تازہ ترین

’’اَفکارِ عُشّاق ؔ‘‘

9 اپریل 2017 (00 : 02 AM)   
(      )

 اِک نِگاہِ اِلتفات ہم پہ بھی ہو
بالمشافہ بات کُچھ ہم سے بھی ہو
ہم کو بھاتی ہَے نہیں یہ بے رُخی
دو قدم کا ساتھ کُچھ ہم سے بھی ہو
٭٭٭
 
ہم غریقِ حسرت و حرماں رہے
قلبِ مُضطر میں فقط اَرماں رہے
صبح دم تاشامِ غم غم دیدہ ہیں
نالہ وشیون کہ حرزِ جاں رہے
 
٭٭٭
گُلشنِ ہستی کی یہ رعنائیاں
پُر شباب و شوخ ہیں پرچھائیاں
کیوُں نہ پھِر عُشّاقؔ ہو تشکیلِ شعر
اور اِس میں کیوُں نہ ہوں گہرائیاں
 
٭٭٭
چشمِ بینا ہو گئی بادہ فروش
دے رہی ہے سب کو یہ جامِ شراب
کیوں کریں عُشّاقؔ پھِر دامن تہی
پی لو پی لو جامِ وحدت بے حساب
 
عُشّاق ؔکِشتواڑی
صدر انجُمن ترقٔی اُردو (ہند) شاخ کِشتواڑ
رابطہ  ـ:  9697524469