تازہ ترین

سرینگر،گاندربل اور کرناہ میں قومی لوک عدالتوں کا انعقاد

سینکڑوں معاملات بروقت نپٹائے گئے

9 ستمبر 2018 (00 : 01 AM)   
(      )

ارشاد احمد+ظفر اقبال
 
سرینگر//ڈسٹرکٹ لیگل سروسز اتھارٹی سرینگر کی طرف سے ضلع کورٹ کمپلیکس مومن آباد سرینگر میں پرنسپل ڈسٹرکٹ اینڈ سیشنز جج سرینگر کی صدارت میں ایک قومی لوک عدالت کا اہتمام کیا گیا جس میں تمام نوعیت کے معاملات شنوائی کیلئے رکھے گئے تھے ۔ لوک عدالت کا افتتاح ایگزیکٹو چئیر مین جے اینڈ کے سٹیٹ لیگل سروسز اتھارٹی جسٹس الوک ارادھے نے نیشنل لیگل سروسز اتھارٹی آف انڈیا کے ممبر ، چئیر مین جے اینڈ کے ہائی کورٹ لیگل سروسز کمیٹی اور ضلع سرینگر کے انتظامی جج جسٹس علی محمد ماگرے کی موجودگی میں کیا ۔ دونوں جج صاحبان نے اس موقعہ پر وہاں موجود فریقین پر زور دیا کہ وہ عدالتوں کی عذر داریوں میں پڑنے کے بجائے آپسی افہام و تفہیم کے ذریعے اپنے معاملات کو نمٹائیں ۔ اس موقعہ پر ممبر سیکرٹری سٹیٹ لیگل سروسز اتھارٹی یشپال بھورنی اور سٹیٹ جوڈیشل اکیڈمی کے ڈائریکٹر عبدالرشید ملک بھی موجود تھے ۔ لوک عدالت کیلئے 7 بنچ تشکیل دئیے گئے تھے جنہوں نے 2677 معاملات شنوائی کیلئے اٹھائے اور ان میں سے موقع پر ہی 2381 معاملات نمٹائے گئے اور 13966057 روپے کا سیٹل منٹ بھی کیا گیا ۔ پہلی بنچ کی صدارت پرنسپل ڈسٹرکٹ جج سرینگر محمد اکرم چودھری نے کی جبکہ اُن کی مدد پرذائیڈنگ افسر موٹر ایکسیڈنٹ کلیمز ٹربیونل سرینگر سبھاش چندر گپتا نے کی ۔ اس بنچ نے 30 معاملات کی شنوائی کی جن میں سے 17 کیس افہام و تفہیم کے ذریعے حل کئے گئے اور 10437000 روپے معاوضے کے طور پر منظور کئے گئے ۔ دوسری بنچ کی صدارت پرذیڈنٹ ڈسٹرکٹ کنزیومر پروٹیکشن فورم سرینگر محمد اشرف ملک نے کی جن کی مدد ایڈووکیٹ ممبر فرح دیبہ نے کی ۔ اس بنچ نے شنوائی کیلئے 112 کیس اٹھائے جن میں سے آپسی رضا مندی کے ذریعے21 کیس حل کئے گئے اور 838105 روپے کی رقم معاوضے کے طور پر منظور کی گئی ۔ تیسرے بنچ کی تشکیل ڈسٹرکٹ اینڈ سیشنز کورٹ کی طرف سے ریفر کئے گئے سول اور کرمنل معاملات کی شنوائی کیلئے تشکیل دی گئی تھی ۔ اس بنچ کی صدارت ایڈیشنل ڈسٹرکٹ اینڈ سیشنز جج پرویز حسین کاچرونے کی اور اُن کی مدد سٹی منصف سرینگر مس تبسم نے کی ۔ اس بنچ نے 24 معاملات کی شنوائی کی جن میں سے دو معاملات موقعہ پر ہی حل کئے گئے اور 600000 روپے کے معاوضے کو منظوری دی گئی ۔ چوتھے بنچ نے بنک ریکوری معاملات کی شنوائی کی اور اس بنچ کی صدارت سیکنڈ ایڈیشنل ڈسٹرکٹ جج سرینگر طاہر خورشید رینہ نے کی اور اُن کی مدد فارسٹ مجسٹریٹ سرینگر محمد رفیق چک نے کی ۔ اس بنچ نے لگ بھگ 108 معاملات اٹھائے جن میں سے 20 معاملات حل کئے گئے اور 1860312 روپے کے رقم کی سیٹل منٹ کی گئی ۔ بنچ نمبر پانچ میں مختلف مجسٹیریل عدالتوں سے ریفر کئے گئے سول اور کرمنل معاملات اٹھائے گئے اس بنچ کی صدارت میونسپل مجسٹریٹ سرینگر یشپال شرما نے کی اور سپیشل موبائیل مجسٹریٹ ریلویز 13 ٹی ایف سی پرویز اقبال نے کی ۔ اس بنچ نے 105 معاملات اٹھائے جن میں سے 33 معاملات موقعہ پر ہی حل کئے گئے اور 6000 روپے کا جرمانہ بھی وصول کیا گیا ۔ چھٹے بنچ کی تشکیل موٹر وہیکلز ایکٹ کی خلاف ورزیوں سے جُڑے معاملات کی شنوائی کیلئے دی گئی تھی اس بنچ کی صدارت سپیشل موبائیل مجسٹریٹ ( ٹریفک ) سرینگر گوہر مجید دلال نے کی اور اُن کی مدد ایڈیشنل موبائیل مجسٹریٹ ( ٹریفک) سرینگر میر وضاحت نے کی ۔ اس بنچ نے 2250 معاملات شنوائی کیلئے اٹھائے جن میں سے تمام 2250 معاملات افہام و تفہیم کے ذریعے نمٹائے گئے اور 217190 روپے کا جرمانہ وصول کیا گیا ۔ بنچ نمبر سات نے ایڈیشنل سپیشل موبائیل مجسٹریٹ (13 ایف سی ) پنتھہ چوک سرینگر کی طرف سے ریفر کئے گئے تمام معاملات اٹھائے اس بنچ کی صدارت ایڈیشنل سپیشل موبائیل مجسٹریٹ 13 ایف سی پنتہ چوک سرینگر محرین مشتاق نے کی ۔ جن کی مدد پرذیڈنٹ بار ایسوسی ایشن پنتھہ چوک نے کی اس بنچ نے 48 معاملات شنوائی کیلئے اٹھائے جن میں سے 38 معاملات آپسی رضا مندی کے ذریعے حل کئے گئے اور 7450 روپے وصول کئے گئے ۔ اس موقعہ پر خطاب کرتے ہوئے ممبر سیکرٹری جے اینڈ کے سٹیٹ لیگل سروسز اتھارٹی یشپال بھورنی نے کہا کہ اس لوک عدالت کا اہتمام ملک بھر کے ساتھ ساتھ وادی میں بھی کیا گیا جس کا بنیادی مقصد یہ ہے کہ معاملات کو موقع پر ہی افہام و تفہیم کے ذریعے حل کیا جا سکے ۔ انہوں نے کہا کہ اس حوالے سے کوئی بھی کورٹ فیس ادا نہیں کرنا پڑتی ہے اور اگر کورٹ فیس ادا کی گئی ہے تو اس سے لوک عدالت میں معاملہ حل ہونے کے بعد قوانین کے مطابق ریفنڈ کیا جائے گا ۔ انہوں نے کہا کہ لوک عدالت کا خاصہ یہ ہے کہ معاملات کو تیز تر بنیادوں پر حل کیا جاتا ہے اور اس میں قانونی داؤپیچ سے نہیں گزرنا پڑتا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ معاملات کے فریقین براہ راست اپنے وکیل کے ذریعے سے جج صاحب کے ساتھ استفسار کر سکتے ہیں جو معمول کی عدالتوں کے ذریعے ممکن نہیں ہوتا ۔ انہوں نے کہا کہ لوک عدالتوں کا ایوارڈ فریقین پر لازمی ہوتا ہے ۔ انہوں نے مزید کہا کہ لوک عدالتوں کی بدولت لوگوں تک انصاف کی تیز تر فراہمی بھی ممکن ہو جاتی ہے ۔ ادھر لوگوں کو سستا اور جلد انصاف فراہم کرنے کی عرض سے چئرمین تعصیل لیگل سروس اتھارٹی و منصف جج کرناہ ایثار النبی کی صدارت میں منصف کورٹ کرناہ میں ایک لوک عدالت کا اہتمام کیا گیا اس دوران محتلف نوعیت کے 213 معاملات جن  میں ازدواحی زندگی، ٹریفک چیلان, ا?راضی و دیگر تنازعات کے علاوہ صارفین کے بجلی ، محکمہ صحت عامہ بنک و مختلف مالی اداروں اور دیگر کئی طرح کے معاملات شامل ہیں کو زیر بحث لایا گیا جن میں سے 83 معاملات کو باہمی افہام و تفہیم کے ذریعے موقع پر ہی نپٹایا گیا۔ لوک عدالت میں تعصیلدار کرناہ نصار  احمد اعوان کے علاوہ تعصیل انتظامیہ کے دیگر آفسران, بار ایسوسیشن کرناہ کے ممران اور عام لوگوں کی بڑی تعداد نے شرکت کی۔ اس دوران تصفیعہ کے تحت 63000 روپئے بھی وصول کئے گئے۔دریں اثناء نماندے ظفر اقبال کے مطابقتحصیل لیگل سروسس کمیٹی کی جانب سے اوڑی میں قومی لوک عدالت اور بلڈ ڈونیشن کیمپ کا انعقادکیا گیا، اطلات کے مطابق سنیچر کو سرحدی قصبہ اوڑی  کے آفیسر کلب میں تحصیل لیگل سروسس کمیٹی کے چیرمیں اور سب جج اوڑی امتیاز احمد لون کی صادرت میں قومی  لوک عدالت کا انعقاد کیا جس دوران پانچ سو کے قریب معاملات حیسے بجلی بلس، پانی بیلس، بینک کے مقایاجات وغیرہ کے معامات کو موقعہ پر ہی حل کیا گیاے اسی دوران محکمہ صحت کے اشتراق سے لیگل سروس کمیٹی اوڑی نے بلڈ ڈونیشن کیمپ کا بھی انعقاد کیا جس میں 54 افراد نے خون کا عطیہ دیا جن میں سیول سوسائیٹی اور زہی شہری  لوگ بھی موجود تھے۔اس دوران مختلف دہیات سے قریب 670 مریضوں کو کیمپ پر دستیاب ادویات بھی فرہم کی گی۔ ادھر نمانئندے ارشاد احمد کے مطابق گاندربل میں لیگل سروس اتھارٹی  کے زیر اہتمام لوک عدالت زیر صدارت راجہ شجات علی خان پرنسپل ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن جج گاندربل جو کہ چیرمین لیگل سروس اتھارٹی بھی ہیں منعقد کی گئی.لوک عدالت میں تین بنچ قائم کئے گے تھے.پہلے بنچ کی قیادت راجہ شجات علی خان جن کے ہمراہ ایڈیشنل ڈپٹی کمشنر گاندربل نصیر احمد وانی بھی تھے  دوسرا بنچ چیف جوڈیشل مجسٹریٹ گاندربل محراج الدین صوفی جبکہ تیسرا بنچ جوڈیشنل منصف مجسٹریٹ کنگن اقبال رفیق کی قیادت میں منعقد کیا گیا تھا.اس موقع پر مختلف نوعیت کے627مقدمات جن میں کریئمنل،بنک،بجلی،ٹریفک چالان  سمیت دیگر لوک عدالت میں پیش کئے گئے جن میں سے 506 مقدمات دونوں فریقین کے درمیان افہام و تفہیم سے حل کئے گئے.جبکہ تصفیہ کے تحت 12لاکھ 26 ہزار روپے 992روپے وصول کئے گئے