تازہ ترین

مودی کی ریلی میں کسانوں کو جانے کی اجازت نہیں تھی: کانگریس

8 جولائی 2018 (00 : 01 AM)   
(      )

 نئی دہلی//کانگریس نے الزام لگایا ہے کہ زیر اعظم نریندر مودی کی سینچر کو جے پور میں منعقدہ ریلی میں کسانوں کو جانے سے روکا گیا تاکہ وہ اپنے غضب کا اظہار نہ کرسکیں۔ کانگریس کے ترجمان آر پی این سنگھ نے یہاں پریس کانفرنس میں یہ الزام بھی لگایا ہے کہ مسٹر مودی کی ریلی پر کروڑوں روپے خرچ کیے گئے ۔اس کے لئے راجستھان ہی نہیں دہلی کے اخبارات میں اشتہارات بھی دیئے گئے لیکن ریلی میں کسانوں کو جانے نہیں دیا گیا ۔ بی جے پی حکومت کو خوف تھا کہ پریشان کسان اپنے وزیر اعظم سامنے ریلی میں غصہ کا اظہار کر سکتے ہیں کیونکہ بی جے پی حکومت نے کسانوں کے فائدے کے لئے کوئی کام نہیں کیا ہے ۔ حال ہی میں خریف فصلوں کی کم از کم سہارا قیمت کا اعلان کیا گیا ہے اس سے کسان مطمئن نہیں ہیں۔انہوں نے الزام لگایا کہ ریلی میں بھیڑ اکٹھا کرنے کے لئے مختلف تنظیموں پر دباؤ ڈالا گیا تھا۔ اس سلسلے میں، انہوں نے جے پور کے ایل پی جی ڈسٹریبیوٹر تنظیم کی طرف سے ریاست کے چیف سکریٹری کو کی گئی شکایت کا خط صحافیوں کو دکھایا۔ خط میں الزام لگایا گیا ہے کہ انہیں ایک ریلی میں بھیڑ جمع کرنے کو کہا گیا ہے اور دھمکی دی گئی ہے کہ ایسا نہ کرنے پر اس کا رجسٹریشن کو منسوخ کردیا جاسکتا ہے ۔ بدعنوانی کے معاملے میں کچھ کانگریسی لیڈروں کے ضمانت پر ہونے کی وجہ سے وزیر اعظم نریندر مودی کے کانگریس کے 'بیل گاڑی ' بتانے پر سخت ردعمل کا اظہار کرتے ہوئے ترجمان نے کہا کہ بی جے پی مکمل طور پر بدعنوانی میں ڈوب ہوئی ہے ۔ انہوں نے کہا کہ کانگریس کی حکومت کے قیام کے بعد، بی جے پی حکومت میں ہونے والی بدعنوان کی تحقیقات کرائی جائے گی اور تب اس کے رہنما 'بیل' پر نہیں بلکہ جیل میں رہیں گے ۔یو این آئی