تازہ ترین

مفلس کی عید

16 جون 2018 (00 : 01 AM)   
(      )

صادق اندوروی
 
احساسِ آرزو ۓ بہاراں نہ پوچھئے
دل میں نہاں ہے آتش سوزاں نہ پوچھئے
عید آئی اور عید کا سامان نہ پوچھئے
مفلس کی داستاں کسی عنواں نہ پوچھئے
ہے آج وہ بہ حالِ پریشاں نہ پوچھئے
روزے تو ختم ہو گئے باصد غم و ملال
اب عید آئی اور وہ ہونےلگا نڈھال
بچوں کا بھی خیال ہے اپنا بھی ہے خیال
دامن ہے چاک بال پریشان غیر حال
کچھ داستانِ چاک گریباں نہ پوچھئے
منہ میں نہیں زباں جو کچھ حالِ دل کہے
غیرت کا اقتضا ہے کہ خاموش ہی رہے
آنکھوں سے موج اشک جو بہتی ہے تو بہے
ہے سر پہ ایک ہاتھ تو اک ہاتھ دل پہ ہے
افلاس کا یہ منظر عریاں نہ پوچھئے
دل میں لیے ہوئے ہوسِ عیش بے شمار
اور زیب تن کیے ہوئے ملبوس زر نگار
منعم ادھر رواں ہے بصد شان و افتخار
ہیں اس طرف نشاط کے اسباب آشکار
اور یہ ادھر ہے گر یہ بہ داماں نہ پوچھئے
منعم کو دیکھ کر دمِ بازو نکل گیا
اس کے ملال کا کوئی پہلو نکل گیا
مفلس کے دل سے نعرۂ یاہو نکل گیا
عید آئی اور آنکھ سے آنسو نکل گیا
کس درجہ ہے وہ بے سر و ساماں نہ پوچھئے
ہر چند دل میں حسرت وارماں ہیں بے قرار
لیکن وہ اپنا حال کرے کس پہ آشکار
دشمن وجود اس کا عدو اس کی جان زار
جائے کہاں نہیں ہے کوئی اس کا غم گسار
لائے کہاں سے عیش کے ساماں نہ پوچھئے
اک جانِ زار اس پہ ہزاروں جفا و جور
کس کا خیال رکھے وہ کس پر کرے وہ غور
کمزور سی اک آہ میں اس کی ہے اتنا زور
صادق بپا ہے محفِل مکاں میں ایک شور
برہم ہےنظم ِعالم ِامکاں نہ پوچھئے