تازہ ترین

کسانوں اور محکمہ زراعت کے مابین فاصلے ختم ہوں:گنائی

10 جولائی 2018 (00 : 01 AM)   
(      )

نیوز ڈیسک
سری نگر//مثبت تبدیلی کیلئے بہتر انتظامیہ پرزو ردیتے ہوئے گورنر کے مشیر خورشید احمد گنائی نے جدید ٹیکنالوجی کو کھیتوں تک لے جانے کی تلقین کی ہے تاکہ کسان بہتر فوائد حاصل کرسکیں۔ان باتوں کا اظہار مشیر موصوف نے محکمہ زراعت کے افسروں کی ایک میٹنگ میں کیا جو محکمہ کی مجموعی کارکردگی کا جائزہ لینے کے لئے طلب کی گئی تھی۔میٹنگ میں کمشنر سیکرٹری زرعی پیداوار ایم ڈی خان، ناظم زراعت کشمیر الطاف اعجاز اندرابی ، ناظم زراعت جموں ایچ کے راز دان ، سپیشل سیکرٹری زرعی پیداوار لینا پادھا ، ڈائریکٹر کمانڈ ائیر یا کشمیر ہارون ملک ،ڈائریکٹر کمانڈ ائیر یا جموں جتندر سنگھ اور زرعی یونیورسٹی کشمیر / جموں کے اعلیٰ عہدہ داروں کے علاوہ محکمہ زراعت کے دیگر افسران بھی موجود تھے۔خورشید احمد گنائی نے کسانوں اور محکمہ زراعت کے افسروں کے مابین فاصلوں کو دور کرنے ضرورت پر زور دیتے ہوئے کسانوں کو تکنیکی تربیت فراہم کرنے کی تلقین کی تاکہ وہ زرعی پیداوار میں اضافہ کرسکیں۔انہوں نے مزید کہا کہ ٹیکنالوجی کو کھیتوں تک لے جانے اور اس کی موثر عمل آوری میں زرعی یونیورسٹیوں کا بنیادی رول بنتا ہے۔ خورشید احمد گنائی نے کہا کہ اس کے لئے کسانوں کو اعتماد میں لینا لازمی ہے۔کسانوں کیلئے عملائی جارہی مختلف سکیموں خصوصاً مرکزی معاونت والی فلیگ شپ سکیموں پر نگاہ رکھنے کی تلقین کرتے ہوئے خورشید گنائی نے کہا کہ کسانوں کے ساتھ وقتاً فوقتاً تبادلہ خیال کے نتیجے میں زرعی سیکٹر میں بہتری آنے کی امید ہے۔زرعی سیکٹر میں انٹرپرینورشپ کی اہمیت کا اجاگر کرتے ہوئے مشیر موصوف نے افسروں سے کہا کہ وہ کسانوں کے بینک کھاتے کھولنے کی پہل کریں تاکہ مختلف سکیموں سے فائدے لینا کسانوں کے لئے آسان بن سکے۔مشیر نے ریاست میں سبزیوں کی پیداوار میں اضافہ کرنے کے اقدامات کرنے کے لئے بھی کہا۔خورشید احمد گنائی نے انتظامی سیکرٹری کو ہدایت دی کہ وہ مرکزی معاونت والی سکیموں سے جڑی التوا ٔمیں پڑی فائلوں کا بروقت نپٹارا یقینی بنائیں تاکہ ان سکیموں کی مالی معاونت کی اگلی قسط بروقت حاصل کی جاسکے۔ انہوں نے محکمہ زراعت کے سیکرٹری کو ہدایت دی کہ وہ اپنے منصوبے جنرل ایڈمنسٹریشن ڈیپارٹمنٹ اور منصوبہ بندی و خزانہ محکمہ کو بھیجیں تاکہ محکمہ میں خالی پڑی اسامیوں کو پُر کیا جاسکے۔ملازمین کی حاضری کو یقینی بنانے کے لئے بائیو میٹرک حاضری نظام متعارف کرنے کی تلقین کرتے ہوئے خورشید احمد گنائی نے متعلقہ سربراہوں سے کہا کہ وہ اپنے اپنے شعبوں میں اس عمل کو جلد از جلد شروع کریں۔مشیر موصوف نے ایڈمنسٹریٹیو سیکرٹری کو محکمہ کے پلاننگ اور فائنانس کے شعبوں کے افسروں کی علاحدہ میٹنگ کا انعقاد کرنے کی ہدایت دی تاکہ اس سلسلے میں مختلف معاملات کو حل کیا جاسکے۔
 
 
 

کئی وفود ملاقی

سری نگر//کئی وفود نے یہاں گورنر کے صلاح کار خورشید احمد گنائی کے ساتھ ملاقات کر کے اپنے مسائل اور مطالبات ان کی نوٹس میں لائے۔سریکلچر محکمہ کے ملازمین نے کئی ماہ سے اپنے رُکے پڑے مشاہرے کی واگزاری کی مانگ کی۔ جے اینڈ کے سول انجینئرنگ گریجویٹس ایسو سی ایشن کے ایک وفد نے اپنی باقاعدگی سے متعلق اپنے مطالبات مشیر موصوف کے نوٹس میں لائے۔گورنر کے مشیر نے ان وفود کو یقین دلایا کہ ان کے مطالبات پر ہمدردانہ غور کیا جائے گا۔کولگام ، زینہ گیر ، ریشی پورہ ، سوپور ، پلوامہ ، اننت ناگ اور دیگر علاقوں سے آئے عوامی وفود کے علاوہ دیگر کئی افراد سول سوسائٹی کے نمائندوں ، عوامی بہبود کمیٹیوں ، ٹورسٹ ٹیکسی ٹرانسپورٹرس فیڈریشن ، سومو اونرس یونین پانتھہ چوک نے بھی خورشید احمد گنائی کے ساتھ ملاقات کر کے اپنے مسائل اُن کی نوٹس میں لائے ۔وفود کے مطالبات اور مسائل غور سے سننے کے بعد مشیر موصوف نے ان کے مطالبات پر مناسب کارروائی کرنے کا یقین دلایا ۔انہوں نے کہا کہ حکومت ریاست کے ترقیاتی منظرنامے کو فروغ دینے کی وعدہ بند ہے۔