تازہ ترین

غزلیات

19 اگست 2018 (00 : 01 AM)   
(      )

 جب مقدر میں ہے تنہائی سے یاری پاگل
 پھر وہی شخص ہے کیوں ذہن پہ طاری،پاگل؟
 
رات بھر تیری تمنّا کے سفر میں گزری 
دور تک تیرگئ راہ پکاری, پاگل 
 
مجھ کو رکنے نہ دیا میری جنوں خیزی نے 
عقل کہتی ہی رہی, فکر سے عاری, پاگل 
 
تجھ کو ہر صبح کے آغاز پہ سوچا میں نے 
مجھ کو کرتی ہی رہی میری خماری پاگل 
 
تو نے کاغذ پہ کبھی نقش بنایا تھا مرِا
کر گئی مجھکو وہی نقش نگاری پاگل
 
جھوم کر جب مرے چہرے پہ وہ لہرائی تھی 
تم نے کس ناز سے وہ زلف سنواری, پاگل 
 
میرا سایہ ہی فقط ساتھ مرے چلتا ہے 
اپنےسائے سے ہی رکھتی ہوں میں یاری پاگل 
 
  اس نے دل ہار کے زریاؔب مُجھے جیت لیا
  عشق کی ریت ہے دنیا سے نیاری ، پاگل
 
ہاجرہ نور زریاب ؔ
آکولہ مہاراشٹر انڈیا 
رابطہ؛9922318742 
 
 
رگوں میں دوڑتا پھرتا ہے بے مہار لہو 
کفن کو پھاڑ کے بہتا ہے بار بار لہو
 
زماں کے آئینے میں صاف صاف دکھتا ہے
زمیں کے نام پہ ہوتا ہے یوں نثار لہو
 
زمین رورہی ہے آسماں ہے روہانسا 
ستم ظریف ہیں آنسو ستم شعار لہو
 
کٹے بٹے سے یمین ویسار لگتے ہیں
ہے انتشار، کبھی آفتوں کی مار لہو
 
سبق پڑھا رہا ہے کیوں خودی کا واعظ تو 
اچھل رہا ہے عبث ہی یہ بے شعا لہو
 
نگاہ روبرو ابرارؔ تو نہیں لیکن           
مچا رہا اسمیں خلفشار لہو
 
خالد ابرارؔ
چرار شریف، بڈگام
موبائل نمبر؛9622442104, 
9055391711
 
 
غمِ دل سے بغاوت کیوں کریں ہم
امانت ہے خیانت کیوں کریں ہم
 
محبت نام ہے جب حُسن ظن کا 
وفاؤں کی تجارت کیوں کریں ہم
 
جو مل سکتا نہیں ہم کو جہاں میں
اسے پانے کی چاہت کیوں کریں ہم
 
ہوئے ہیں قید سب عشقِ جہاں میں
بھلا خود کی ضمانت کیوں کریں ہم
 
سخاوت نام ہے زندہ دلی کا
بخیلوں سے عداوت کیوں کریں ہم
 
نہیں سمجھے ہے جب کوئی بھی ہم کو
تو لفظوں سے وضاحت کیوں کریں ہم
 
ہے مصباحؔ نام اک بجھتے دیئے کا
سو خود بھی اس پہ حیرت کیوں کریں ہم
 
مصباح فاروق
طلبہ:شعبہ اُردو کشمیریونیورسٹی سرینگر
Misbahfarooq223@gmail.com
 
 
چاند پلکوںسے لے گیا ہے کہکشاں دیکھو
کیسے ٹوٹا میرے دِل پہ آسماں دیکھو
 
روز دیتا ہے زخم دل کو، دیکھ کے مجھ کو
خاک ہونے کا میرے اُنکا گماںدیکھو
 
آج کرتا ہے وہ سودا میری چاہت کا
مجھ پہ وہ ظالم کبھی تھا مہرباں دیکھو
 
لوگ بکھرے ہیں بکھرنے دو، تمہارا کیا
تیرا بھی بکھرے نہ کہیں آشیاں دیکھو
 
اسکی معنی خیز چپ پہ لوگ یہ سمجھے
کس قدر معصوم ہے یہ بے زباں دیکھو 
 
کون کہتا ہے میرے در پہ نہ آیا تو
اب بھی قدموں کے تیرے واں ہیں نشاںدیکھو
 
دیدہ ہائے تر کی باتیں ناکرو سیرابؔ
روح ہی نکلنے نہ، یہ طرزِ بیاں دیکھو
 
سیرابؔکشمیری
دیور لولاب(کپوارہ)
موبائل نمبر9622911687