تازہ ترین

غزلیات

25 نومبر 2018 (00 : 01 AM)   
(      )

مری نظر کو مہکتے گلاب کیا دو گے
کہ نیند دے نہ سکے تم تو خواب کیا دو گے
 
میں خود دکھاؤں گا دکھتی رگیں کہاں ہیں مری
جو تم بتاؤ کہ اب کے عذاب کیا دو گے
 
تمہارے پاس تو آ جاؤں جی کڑا کرکے
سوا تپش کے تم اے آفتاب کیا دو گے
 
شمار لمحوں کا تفصیل بیتی گھڑیوں کی
غروبِ شامِ تمنا حساب کیا دو گے
 
یہ خامشی بھی عجیب امتحان ہے بلراجؔ
سوال ہی نہیں کوئی جواب کیا دو گے
 
  بلراج ؔبخشی 
۱۳/۳، عید گاہ روڈ ، آدرش کالونی، اُدہم پور- ۱۸۲۱۰۱(جموں کشمیر)
موبائل نمبر؛ 09419339303
email: balrajbakshi1@gmail.com
 
 
چاند کوئی ہوگیا اور کوئی ہالہ ہوگیا
دور میری دسترس سے ہر نوالہ ہوگیا
ایک سورج ڈھونڈھ لیں گے وادیٔ ظلمات میں
اب اگر ناراض ہم سے پھر اُجالا ہوگیا
کچھ سمجھ آتانہیں کیسے یہاں کا ہر نفس
دیکھتے ہی دیکھتے ادنیٰ سے اعلیٰ ہوگیا
آج بھی قائم دلوں پر ہے حکومت رنج کی
ہم یہ سمجھے تھے کہ شاید صاف جالا ہوگیا 
دل کا پیمانہ ہمارا کس قدر بے رنگ تھا
درد کی تاثیر سے رنگین پیالہ ہوگیا
کر دیا صحرانوردی نے مجھے بھی معتبر
کس قدر اب مستند میرا حوالہ ہوگیا
کیا یہ عجزو انکساری کا کوئی اعجاز ہے
ایک کنکر میرے چھونے سے ہمالہ ہوگیا
ہوگئے نایاب ایسے آپ میرے واسطے 
وادیٔ کشمیر کا جیسے دوشالہ ہوگیا
آگ یہ کیسی لگی ہے چار سو کیسا دھواں
اے خدا کیوں خوبصورت شہر کالا ہوگیا
اے میرے ہمدم نہ پوچھو داستانِ غم میری
کیا کہوں کب کب میرا کیسے قبالہ ہوگیا
جل رہے تھے جب کسی نے حال تک پوچھا نہیں
راکھ راحتؔ ہوگئے تو بول بالا ہوگیا
                                                رئوف راحت
روز لین ایچ ایم ٹی ، سرینگر،9149830023
 
 
بدلتے موسموں کا سامناہے
سُلگتی برف، زہریلی ہوا ہے
اُمڈتی پتھروں کی بستیوں میں
لبِ اظہار بے حرف و صدا ہے
گریںشاخوں سے غنچے راکھ بن کر
چمن پھر سازشِ بادِ صبا ہے
مکیںکوئی نہ ٹھہرے گا مکاں میں
درو دیوار پر لکھی سزا ہے
زمانے بھر میں ہم معتوب ٹھہرے
کہ حق گوئی ہماری ہی خطا ہے
برابر رنگ بدلے، جارہی ہے
وہی صورت جو آئینہ نما ہے
چنارِ وادیٔ کشمیر ہوںمیں
مرا سایہ بھی آتش زیرِ پا ہے
اجابت منتظر ہے دیکھئےتو!
کہیں اُٹھا کوئی دستِ دُعا ہے
سند مشہورؔ ہونے کی یہی ہے
مرا محبوب محبوبِ خدا ہے
 
محمد یوسف مشہور
کپوارہ، موبائل نمبر؛990624123
 
 
مرے خاموش رہنے کی وضاحت، کون کرتا ہے 
چلو دیکھیں یہاں حق کی وکالت، کون کرتا ہے 
 
یہاں اہلِ ہُنر کی آنکھیں میرے  پاس ہیں گروی 
مُجھی سے میرے عیبوں کی شکایت، کون کرتا ہے 
 
یہاں طاری ہے ڈر انساں نُما خونی درندوں کا 
وگرنہ اس طرح بستی سے ہجرت، کون کرتا ہے 
 
تمہارے نام سے پیغام ملتے ہیں مجھے اب بھی 
اگر تم بھول بیٹھے ہو شرارت ،کون کرتا ہے 
 
تُو کانٹے لے کے خوشبو بیچتا ہے شہرِ خوباں میں 
ارے پاگل!  یہاں ایسی تجارت، کون کرتا ہے 
 
ہیں کتنی بیٹیاں لٹکی ہوئی بدعت کی سُولی پر
سبھی ہیں طالبِ دولت بغاوت، کون کرتا ہے 
 
بہت ہیں پُر اثر مانوسؔ کے الفاظ کی چیخیں
مگر بہروں کی بستی میں سماعت، کون کرتا ہے
 
پرویز مانوس ؔ
نٹی پورہ سرینگر ،موبائل نمبر؛ 9622937142
 
 
سب مراسم توڑ بھی سکتا ہوں میں
شہرِ جاناں چھوڑ بھی سکتا ہوں میں
  کوئی رستہ جانب ِ منزل نہیں 
یعنی رستہ موڑ بھی سکتا ہوں میں 
  جو بھرم توڑے ہیں میرے عشق نے 
 ہاں! انہیں اب جوڑ بھی سکتا ہوں میں 
جن میں خوشبو کا نہیں نام و نشاں
پھول ایسے توڑ بھی سکتا ہوں 
مجھ سے کوئی بھی توقع نا رکھو
اب تو سب جھنجھوڑ بھی سکتا ہوں میں 
عشق کی جانب تھا جن راہوں کا رُخ 
ان کا رُخ اب موڑ بھی سکتا ہوں میں 
بت بنائے تھے جو خود میں نے عقیل ؔ
ان کو یکسر توڑ بھی سکتا ہوں میں
 
عقیل ؔفاروق
طالب علم شعبہ اردو کشمیر یونیورسٹی
موبائل نمبر؛8491994633
 
 
تو قائد ہے زمانے کا اگریہ ہو ادا تیری
فقط سر ہو تیرا ونچا زمیں پر ہونگاہ تیری
 
بنا ہے جو بڑا تو پھر سنبھل کر سیکھ بھی چلنا
زمانے بھر کو دِکھتی ہے ذرا سی بھی خطا تیری
 
تو کرتا ہے وکالت جب زمانے بھر کے لوگوں کی
خبر لے اپنے گھر کی بھی، ہے ماں تجھ سے خفا تیری
 
چمک تو اس ادا سے اب منوّر کر زمانے کو
زمانہ منتظر تیرا کہ کب چمکے ضیا تیری
 
عطا کر تو میرے آقا، ضیائیؔ کو بھی وہ دولت
نبیؐ کا عشق ہو دل میں زباں پر ہو ثنا تیری
 
امتیاز احمد ضیائیؔ
پونچھ، موبائل نمبر؛9697618435
 
 
جو گھبرایا ہمارا دل غزل لکھ دی
جو تھرایا ہمارا دل غزل لکھ دی
کبھی ہم پھول سے نکھرے چمن والو
جو مُرجھایا ہمارا دل غزل لکھ دی
جونہی چندا میرے آگے پڑا پھیکا
تو اِترایا ہمارا دل غزل لکھ دی
کبھی ہم کو اُداسی نے رُلایا ہے
جو مسکایا ہمارا دل غزل لکھ دی
کبھی ہم جیت کر ہاریں تو بس ہاریں
جو بھر آیا ہمارا دل غزل لکھ دی
کبھی نرمی ترک کرکے ہوئی بے جاں 
جو پتھرایا ہمارا دل غزل لکھ دی
کبھی جو رافیہؔ یادیں بَنی خوشبو
جو مہکایا ہمارا دل غزل لکھ دی
 
رافیہ ؔرسول
ڈلگیٹ سرینگر
rafiarasool592@gmail.com
 
 
تمہارا نام لینا کام آیا
مجھے تکلیف میں آرام آیا
اسے دہشت کا مذہب کہنے والو
بھلائی کے لیے اسلام آیا
مجھے ہی کیوں گلہ ہو بے دلی کا
کسے اس دشت میں آرام آیا
نہ جانے کیوں میری آنکھیں ہوئیں نم
زباں پر جب تمہارا نام آیا
گیا تھا میں محبت کے نگر میں
وہاں سے ہو کے میں نیلام آیا
تمہیں تو فخر تھا یاروں پہ اپنے
کہو کون اب تمہارے کام آیا
 
فہیم اقبال
دو اننت ناگ کشمیر
موبائل نمبر؛7006402556
 
 
ہم سفر میرا ، وہی قاتل بھی تھا 
بزم کی رونق شہِ محفل بھی تھا
ڈوب جانے کی تو تھی کچھ وجہ اور
اک سمندر ہی نہیں ساحل بھی تھا   
عشق کی بازی پلٹ دی وقت نے
 ورنہ دل قائل بھی تھا مائل بھی تھا
مت کرو اس بے وفا کا ذکر تم
جو نہیں اب میرا وہ حاصل بھی تھا
ساتھ چل کر بھی نہ میرا جو ہوا
اس سفر کا تو وہی حاصل بھی تھا   
وہ سزاجو نام میرے کرگیا
اس گنہ پر پہلے وہ مائل بھی تھا
 
اعجاز طالبؔ
موبائل نمبر؛9906699498
 
 
ہیں خوب تمہارے ناز میاں
اُچھلو مت آوؤ باز میاں
ہم آہنگ لہجہ و جذبہ رکھ
تب پائے گا انداز میاں
ہو روح پہ طاری وجد یہاں
چھیڑ ایسا کوئی ساز میاں
اُلجھا نہ مجھے اب باتوں میں 
تخییٔل ہے بَر پرواز میاں
ہر بات سے نکلے بات نئی
سیکھا یہ کہاں انداز میاں
شاید وہ کسی مشکل میں ہے
اس دل سے اُٹھے آواز میاں
توڑا ہے کسی نے دل تیرا 
باتوں میں جو گداز میاں
 
میر خوشحال احمد
دلدارکرناہ ، موبائل نمبر؛9622772188
 
نعت رسول مقبولؐ
نہ بزم ِ گل نہ ستاروں کی انجمن میں رہے
ہے دل کو آپ سے نسبت تو کیوں چمن میں رہے
سما ہی جائے ہر اک دل میں ایسے عشق ِرسولؔ
بہ شکل نکہت ِگُل جاں کے پیرہن میں رہے
یہ آرزو ہے کہ آئے اجل مدینے میں
کہ میری خاک بھی شہرِ شہِ زمن میں رہے
اُڑاکے لائے صباکاش گرد یثرب کی 
جو بن کے خاکِ شفاعت مرے کفن  میں رہے
بوقت نزع زباں پر ہو میرے نعت نبیؐ
شمار میرا کنیزانِ پنجتن میں رہے
اگر ہو نعتِ محمد کا حق ادا کرنا
تو عکسِ سیرتِ احمدؐ ترے سخن میں رہے
ہے اسطرح سے عقیدت مجھے محمد ؐسے
کہ روح جسطرح میری مرے بدن میں رہے
کچھ اس طرح سے کہو نعت مصطفیؐ زرؔیاب
کہ شورِ صلے علی،ساری انجمن میں رہے
 
ہاجرہ نور زریابؔ آ کولہ مہاراشٹر انڈیا،موبائل نمبر9922318742