تازہ ترین

’اردن۔ فلسطین کنفیڈریشن‘ کے حوالے سے فلسطین کا سرکاری موقف کیا ہے؟

4 ستمبر 2018 (00 : 01 AM)   
(      )

دبئی//فلسطینی اتھارٹی کے سربراہ محمود عباس کا ایک متنازع بیان ان دنوں ذرائع ابلاغ میں موضوع بحث ہے۔ اس بیان میں وہ ایک اسرائیلی صحافیہ کو کہہ رہے ہیں کہ اْنہیں اردن کے ساتھ ’کنفیڈریشن‘ کے قیام کی تجویز پیش کی گئی ہے۔صدر عباس کے اس بیان کیبعد فلسطینی اتھارٹی کا سرکاری رد عمل معلوم کرنے کے لیے’العربیہ ڈاٹ نیٹ‘ نے فلسطینی ایوان صدر سیرابطہ کیا۔ ایوان صدر کیترجمان نبیل ابو ردینہ نے کہا کہ ’کنفیڈریشن‘ میکینزم سنہ 1984ء￿  سے فلسطینی قیادت کے ایجنڈے پر ہے۔ اس وقت سے آج تک ہمارا یہ اصولی موقف رہا ہے کہ ’دو ریاستی‘ حل اردن سے خصوصی تعلقات کا دروازہ بن سکتا ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ کنفیڈریشن کیقیام کا فیصلہ فرد واحد یا کوئی ایک گروپ نہیں کرے گا بلکہ یہ دونوں قوموں کا مشترکہ فیصلہ ہوگا۔خیال رہے کہ حال ہی میں اسرائیل کے ایک وفد نے رام اللہ میں صدر محمود عباس سے ملاقات کی تھی۔ اس ملاقات کے بعد صدر عباس کا ایک بیان سامنے آیا تھا جس میں انہوں نے کہا تھا کہ امریکی صدر نے ان کے سامنے اردن کے ساتھ الحاق کی تجویز پیش کی تھی۔ ان کا کہنا تھا کہ میں نے امریکی صدر کو کہا تھا کہ اگر اسرائیل بھی اس کنفیڈریشن کا حصہ بنتا ہے تو وہ اس تجویز کو قبول کرنے کو تیار ہیں۔
دوسری جانب اردن نے فلسطین۔ اردن کنفیڈریشن کی تجویز کو مسترد کردیا ہے۔ اردنی حکومت کی خاتون ترجمان جمانہ غنیمات نے اتوارکے روز اپنے ایک بیان میں کہا کہ ’کنفیڈریشن‘ کی تجویز ناقابل بحث موضوع ہے۔ فلسطین کے حوالے سے اردن کا موقف واضح ہے۔ ہمارا مطالبہ ہے کہ اسرائیل کے ساتھ فلسطین کو بھی ایک آزاد ریاست تسلیم کیا جائے۔ اسرائیل سنہ 1967ء￿  کی جنگ سے قبل والی پوزیشن پر واپس جائے اور مشرقی بیت المقدس کو فلسطینی دارا?لحکومت تسلیم کرتے ہوئے آزاد فلسطینی ریاست کے قیام کی حمایت کرے۔