تازہ ترین

فوج کسی بھی جواب دہی سے مبرا:مشترکہ قیادت

8 جولائی 2018 (00 : 01 AM)   
(      )

 سرینگر//مشترکہ مزاحمتی قیادتبشمول سید علی شاہ گیلانی،  میرواعظ عمر فاروق اور محمد یاسین ملک نے کشمیریوں کی نسل کشی کی مہم کیخلاف شدید ردعمل کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ معصوم کشمیریوں کے مقدس خون سے سرزمین کشمیر کو لالہ زار بنانے کا عمل جاری ہے ، نہتے شہریوں کابے دردی سے خون بہایا جارہا ہے اور اب فورسز چھوٹے چھوٹے اورکمسنوںکو بھی نشانہ بنا کر اپنی بہادری کا ثبوت فراہم کررہی ہے ۔ انہوں نے کہا کہ ایسا محسوس کیا جارہا ہے کہ قابض فورسز کوحکومت ہند کی جانب سے گرین سگنل ملا ہوا ہے کہ وہ بلا خوف و خطر اور کسی بھی قسم کی جواب دہی (Accountability) کے تصور سے بالا تر ہوکرعسکریت پسندوں کو نشانہ بنانے کے ساتھ ساتھ سرکاری جارحیت اور ظلم و جبر کیخلاف آواز بلند کرنے والے معصوم کشمیریوںکو بھی سبق سکھانے کیلئے چن چن کر انہیں صفحہ ہستی سے مٹا دیں ۔انہوں نے اس امر پر افسوس کا اظہار کیا کہ حکومت ہند مشترکہ مزاحمتی قیادت اور یہاںکی حریت پسند عوام کا سیاسی سطح پر مقابلہ کرنے کے بجائے ریاستی عوام کو فوج کے رحم و کرم پر چھوڑ کر قتل و غارت گری کے بازار کو گرم رکھنے کی سامراجی پالیسی پر گامزن ہے جو انصاف پسند اقوام و ممالک کیلئے ایک لمحہ فکریہ ہے۔قائدین نے CASO کے بہانے ہاوورہ کولگام میں قیامت صغریٰ برپا کرنے کے نتیجے میں ایک کمسن بچی سمیت  تین نہتے شہریوں جن میں 16 سالہ کمسن طالبہ عندلیب ،20 سالہ ارشاد احمد لون اور 22 سالہ شاکر احمد کھانڈے شامل ہیں کو راست فائرنگ سے بے دردی کے ساتھ شہید کرنے اور درجنوں پر امن مظاہرین کو شدید زخمی کر دینے کیخلاف سخت ردعمل کا اظہار کرتے ہوئے فورسز کارروائیوں کی پر زور مذمت کی ہے ۔امزاحمتی قیادت نے کولگام قتل عام کیخلاف کل 8 جولائی 2018ء کو پہلے سے دی گئی ہمہ گیر احتجاج اور ہڑتال کے پس منظر میں جہاں اس دن کو یوم سیاہ اور سول کرفیو کے طور پر مناکر بھر پور صدا احتجاج بلند کریں وہاں نماز ظہر کے موقعہ پر ان شہیدوںکے حق میں غائبانہ نماز جنازہ کا بھی اہتمام کریں اور شام کو شہداء کی یاد میں Black out  کریں۔