بلدیاتی انتخابات کے بیچ سیکورٹی متحرک

شہر میں چیکنگ کا سلسلہ تیز،موٹر سائیکل سواروں کا کریک ڈائون

7 اکتوبر 2018 (00 : 01 AM)   
(      )

بلال فرقانی
سرینگر// سرینگر میں نیشنل کانفرنس کے2 کارکنوں کی ہلاکت کے بیچ بلدیاتی انتخابات کے پہلے مرحلے میں 8اکتوبر کو منعقد ہونے والے انتخابات سے قبل ہی شہرمیں سیکورٹی متحرک کی گئی ہے اور شہر کے داخلی اور کارجی راستوں پر سخت پہرے لگا دئیے گئے ہیں ۔ جگہ جگہ پولیس اور فورسز نے ناکے بٹھائے ہیں اور گاڑیوں کی تلاشی لی جاتی ہے اوران میں سوار افراد کے شناختی کارڈ چیک کئے جاتے ہیں ۔پائین شہر اور سیول لائنزمیں حساس مقامات پر فورسز کی اضافی نفری تعینات کی گئی ہے جبکہ دوران شب شہر سرینگر کے مختلف چوراہوں پر ناکوں پر پولیس و سی آر پی ایف کے افسران و اہلکار دوران گاڑیوں کو روک کر ان کی باریک بینی سے تلاشی لیتے ہیںاور ان میں سوار افرادسے بھی گہرائی سے پوچھ تاچھ کا عمل جاری ہے ۔ لالچوک اور دیگر جگہوں پر فورسز کی اضافی نفری کو تعینات کیا گیا ہے اس کے ساتھ ساتھ کئی جگہوں پر عارضی چیک پوائنٹ قائم کئے گئے ہیں ۔بائی پاس پر متعدد مقامات پرپولیس اور سی آر پی کے علاوہ فوج کی کیسپر گاڑیوں کو لگایا گیا ہے ۔ اہم شاہرائوں کے علاوہ سرینگر جموں شاہرہ پر بھی کئی جگہوں پر تلاشیاں لی جا رہی ہے۔ سیکورٹی ذرائع نے پہلے ہی بتایا ہے کہ40مرکزی فورسز کمپنیوں کو انتخابات کے دوران تعینات کیا جائے گااور انہیں انتخابی مرکز کی نگرانی اور گشتی دستوں کیلئے استعمال میں لایا جائے گا۔پولیس ذرائع نے بتایا کہ ناکے اور تلاشیاں اگر چہ معمول کا عمل ہے تاہم انتخابی عمل کی وجہ سے اس کو مزید چوکس کردیا گیا ہے۔دریں اثناء شہر کے تقریباً ہر علاقے میں سنیچر کو پولیس نے موٹر سائیکل سواروں کے خلاف کریک ڈوان شروع کر کے درجنوں موٹرسائیکلوں کو ضبط کر کے تھانوں میں جمع کیا ۔ موٹر سائیکل سواروںانہیں غیر ضروری طور تنگ طلب کرنے کا پولیس پر الزام عائد کیا ہے  جس کی وجہ سے بیشتر موٹر سائکل سواروں کو سخت مشکلات کا سامنا کرنا پرا ہے۔ خیال رہے کرفلی محلہ میںجمعہ کو موٹر سائیکل پر سوار بندوق برداروں نے نیشنل کانفرنس کے 2سینئر کارکنان کو گولی مار کر ہلاک کیا ہے جبکہ واقعے میں ایک ایک کارکن زخمی ہوا ہے جس کے بعد شہر میں سیکورٹی کو الرٹ کیا گیا ہے ۔
 

تازہ ترین