹر شہناز گنائی کی ویادت میں مرحوم شیخ محمد عبداللہ کے113ویں یوم پیدائش خواتین کی جانب سے بھی ایک تقریب کا انعقاد کیا گیا ، جہاں اپنے مرحوم رہنماکو خراج عقیدت ادا کیاگیا۔اس موقعے پر سیاسی ، سماجی اور مذہبی طبقوں سے وابستہ خواتین کی ایک بڑی تعداد بھی موجود تھی۔  تقریب کے دوران خطاب کرتے ہوئے پارٹی کے سینئر لیڈر ایم ایل سی شہنسز گنائی نے کہا کہ مرحوم شیخ صاحب نے اِس ریاست کے لوگوں کی تقدیر بدلنے کے سلسلے میں کیا کیا نہ سہا۔ اْنہوں نے کہا کہشیخ محمد عبداللہ کاریاست کی ترقی میں اہم کردار رہا ہے۔ انہوں نے کیس کہ نیشنل کانفرنس ایک سیسہ پلائی ہوئی دیوار ہے اور اِس کو ابتدا سے ہی برابر آج تک زک پہنچانے کی مزموم کوششیں ہوتی رہی لیکن کشمیری عوام نے اِس جماعت کے دشمنوں کی چالوں اور سازشوں کو ہمیشہ خاک میں ملا دیا۔انہوں نے اس موقع پر موجود خواتین سے اپیل کی کہ وہ نیشنل کانفرنس کو مضبوط بنانے کے اقدام کے لئے آگے بڑھیں۔ انہوں نے کہا کہ ریاست جموں و کشمیر کی واحد جماعت نیشنل کانفرنس سے جو یہاں کی ترقی کر سکتی ہے اس لئے عوام کو چاہئے کہ وہ اس جماعت کو مضبوط بنائے۔ گنائی نے کہا کہ یہ شیخ صاحب ہی تھے جنہوں نے  ہندو ، مُسلم  اور سِکھ اتحاد کو خوشحال کشمیر کی بُنیاد قرار دیا تھا اور تاحیات اسی فارمولے پر قائم رہے اور یہی جموںو کشمیر نیشنل کانفرنس کا  ایجنڈا ہے۔ موصوفہ نے کہا کہ آج مُلک اور ریاست کو شیخ صاحب کے اس آپسی بھائی چارے والے فارمولے کی سخت ضرورت ہے اور مُلک اور ریاست کے سبھی باشند گان کو شیرِ کشمیر کی اس تحریک کو آگے لے جانے میں اہم کردار ادا کرنا ہوگا۔ ڈاکٹر گنائی نے مزید کہا کہ اُن کے والد مرحوم خواجہ غُلام احمد گنائی مرحوم شیرِ کشمیر کے ایک مُخلص سپاہی تھے جنہوں نے پونچھ میں اس بھائی چارے کو جِلا دی اور آج اس تحریک کو تقویت دینے کی اشد ضرورت ہے تاکہ مُلک و ریاست میں چل رہی منافرت کو ختم کیا جاسکے۔ اُنہوں نے کہا کہ شیرِ کشمیر ایک تاریخ کا نام ہے جس کا  ریاست کا ہر باشندہ مرہونِ مِنّت ہے۔ موصوفہ نے کہا کہ اس تاریخ ساز شخصیت نے ریاست وقوم کے مفاد کی خاطر اپنے ذاتی مفاد کو قربان کرکے دو دہائیوں سے زیادہ عرصہ تک قید و صعوبت میں گزارا لیکن اپنے اصولوں کا سودا نہیں کیا۔ ڈاکٹر گنائی نے شیرِ کشمیر کے یومِ ولادت پر عوامِ موضع بانڈی چیچیاں کو تحفے کے طور پر اپنے سی۔ڈی فنڈ سے پی۔ایچ ۔سی کو ایک عدد ایمبو لینس فراہم کی جس پر عوام نے اُن کا شُکریہ ادا کیا۔ اس موقع پر خواتین کی کی کثیر تعداد موجود تھی جو اپنی محبوب رہنما اور رکن قانون ساز کونسل ڈاکٹر شہناز گنائی کے خیالات سُنے اور اُن سے دو بدو مُلاقات کے لئے حاضر آئیںتھیں۔ اُنہوں نے ایمبو لینس کو عوام کے نام کرتے ہوئے کہا کہ اُنہیں اس سرحدی علاقہ میں ایمبولینس اور دیگر بُنیادی سہولیات خاص طور پر دور دراز علاقوں میں بیت الخلاء کی کمی کا سُن کر کافی افسوس ہوا ہے۔ اُنہوں نے کہا کہ گزشتہ اٹھارہ بیس سالہ سیاسی قیادت نے بھی اس طرف خاص توجہ نہیں دی اور اگر قُدرت نے اُنہیں اس خدمت کے لئے قبول کیا تو وہ پہلی فُرصت میں اس بُنیادی سہولت کو فراہم کرانے میں اہم کردار ادا کریں گی۔ اجلاس کے اختتام پر مرحوم شیخ محمد عبد اللہ کے بُلند درجات اور نیشنل کانفرنس کی موجودہ قیادت کی صحت و سلامتی کے لئے دُعائے خیر بھی کی گئی۔ 
 

ریاست جموں وکشمیر کی  خصوصی شناخت شیخ عبداللہ کی دین: مشتاق بخاری

بختیار حسین
سرنکوٹ//  نیشنل کانفرنس کے سینئر لیڈر اور ریاستی سکریٹری سید مشتاق احمد بخاری کی صدارت میں مرحوم شیخ محمد عبد اللہ کے یوم ولادت پرتقریبات کااہتمام کیاجس میں مرحوم کوشاندارالفاظ میں خراج عقیدت پیش کیاگیا۔اس دوران تقریب میں پارٹی کے سینئر ورکر ،بلاک صدور، سیکریٹری اور نیشنل کانفرنس یوتھ سرنکوٹ بھی شامل تھے۔ اس موقعہ پر مشتاق بخاری نے اپنے بیان میں کہا کہ بابا ئے قوم مرحوم شیخ محمد عبداللہ نے ریاست جموں کشمیر کی عوام  کو ایک صف میں کھڑا رہنے کا نعرہ دیا ۔ ہندو مسلم سکھ اتحاد اور ریاست کی عوام کو بغیر مذہب و ملت نیشنل کانفرنس تنظیم میں شامل کیا اور تنظیم کو مضبوطی کے ساتھ چلایا اور غریب عوام کے لیے جنگ لڑی اور ریاست میں دفعہ 370 کو  لایا جس سے آج ریاست بھر کے لوگ سکون سے زندگی بسر کر رہے ہیں اگر مرخوم شیخ محمد عبداللہ نے یہ دفعہ لاگو نہ کروائی ہوتی تو آج ہماری ریاست کا نوجوان در بدر ہونے پر مجبور ہوتا اور خودکشی کرنے پر بھی مجبور ہوتے ۔