تازہ ترین

کہیں کال پر،تو کہیں بغیرکال ہڑتال

شمال و جنوب میں زندگی کے معمولات درہم برہم، انٹر نیٹ اور ریل سروس بھی متاثر

11 اکتوبر 2018 (00 : 01 AM)   
(      )

بلال فرقانی
سرینگر//بلدیاتی انتخابات کے دوسرے مرحلے میں مزاحمتی قیادت کی طرف سے دی گئی کال کے پیش نظر انتخابات ہونے والے علاقوں میں مکمل ہڑتال کی وجہ سے زندگی مفلوج ہوکر رہ گئی۔سرینگر کے پائین شہر اور ضلع کولگام میں بغیر کال ہڑتال رہی،جبکہ ریل سروس کو معطل کرنے کے علاوہ انٹرنیٹ کی رفتار کو کم کیا گیا۔سید علی گیلانی،میرواعظ عمر فاروق اور محمد یاسین ملک پر مشتمل مزاحمتی قیادت کی کال پر انتخابی علاقوں میںہمہ گیر ہڑتال رہی ۔جہاں پر انتخابات ہونے تھے وہاں سڑکوں پر ٹریفک کی نقل وحرکت مسدود ہو کر رہ گئی،تاہم نجی گاڑیاں سڑکوں پر چلتی نظر آئیں۔ سرینگر کے شہر خاص میں اگر چہ فتح کدل کو چھوڑ کر دیگر علاقوں میں انتخابات نہیں تھے،تاہم اس کے باوجود بیشتر علاقوںبشمول،نوہٹہ،راجوری کدل،خواجہ بازار،ملارٹہ،بہوری کدل،زینہ کدل،نواب بازار،صراف کدل،حول،خانیار،نالہ مار روڈ سمیت دیگر علاقوں میں بھی بغیر کال ہڑتال رہی۔اس دوران ان علاقوں میں دکانیں مکمل طور پر بند رہی،جبکہ تجارتی و کاروباری مراکز بھی مقفل رہیں۔ہڑتال کے پیش نظر بیشتر سرکاری دفاتر اور اسکول بھی مقفل رہے۔سیول لائنز کے علاقوں میں ہڑتال کا اثر نظر آیا، لالچوک سمیت دیگر بازار بند تھے تا ہم ٹرانسپورٹ جزوی طور پر چلتا رہا۔ بڈگام کیبیروہ ،چرار شریف، ماگام،مازھامہ، آری پتھن،کھاگ، پوشکرمیں مکمل ہڑتال رہی ۔بارہمولہ کے وتر گام میں ہڑتال کے دوران تمام بازار اور کاروباری و تجارتی مرکز بند رہیں،جبکہ سڑکوں پر ٹریفک کی نقل و حمل بند رہیں۔اس دورانکنزر اور اس کے مضافاتی علاقوں میں بھی مکمل ہڑتال رہی۔نامہ نگار اشرف چراغ کے مطابق کپوارہ کے لنگیٹ قصبہ میں مکمل ہڑتال رہی جس کے نتیجے میں تمام کا رو باری سر گرمیاں ٹھپ ہو کر رہ گئیں جبکہ سڑکیں سنسان نظر آئیں ۔بدھ کو میونسپل کمیٹی کے 2وارڈوں میں چنائو بھی ہو رہے تھے لیکن یہا ں لوگ دن بھر اپنے گھرو ں سے باہر نہیں آئے اور گھروں میں بیٹھنے کو ترجیحی دی ۔قصبہ میں منگل کو ہی فیصلہ کیا گیا تھا کہ الیکشن کے دوران وہ اپنے گھرو ں میں بیٹھیں گے جس کے نتیجے میں پورے قصبہ میں دوران الیکشن سناٹا چھایا رہا اور پولنگ بوتھوں پر الو بول رہے تھے ۔بانڈی پورہ کے سمبل میں بھی مکمل ہڑتال کی گئی اور اس دوران  دیگرعلاقوں میں دکانیں مکمل طور مقفل رہیں۔کولگام سے نامہ نگارخالدجاویدکے مطابق ضلع کے تحصیل مقامات اور دوسری جگہوں پر بغیر کال مکمل ہڑتال رہی۔ ضلع کے محمد پورہ،نیلوہ،فرصل،اوکے،دمحال ہانجی پورہ ،کھڈونی،ریڈونی،پہلو،کھڈونی،کیموہ سمیت دیگر علاقوں میں ہڑتال کی وجہ سے عام زندگی اتھل پتھل ہوکر رہ گئی۔ کاروباری ادارے اور تجارتی مرکز بند رہے اور سڑکوں پر ٹرانسپورٹ غائب رہا۔اس دوران ضلع میں نجی و سرکاری دفاتر اور تعلیمی ادارے مقفل رہے۔ اننت ناگ سے نامہ نگار ملک عبدالسلام کے مطابق ہڑ تال کی وجہ سے ہر قسم کی سرگر میاں متاثر رہیں اور لوگوں نے زیادہ ترگھروں میں ہی رہنے کو ترجیح دی جس کی وجہ سے قصبہ میں خاموشی چھائی رہی ۔ ضلع کے بجبہاڑہ،آرونی،سنگم، کھنہ بل،سمیت دیگر علاقوں میں مثالی ہڑتال رہی ۔نامہ نگار عارف بلوچ کے مطابق اچھہ بل،کوکر ناگ بوچھو اور قاضی گنڈ میں بھی مکمل ہڑتال رہی۔اس دوران تمام دکانیں بند رہی جبکہ سڑکوں سے ٹریفک غائب رہا۔ اس دوران سرینگر بارہمولہ بانہال ریل سروس معطل رہی جبکہ سرینگر اور جنوبی کشمیر انٹرنیٹ سروس متاثر رہی۔